قیامت تھا وہ صدّیقِ جگر اَفگار کا رونا

قیامت تھا وہ صدّیقِ جگر اَفگار کا رونا
تڑپنا شکلِ بسمل اور وہ ہر بار کا رونا

 

کہوں کیا گریۂ صدّیق محرابِ عبادت میں
کہ شر مندہ تھا جِس سے ابرِ دریا بار کا رونا

 

زبانِ حال سے گرمِ بُکا تھے مسجد و منبر
یہ پُر تاثیر تھا حضرت کے یارِ غار کا رونا

 

فلک کو بھی ہلاتا تھا، مَلک کو بھی رُلاتا تھا
وہ اُس دربارِ عالی جاہ کے حُضّار کا رونا

 

لکھوں کیا اس بیاں سے دل ہوا جاتا ہے دو ٹکڑے
اثر رکھتا ہے یارانِ شہِ ابرارﷺ کا رونا

 

فرشتے آسمانوں پر ہوئے گرمِ فغاں سُن کر
جناب مصطفیٰ کے عترتِ اَطہار کا رونا

 

تمامی حاضرانِ وقت کو بے تاب کرتا تھا
ابو بکر و عمر، عثماں، علی ہر چار کا رونا

 

ہُوا وارد: نہ دیکھیں گی وہ آنکھیں آتشِ دوزخ
ملا ہے جن کو حُبِِّ اَحمدِ مختارﷺ کا رونا

 

بس، اے کافؔی! قلم کو تھام لے آگے کو لکھنا ہے
ہلالِ کُشتۂ غم ہجر کے بیمار کا رونا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(دیوانِ کافؔی)


متعلقہ

تجویزوآراء