مضامین  

اعلیٰ حضرت علیہ رحمہ کے اخلاقِ کریمانہ

مولانا مولوی سید شاہ ابو سلیمان محمد عبدالمنان قادری چشتی فردوسی علیہ الرحمہ ایک خط بنام ملک العلماء محمد ظفر الدین بہاری علیہ الرحمہ میں لکھتے ہیں:۔‘‘مجھ فقیر کو بھی ۱۳۳۹ھ کے موسم بہار میں بریلی شریف جانے کا اتفاق ہوا، جناب مولانا مولوی قاضی رحم الٰہی صاحب علیہ الرحمہ مدرس مدرسہ نے مجھے اعلیٰ حضرت رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ کی خدمت فیض درجت میں پہنچایا، آپ کی زیارت نے بتمام وکمال فقیر پر یہ ثابت کر دیا کہ جو کچھ بھی آپ کی تعریفیں ہوتی ہیں...

ترجمہ قرآن کی شرائط

ترجمہ قرآن کی شرائط اشرف جہانگیر اعلیٰ حضرت امام اہل سنت عاشق ماہِ رسالت الشاہ امام احمدرضاخان بریلوی رحمتہ اللہ تعالیٰ علیہ علوم و فنون کے بحرذخارتھے۔آپ نے ہرعلم و فن پر کتب و رسائل تحریر فرمائےجن کو پڑھ کرعقل چکرانے لگتی ہے کہ اس خشک اور تنگ موضوع پرآپ علیہ الرحمتہ نے اتنا کیسے لکھ لیا۔اورپھراس کے ساتھ ہی ذہن میں دوسراسوال یہ اُٹھتاہے کہ اگرہم بھی ایسا لکھناچاہیں توکیسے لکھیں۔تویہ بھی حیرت فزابات ہے کہ اس دوسرے سوال کاجواب بھی ہمیں اعلیٰ حضرت...

ترجمہ قرآن ‘‘کنزالایمان’’کی اشاعت

ترجمہ قرآن ‘‘کنزالایمان’’کی اشاعت مولانامحمدعبدالمبین نعمانی قادری ادہرچندسالوں سے تصنیفات اعلیٰ حضرت کی اشاعت کا جوکام وسیع پیمانے پر ہوا ہے وہ بڑا ہی خوش آئنداور مسرت بخش ہے۔میراخیال ہے کہ اب اعلی حضرت کی اکثر تصانیف زیور طبع سے آراستہ ہوچکی ہیں۔البتہ حواشی وتعلیقات میں اکثرابھی منتظرطبع ہیں۔بہت سی تصانیف سےمتعدد ایڈیشن اور بعض کے تراجم بھی دوسری زبانوں میں طبع ہوچکے ہیں جس کا جائزہ لیاجاناچاہیے۔البتہ سب سے زیادہ جس کی...

اعلیٰ حضرت علیہ رحمہ کا انوکھا اندازِ تبلیغ

مولانا مولوی مفتی محمد ابراہیم صاحب فریدی نے صدر مدرس مدرسہ شمس العلوم بدایوں، حضرت سیدنا سید شاہ مہدی حسن میاں صاحب سجادہ نشین سرکار کلاں مارہرہ تشریف کی روایت سے تحریر فرمایا کہ:۔جب میں بریلی آتا تو اعلیٰ حضرت خود کھانا لاتے اور ہاتھ دھلاتے، حسب دستور ہاتھ دھلاتے وقت فرمایا، حضرت شاہزادہ! انگوٹھی اور چھلے مجھے دیجیے" میں نے فوراً اتار کردے دیے اور وہاں سے بمبئی چلا گیا، بمبئی سے واپس مارہرہ آیا تو میری بیٹی فاطمہ نے کہا کہ ابا، بریلی مولانا ص...

بیسویں صدی پر کنزالایمان کے فکری اثرات

بیسویں صدی پر کنزالایمان کے فکری اثرات الیاس اعظمی انیسویں صدی کے دوسرے عشرے سے شروع ہونے والا دور برصغیر کے اندر مسلم معاشرے میں مذہبی و اعتقادی تفرق کی شروعات کازمانہ ہے، آگے جاکر جس کی کوکھ سے بڑے بڑے فتنوں نے جنم لیا ہے۔ یہی وہ دورہے جس میں بدعقیدگی اور غلط فکری کی کالی گھٹائیں نجد کی طرف سے برصغیر کا رخ کرتی ہیں اور آہستہ آہستہ پورے ہندوستان کو اپنی لپیٹ میں لے لیتی ہیں یوں مسلم معاشرہ اس کی تاریکیوں میں ڈوب جاتا ہے۔ دوسری طرف برطانوی ایس...

