تازہ ترین ضیائے بخشش  

زندگی یہ نہیں ہے کسی کے لیے

زندگی یہ نہیں ہے کسی کے لیے

زندگی یہ نہیں ہے کسی کے لیے
زندگی ہے نبی کی نبی کے لئے

نہ سمجھ مرتے ہیں زندگی کے لئے
جینا مرنا ہے سب کچھ نبی کے لئے

چاندنی چار دن ہے سبھی  کے لئے
ہے صدا چاند عبدالنبی کے لئے

اَنْتَ فَیْھِمْ کے دامن میں منکر بھی ہیں
ہم رہے عشرتِ دائمی کے لئے

عشق کر لو یہاں منکر و چار در
مر کے ترسو گے اس زندگ کے لئے

داغِ عشقِ نبی لے چلو قبر میں
ہے چراغِ لحد روشنی کے لئے

نقشِ پائے سگانِ نبی دیکھیے
یہ پتہ ہے بہت رہبری کے لئے

وہ بلاتے ہیں کوئی یہ آواز دے
دم میں جا پہنچوں میں حاضری کے لئے

اے نسیمِ صبا ان سے کہہ دے ذرا
مضطرب ہے گدا حاضری کے لئے

جن کے دل میں ہے عشقِ نبی کی چمک
وہ ہیں نجم زماں روشنی کے لئے

اختؔرِ قادری خلد میں چل دیا
خلدوا ہے ہر اک قادری کے لئے

شاعر مفتی اختر رضا خاں قادری ﷫

...

منور میری آنکھوں کو میرے شمس الضحیٰ کردے

منور میری آنکھوں کو میرے شمس الضحیٰ کردے

منور میری آنکھوں کو میرے شمس الضحیٰ کردے
غموں کی دھوپ میں وہ سایۂ زلفِ دُتا کردے

جہاں بانی عطا کر دے بھری جنت ہبہ کر دے
نبی مختارِ کل  ہیں جس کو جو چاہیں عطا کر دے

جہاں میں ان کی چلتی ہے وہ دم میں کیا سے کیا کر دیں
زمیں کو آسماں کردے سریا کو سرا کر دیں

فضا میں اڑھنے والے یوں نہ اترائیں ندا کر دے
وہ جب چاہیں جسے چاہیں اسے فرما رواکردیں

عطا ہو بے خدی مجھ کو خدی میری ہوا کر دے
مجھے یوں اپنی الفت میں میرے مولافنا کردے

مجھے کیا فکر ہو اخؔتر میرے یاور ہیں وہ یاور
بلاؤں کو جو میری خود گرفتارے بالا کردے

شاعر:حضور تاج الشریعہ مفتی اخؔتر رضا خاں قادری﷫

...