سہرا بتقریب شادی خانہ آبادی

کیسا باغ و بہار ہے سہرا

کس قدر خوشگوار ہے سہرا

نورِ جانِ بہار ہے سہرا

غیرتِ لالہ زار ہے سہرا

کس کے رخ پر نثار ہے سہرا

کس کیلئے تار تار ہے سہرا

کیا گہر ہے بجائے گل اس میں

کس قدر آب دار ہے سہرا

رحمتِ دوجہاں کے جلوے ہیں

گلشنِ نو بہار ہے سہرا

رضویوں کی بہار ہے سہرا

سنیوں کا قرار ہے سہرا

نجدیوں کو کہاں ہے تابِ نظر

آتشِ شعلہ بار ہے سہرا

سینۂ یار کے لئے ٹھنڈک

دلِ اعدا میں خار ہے سہرا

چشمِ بد دور کیوں نہ ہو تجھ سے

تیرے رخ کا حصار ہے سہرا

گلشنِ فیضِ مفتیٔ اعظم

رشکِ صد لالہ زار ہے سہرا

از طفیلِ شفیع بہرِ سعید

زندگی کی بہار ہے سہرا

پھول سہرے کے کہہ رہے ہیں سنو!

ماں کے دل کی پکار ہے سہرا

ہیں رفیق و حسن بھی نعرہ زن

واہ کیا خوشگوار ہے سہرا

رخِ رضیہ پہ تازگی ہے نئی

تازگی کا نکھار ہے سہرا

فاطمہ صابرہ کے صدقے میں

باقی و پائیدار ہے سہرا

شاہدہ پر بھی کیف طاری ہے

کس خوشی کا خمار ہے سہرا

ہے زلیخا بھی پیکرِ حیرت

کیا انوکھا نکھار ہے سہرا

اور عطیہ بھی مسکراتی ہے

مسکراتی بہار ہے سہرا

سعدیہ اور زبیدہ گاتی ہیں

واہ کیا شاہکار ہے سہرا

ہو امان و حمیدہ کو مژدہ

رحمتِ کردگار ہے سہرا

کھینچ لائی شمیم ہر دل کو

کس قدر خوشگوار ہے سہرا

عقد فرمانِ سرورِ دیں ہے

اِذنِ پروردگار ہے سہرا

رنگِ طوبیٰ ہے پردۂ گل میں

کیا بہشتی بہار ہے سہرا

بندشِ خوشگوار بلبل و گل

دو دلوں کا قرار ہے سہرا

نور میں سب نہا گئی محفل

نور کا آبشار ہے سہرا

سب لگاتے ہیں نعرۂ تحسین

واہ کیا خوشگوار ہے سہرا

چاند ہے چہرۂ سعید ، اخترؔ

اور ستاروں کا ہار ہے سہرا

تجویزوآراء