اعلیٰ حضرت علیہ رحمہ اور احترامِ سادات

امام احمد رضا محدث بریلوی علیہ الرحمہ کو سادات کرام کی ادنیٰ سی پیشمانی بھی بے چین کردیتی تھی اس وقت تک آرام نہ کرتے جب تک سید زادے کو مطمئن نہ کردیتے تھے۔ملک العلماء علامہ محمد ظفر الدین بہاری علیہ الرحمہ لکھتے ہیں:۔"جس زمانہ میں اعلیٰ حضرت کے دولت کدہ کی مغبری سمت جس میں کتب خانہ نیا تعمیر ہورہا تھا، عورتیں اعلیٰ حضرت کے قدیمی آبائی مکان میں جس میں حضرت مولانا حسن رضا خان صاحب برادر اوسط اعلیٰ حضرت مع متعلقین تشریف رکھتے تھے، قیام فرما تھیں ا...

آیت مغفرتِ ذنب کاعلمی جائزہ

آیت مغفرتِ ذنب کاعلمی جائزہ علامہ مفتی سیدشاہ حُسین گردیزی مدظلہ العالی مولاناغلام رسول سعیدی نے مسئلہ ‘‘ذنب’’پراپنی چندسالہ تحقیق کا خلاصہ پیش کرتے ہوئے لکھاہے کہ: سورہ فتح کی اس آیت میں اللہ تعالیٰ نے نبیﷺ کی اگلی اور پچھلی کلی مغفرت کاقطعی اعلان کردیاہے۔قرآن مجیدمیں حضرت محمدرسول اللہ ﷺ کے علاوہ کسی اور نبی، رسول یا کسی بھی شخص کی کلی مغفرت کااعلان نہیں کیاگیااورآپ کے سوا کسی کی بھی کلی مغفرت قطعیت کے ساتھ ثابت نہیں ...

اعلیٰ حضرت علیہ رحمہ کی اپنے پیرومرشد سے محبت

اعلیٰ  حضرت محدث بریلوی علیہ الرحمہ کو اپنے مشائخ سادات  مارہرہ سے بھی انتہائی عقیدت و محبت تھی۔ صاحبزادہ سید محمد امین برکاتی نبیرہ خاتم الاکابر حضرت سید شاہ آل رسول برکاتی قدس سرہ فرماتے ہیں:"اعلیٰ حضرت اپنے مرشدان عظام کا اس درجہ ادب ملحوظ  رکھتے تھے کہ مارہرہ کے اسٹیشن سے خانقاہ برکاتیہ تک برہنہ پاپیدل تشریف لاتے تھے اور مارہرہ سے جب حجام خط یا پیام لےکر بریلی جاتا تو "حجام شریف" فرماتے اور اس کے لیے کھانے کا خوان اپنے سر اقدس...

اعلیٰ حضرت کی غوثِ پاک سے محبت

اعلیٰ حضرت﷫کی غوثِ پاک﷜سے محبت امام احمد رضا محدث بریلوی﷫کو فخر السادات حضور غوث الاعظم سیدنا عبدالقادر جیلانی النورانی﷜سے حیرت انگیز حد تک محبت وعقیدت تھی، آپ تادم زیست بغداد شریف، مدینہ شریف اور کعبہ شریف کی جانب پاؤں پھیلاکر نہیں بیٹھے۔ محبت غوثیت سے لبریز ایک واقعہ محدث اعظم ہند سید محمد محدث کچھوچھوی﷫کی زبانی سنیے:۔"مجھے کار افتاء پر لگانے سے پہلے خود گیارہ روپے کی شیرینی منگائی اپنے پلنگ پر مجھ کو بٹھاکر اور شیرینی رکھ کر فاتحہ غوثی...

بشریت مصطفیٰ کے حوالے سے تفسیرات امام احمد رضا کا تقابلی مطالعہ

بشریت مصطفیٰ کے حوالے سے تفسیرات امام احمد رضا کا تقابلی مطالعہ مولانامحمدعبدالعلیم رضوی میرا موضوع بشریت مصطفیٰ کے حوالے سے امام احمد رضا اور دیگر مفسرین کی تفسیرات کا تقابلی مطالعہ ہے۔ اس سلسلہ میں پہلے آیت کریمہ پھر دیگر مترجمین ومفسرین کی تفسیرات اور آخر میں امام احمد رضا کی تفسیرات پیش کی جارہی ہیں قارئین اس سے بخوبی اندازہ لگا لیں گےان تمام مفسرین میں امام احمد رضا کا مقام و مرتبہ کتنا بلند و برتر اور ان کی تفسیر معتمد تفاسیر سے کتنا قر...