پارۂ دل  

قیس و فرہاد نے کھول کر رکھ دیا عشق آساں نہیں ہر کسی کیلئے

غزل

قیس و فرہاد نے کھول کر رکھ دیا عشق آساں نہیں ہر کسی کیلئے
دل لگی کو نہ سمجھے کوئی دل لگی دل بڑا چاہئے دل لگی کیلئے
کوئی ہے عقل والا  جو سمجھا سکے اس میں کیا درس ہے آدمی کیلئے
شمع اپنا کلیجہ جلاتی رہی کیوں کسی اور کی روشنی کیلئے
اللہ اللہ رے ابرغم کی گھٹا اللہ اللہ رے فکر کی تیرگی
دوپہر کی گھڑی وھوپ پھیلی رہی ہم ترستے رہے روشنی کیلئے
مضطرب ہے وفا مضمل ہے صفا اور شرم و حیا ہوگئی لاپتہ
آدمی بن کے رہنا بھی اس دور میں کس قدر سخت ہے آدمی کیلئے
کون کہتا ہے ناداں ہیں اہل وفا سیکھ لو ان سے راز فنا و بقا
ہوگئے با خوشی نذرِ تیغ جفا کس لئے دائمی زندگی کے لئے
جو ہو آفاق میں وجہ نور سحر اسکی آمد کو سمجھو نہ آسان تر
سارے تاروں نے خود کو فنا کر دیا ایک خورشید کی زندگی کیلئے
اے مری جان کہتے ہیں اہل کرم دل کا رکھ لینا ہے گویا حجّٔ حرم
خواب ہی میں بس اک بار آجائیے اپنے اخؔتر کی خوش اختری کیلئے

...

کیا ہے یہ بھی اک احسان تجھ پر باغباں میں نے

کیا ہے یہ بھی اک احسان تجھ پر باغباں میں نے
چنا ہے تیرے گلشن کو برائے آشیاں میں نے
دل عشق آفریں سے ہے مقامِ حسن کی رفعت
کیا نظروں میں تجھ کو آسماں اے جانِ جاں میں نے
نگاہوں نے کیا ہے غالباً غمازی خاطر
دیارِ مہرباں میں بند کرلی تھی زباں میں نے
وفورِ رنج و غم میں مسکرانا ہے میرا شیوہ
جفائے یار سے پیدا کیا ربطِ نہاں میں نے
عجب طرفہ تماشہ ہے مزاج عاشقانہ بھی
کیا انگیز ہنستا کھیلتا جور بتاں میں نے
مجھے ڈر ہے کہ چشم پیر گردوں خوں نہ برسائے
کہیں اے ہم نفس چھیڑی جو اپنی داستاں میں نے
نہیں پازیچۂ طفلاں ہپ کارِ عشق بھی اخؔتر
یہاں دیکھے ہیں لٹتے حسرتوں کے کارواں میں نے

...

خزاں کروٹ بدلتی ہے چمن برباد ہوتا ہے

خزاں کروٹ بدلتی ہے چمن برباد ہوتا ہے
یہ عبرتناک انجام ستم ایجاد ہوتا ہے
غباروں کی طرح اٹھتا ہے پھر برباد ہوتا ہے
گلہ کوئی بھی چیرہ دستیٔ صیاّد سے کیا ہو
جہاں پر خودگل تر تیشہ فرہاد ہوتا ہے
ہمارے دل سے کیا تقصیر سرزد ہوگئی کوئی
ستمگر آج رک رک کے یہ کیوں بیدار ہوتا ہے
ارے اے جان من روح بہاراں تیرے جاتے ہی
خزاں کروٹ بدلتی ہے چمن برباد ہوتا ہے
ہے میری زندگی ویرانیوں کا مظہر خستہ
مرے دم سے قفس صیّاد کا آباد ہوتا ہے
سکوت و خامشی میں ہے کمال عاشقی مضمر
وہی غم غم ہے جو بے نالہ و فرہاد ہوتا ہے
گلوئے عشق پر خنجر چلائے جا چلائے جا
تجھے کیا فکر کوئی شاد یا نا شاد ہوتا ہے
قفس ہو حجرۂ زنداں ہو یا صحن گلستاں ہو
اسیر زلف شب گوں ہر جگہ آزاد ہوتا ہے
کیا تھا عہد تیری بزم میں ہرگز نہ آئینگے
وفور شوق میں لیکن کسے یہ یاد ہوتا ہے
نگاہ شوخ کی غارت گری کا یہ کرشمہ ہے
اجڑتا ہے دل صد چاک جب آباد ہوتا ہے
تمیز مہرباں نامہرباں دشوار ہے اخؔتر
سمجھتے ہیں جسے ہم باغباں صیاد ہوتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

...

