چمکا جہاں میں جب مہِ اقبالِ مصطفی ٰﷺ

چمکا جہاں میں جب مہِ اقبالِ مصطفی ٰﷺ
ماہِ سپہر ہو گیا پامالِ مصطفی ٰﷺ

 

اک زلزلہ سا کوشک کسریٰ میں پڑ گیا
چمکی جو برقِ شوکتِ اجلالِ مصطفی ٰﷺ

 

دعویٰ ہوا ہے کانِ جواہر کا گوش کو
سُن کر حدیثِ لعل پُر افضالِ مصطفی ٰﷺ

 

بس آرزو یہی دلِ حسرت زدہ کی ہے
سنتا رہے شمائلِ اَحوالِ مصطفی ٰﷺ

 

کافؔی ہے اپنے واسطے گر منکر و نکیر
دکھلائیں لا کے قبر میں تمثالِ مصطفی ٰﷺ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(دیوانِ کافؔی)


متعلقہ

تجویزوآراء