زہے شوکت و غرو جاہ مدینہ

زہے شوکت و غرو جاہ ِ مدینہ
زہے رتبہ تخت گاہِ مدینہ

اُس عالی مکان کا یہ ہے وصف ظاہر
کہ ہے حسن مسکن و شاہ ِ مدینہ

گل زیب فرق بہشتِ بریں ہے
خس و خارو کاہ گیاہِ مدینہ

اگر مجھے پوچھے کوئی رازِ جنت
تھا دو نگا میں شاہراہِ مدینہ

نہ دیکھی گا وہ حال کا فتنہ و شر
ہوئے جس کو حاصل ِ پناہ ِ مدینہ

ہوئے غیر میں بدر میں آ کے حاضر
ملائک شمول و سیاہ مدینہ

زیارت گہ زمرۂ قدسیاں سے
حریم دربار گاہِ مدینہ

جو سنتے نہیں حال مولود حضرت
وہ ہے منکر رسم و راہ مدینہ

برائے نبوت شفاعت ہے کاؔفی
احادیث حضرت گواہ ِ مدینہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(دیوانِ کافؔی)


متعلقہ

تجویزوآراء