روتا ہے نہ ہنستا ہے سنتا نہ بہلتا ہے

روتا ہے نہ ہنستا ہے سنتا نہ بہلتا ہے
طفل دل ناداں بھی کیا خوب مچلتا ہے
وہ پیش نظر ہے جب کیوں اشک ہے آنکھوں میں
کھلتے ہیں کہاں تارے جب مہر نکلتا ہے
وہ دیکھ نہیں سکتے آنسو مری آنکھوں میں
شعلے کا جگر گویا شبنم سے دہلتا ہے
یہ کبر نہیں اچھا نخوت کے پرستارو
مہتاب بھی بجھتا ہے خورشید بھی ڈھلتا ہے
اس سمت کھنکتے ہیں ساغر ید ساقی میں
اس سمت دل میکش رہ رہ کے اچھلتا ہے
اک میرا نشیمن ہی تاراج زمانہ تھا
سنتے میرا گلشن اب پھولتا پھلتا ہے
پنہاں ہے سکوں اخؔتر تاریک نظاروں میں
ہر چشمۂ حیوانی ظلمت سے ابلتا ہے

...

وہ مرکز تلاش یہ کہتا ہے برہمن

کیا وہ مل گیا

 

وہ مرکز تلاش یہ کہتا ہے برہمن
مندر کو ہے بنائے ہوئے رشک صد چمن
دیکھا ہے میں نے شیخ جی بولے یہ شاد کام
کعبے میں ہے بنائے ہوئے اپنا وہ مقام
کوئی لگارہا ہے صدائے تمام اوست
اور کوئی کہہ رہا ہے ہمہ چیز را دروست
قمری کہے کہ ہے وہ قدسر و میں نہاں
مرغ سحر کہے کہ مرے سامنے عیاں
بلبل ہے نغمہ ریز گلوں میں نہاں ہے وہ
بھونرایہ کہہ رہا ہے کنول آشیاں ہے وہ
بولا چکور چاند میں ہے اس کا آشیاں
کہتے شجر پرست ہیں پیپل میں ضوفشاں
آتش میں وہ ملے گا ہے کچھ لوگوں کا خیال
کچھ کہتے ہیں ہے زیب دۂ مہر خوش جمال
وہ مل گیا کہ آئی ہر اک سمت سے صدا
سنکے اسے تڑپ اٹھا اک پیکر صفا
لبہائے پاک مائل گفتار ہوگئے
ایوان عقل و ہوش شرربار ہوگئے
ایں مدعیان درطلبش بے خبرانند
کاں راکہ خبر شد خبرش بازنیامد

...

کہاں تلاش مسرت کہاں تلاش سکوں؟

کہاں تلاش مسرت کہاں تلاش سکوں؟
خلش وہ دے مجھے یارب رہے جو روز افزوں
یہ مانتا ہوں محبت ہے اک فریب حِسیں
دل حزیں کو مگر اپنے کیسے سمجھاؤں
انہوں نے مجھ پر نظر ہنس کے ڈال دی آخر
سلام درد جگر زندہ باد جوش جنوں
یہی خیال مری زندگی کا باعث ہے
تڑپنا میرا کسی کے لئے ہے وجہ سکوں
نظر تو لذت دیدار پاگئی لیکن
غریب دل کو ملے زخم ہائے گوناگوں
بجا ہے حسن سے آغز عشق ہے لیکن
ہے عشق ہی کے مقدر میں شیوۂ مجنوں
غرور سحر طرازی کو ٹھیس لگ جائے
جو دیکھ لیں وہ کہیں خون آرزو کافسوں
وجود کون و مکاں ہستِ کائنات سے پوچھ
مری سرشت میں مضمر ہے راز کن فیکوں
جفا نواز مجھی کو بتا رہے ہیں حضور
یہ ماننے کی بھلا بات بھی ہے کیوں مانوں؟
سواد گیسوئے پرخم بھی لاجواب نہیں
خوشا نصیب کی میں بھی سیاہ قسمت ہوں
وہ ہنس رہے ہیں تو ہنسنے دو اخؔتر خستہ
میں ان کے ظلم و ستم پہ ہوں جان سے مفتوں

...

دیکھ نہ یہ شگفتگی خندگی خندگی نہیں

دیکھ نہ یہ شگفتگی خندگی خندگی نہیں
ان کے بغیر ہم نشیں زندگی زندگی نہیں
ایسا جھکے جبیں تری اپنی بھی کچھ خبر نہ ہو
جس میں ہو اپنا ہوش وہ بندگی بندگی نہیں
کتنے ستارے بجھ گئے کتنے چراغ گل ہوئے
خاور ضوفشاں تری زندگی زندگی نہیں
توڑسکی کہاں تھکن، عزم صمیم کوہکن
سچ ہے رہ امید کی ماندگی ماندگی نہیں
کر کے عنادلوں کا خوں تو جو ہنسا تو کیا ہنسا
اے گل تازہ یہ کوئی خندگی خندگی نہیں
سہل نہیں یہ عشق بھی خنجر آبدار ہے
اخؔتر بے خبر کوئی دل لگی دل لگی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

...