غوث کسے کہتے ہیں اور ان کی تعداد کتنی ہے؟

01/16/2019 AZT-26819

غوث کسے کہتے ہیں اور ان کی تعداد کتنی ہے؟


السلام علیکم

سوال میرا آپ سے ہےکہ غوث کسے کہتے ہیں اور ان کی تعداد کتنی ہے؟

(سائل: ایاز حسین، حیدرآباد)

الجواب بعون الوھّاب اللھمّ ھدایۃ الحق والصواب

صوفیاء کی اصطلاح میں غوث ولایت کا ایک مقام ہے اورغوث اس مستجاب الدعوات ہستی کو کہتے ہیں جو اللہ تعالیٰ سے دعا اور فریاد کرتا ہے، شیخ عبدالقادر جیلانی بھی اسی منصب پر فائز تھے، علامہ خطیب نے کتاب التاریخ البغداد سے نقل کی ہے کہ نقباء 100 ہوتے ہی اور نجباء 70، ابدال 40 اور 7 اوتاد ہوتے ہیں، قطب زمین میں تین اور قطب الاقطاب یا غوث ایک ہوتا ہے۔ غوث ان سب کا سردار ہوتا ہے اور حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا باطنی جانشین یا خلیفہ ہوتا ہے۔

حضرت ابو نعیم نے حضرت ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت کی ہے : حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ روئے زمین پر اللہ کے ایسے خاص بندے ہوتے ہیں جن کی دعا و برکت سے اللہ تعالیٰ لوگوں پر رحم فرماتا ہے، آسمان سے بارش اور زمین سے فصل وغیرہ انکی دعا سے اگتی ہے۔ یہ لوگ دنیا کے لیے باعث امن ہیں۔

امام احمد ابن عباد صامت سے روایت کرتے ہیں کہ سرور کائنات صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ میری امت میں قیامت تک چالیس آدمی ایسے رہیں گے جن کی وجہ سے زمین و آسمان کا نظام قائم رہے گا۔

حضرت علامہ جلال الدین سیوطی رحمہ اللہ نے لکھا ہے کہ ابدال کی خبر احادیث میں ہے اور ان کا وجود درجہ یقین تک پہنچا ہے۔

اسی طرح علامہ سخاوی رحمہ اللہ نےلکھا ہے کہ سب سے واضح روایت ابدال کے بارے میں ہے جو کہ امام احمد ابن عباد نے شریخ ابن عبید سے  روایت کی ہے :

حضرت علی کرم وجہہ اللہ سے مروی ہے کہ اہل شام پر لعنت نہ کرو کیونکہ ان میں چالیس ابدال رہتے ہیں۔ ان کی برکت سے بارش ہوتی ہے اور ان سے دین کو مدد ملتی ہے۔

امام سیوطی نے لکھا ہے کہ حضرت علی کرم وجہہ اللہ کی روایت جو امام احمد نے نقل کی ہے اس کی سند دس طرقوں سے زیادہ ملتی ہے۔

واللہ تعالیٰ اعلم ورسولہ اعلم ۔

  • رئیس دارالافتاء مفتی محمد اکرام المحسن فیضی

تجویزوآراء