قصیدہ  

وظیفۂ قادریہ

وظیفۂ قادریہ
۱۳۲۱ ھجری
فارسی ترجمہ : اعلیٰ حضرت مولانا شاہ امام احمد رضا خان رحمۃ اللہ علیہ

سَقَانِی الْحُبُّ کَاْسَاتِ الْوِصَالٖٖ
فَقُلْتُ لِخُمْرَتِیْ نَحْوِیْ تَعَالٖ

داد عِشقم جامِ وصلِ کبریا
پس بِگُفتَم بادہ ام را سویم آ

اَلصَّلَا اے فضلہ خورانِ حضور
شاہ بر جودست و صہبا در وُفور

بخش کردن گر نِہ عزمِ خسروِی ست
آخر ایں نوشیدہ خواندن بہرِ چیست

سَعَتْ وَمَشَتْ لِنَحْوِیْ فِیْ کَئُوْسٖٖ
فَھِمْتُ لِسُکْرَتِیْ بَیْنَ الْمَوَالِیْ
ٖ
شُد دواں در جامہا سویم رواں
والہِ سکرم شدم در سروراں

شکرِ تو از ذکر و فکر اکبر بَوَد
سکر کو چوں حکمِ خود بر می رَوَد

سوئے مَے بر بوئے مے مرداں رواں
بادہ خود سُویت بپائے سر دواں

فَقُلْتُ لِسَآئِرِ الْاَقْطَابِ لُمُّوْا
بِحَالِیْ وَادْخُلُوْٓا اَنْتُمْ رِجَالِیْ

گفتم اے قطباں بعونِ شانِ من
جملہ درآئید تاں مردانِ من

جمع خواندی تا قَوِی دلہا شوند
ہم زِ عونِ حالِ خود دادی کَمند

ورنہ تا بامِ حضورِ تو صُعود!
حَاشَ لِلہ تاب و یارائے کہ بود

وَھُمُّوْا وَاشْرَبُوْٓا اَنْتُمْ جُنُوْدِیْ
فَسَاقِی الْقَوْمِ بِالْوَافِیْ مَلَالِیْ
ٖ
ہمّت آرید و خورید اے لشکرم
ساقیم دادہ لبالب از کرم

شکرِ حق جامِ تو لبریزِ مَئے ست
ہر لبالب را چکیدن در پَئے ست

تا بما ہم آید اِنْ شَآءَ الْعَظِیْم
آں نَصِیْبُ الْاَرْضِ مِنْ کَاسِ الْکَرِیْم

شَرِبْتُمْ فُضْلَتِیْ مِنۡۢ بَعْدِ سُکْرِیْ
وَلَا نِلْتُمْ عُلُوِّیْ وَاتِّصَالٖ
ٖ
من شدم سرشار و سورم می چشید
رَخت تا قرب و عُلُوَّم کے کشید

فضلہ خورانش شہان و من گدائے
روئے آنم کُو کہ خواہم قطرہ لائے

یلّلے جودِ شہم گفتہ ملائے
مے طلب لا نشنوی ایں جا نہ لائے

مَقَامُکُمُ الْعُلٰی جَمْعًا وَّلٰکِنْ
مَقَامِیْ فَوْقَکُمْ مَا زَالَ عَالِیْ

جاے تاں بالا ولے جایم بوَد
فوق تاں از روزِ اوّل تا ابد

جات بالا تر زِ وہمِ جائہا
جائہا خود ہست بہرِ پائہا

پائہا چہ بوَد کہ سرہا زیرِ پات
پات ہم کے چوں فُرُود آئی زِ جات

...

اے باغ بہار ایماں مرحبا صد مرحبا

معروضہ ببارگاہِ مرشد حضرت مولانا محمد نعیم الدین صاحب مرا د آبادی

اے باغِ بہارِ ایماں مرحبا صد مرحبا
اےچراغِ بزمِ عرفاں مرحبا صد مرحبا

...

جس نے دکھایا طیبہ وہ قبلہ تمہی تو ہو

معروضہ ببارگاہِ مرشدبرحق ناصرِ ملّت مولانا محمد نعیم الدین صاحب قبلہ مرا د آبادی

جس نے دکھایا طیبہ وہ قبلہ تمہی تو ہو
جس میں نبی کو دیکھا وہ شیشہ  تمہی تو ہو

...