Poetry  

Sahar Chamki Jamal e Fasl e Gul

سحر چمکی جمالِ فصلِ گل آرائشوں پر ہےنسیمِ روح پرور سے مشامِ جاں معطر ہے قریب طیبہ بخشے ہیں تصور نے مزے کیا کیامرا دل ہے مدینہ میں مدینہ دل کے اندر ہے ملائک سر جہاں اپنا جھجکتے ڈرتے رکھتے ہیںقدم اُن کے گنہگاروں کا ایسی سر زمیں پر ہے ارے او سونے والے دِل ارے اوسونے والے دِلسحر ہے جاگ غافل دیکھ تو عالم منور ہے سہانی طرز کی طلعت نرالی رنگ کی نکہتنسیمِ صبح سے مہکا ہوا پُر نور منظر ہے تعالیٰ اﷲ یہ شادابی یہ رنگینی تعالیٰ اﷲبہارِ ہشت جنت دشتِ طیبہ پر ن...

Huzoor e Kaaba Hazir Hain

حضورِ کعبہ حاضر ہیں حرم کی خاک پر سر ہےبڑی سرکار میں پہنچے مقدر یاوری پر ہے نہ ہم آنے کے لائق تھے نہ قابل منہ دِکھانے کےمگر اُن کا کرم ذرّہ نواز و بندہ پرور ہے خبر کیا ہے بھکاری کیسی کیسی نعمتیں پائیںیہ اُونچا گھر ہے اِس کی بھیک اندازہ سے باہر ہے تصدق ہو رہے ہیں لاکھوں بندے گرد پھر پھر کرطوافِ خانۂ کعبہ عجب دلچسپ منظر ہے خدا کی شان یہ لب اور بوسہ سنگِ اسود کاہمارا منہ اور اِس قابل عطاے ربِ اکبر ہے جو ہیبت سے رُکے مجرم تو رحمت نے کہا بڑھ کرچلے آ...

Bagh e Jannat Mein Nirali

اغِ جنت میں نرالی چمن آرائی ہےکیا مدینہ پہ فدا ہو کے بہار آئی ہے اُن کے گیسو نہیں رحمت کی گھٹا چھائی ہےاُن کے اَبرو نہیں دو قبلوں کی یکجائی ہے سنگریزوں نے حیاتِ ابدی پائی ہےناخنوں میں ترے اِعجازِ مسیحائی ہے سر بالیں اُنھیں رحمت کی اَدا لائی ہےحال بگڑا ہے تو بیمار کی بن آئی ہے جانِ گفتار تو رفتار ہوئی رُوحِ رواںدم قدم سے ترے اِعجازِ مسیحائی ہے جس کے ہاتھوں کے بنائے ہوئے ہیں حسن و جمالاے حسیں تیری اَدا اُس کو پسند آئی ہے تیرے جلوؤں میں یہ عالم ...

Imam ul AuliaHazrat Ahmad Kabir Rifaee

تم ہو حسرت نکالنے والےنامرادوں کے پالنے والے میرے دشمن کو غم ہو بگڑی کاآپ ہیں جب سنبھالنے والے تم سے منہ مانگی آس ملتی ہےاور ہوتے ہیں ٹالنے والے لبِ جاں بخش سے جِلا دل کوجان مردے میں ڈالنے والے دستِ اقدس بجھا دے پیاس مریمیرے چشمے اُبالنے والے ہیں ترے آستاں کے خاک نشیںتخت پر خاک ڈالنے والے روزِ محشر بنا دے بات مریڈھلی بگڑی سنبھالنے والے بھیک دے بھیک اپنے منگتا کواے غریبوں کے پالنے والے ختم کر دی ہے اُن پہ موزونیواہ سانچے میں ڈھالنے والے اُن کا ...

Ya Khuda Har Dam Nigah Main Un Ka Kashaana Rahe

یا خدا ہر دم نگہ میں ان کا شانہ رہےدونوں عالم میں میں خیال روئے جانا نہ رہے اے عرب کے چاند تیرے ذرے کا ذرہ ہوں میںتا ابد پر نور میرے دل کا کاشانہ رہے کیوں معطر ہو نہ خوشبو سے دعا لم کا دماغپنجۂ قدرت ترے گیسو کا جب شانہ رہے جس مکاں کی اپنی پائے پاک سے عزت بڑھائیںکیوں نہ سب امراض کا وہ گھر شفا خانہ رہے زندگی میں بعد مردن انکے نام پاک سےیا خدا آباد میرے دل کا ویرانہ ہے عین ایماں ہے یہی اور ہے ہر اک مومن پہ فرضان کے نام پاک کا دنیا میں مستانہ ...

Teri Wehshaton Se Aaye Dil

دمِ اضطراب مجھ کو جو خیالِ یار آئےمرے دل میں چین آئے تو اسے قرار آئے تری وحشتوں سے اے دل مجھے کیوں نہ عار آئےتو اُنھیں سے دُور بھاگے جنھیں تجھ پہ پیار آئے مرے دل کو دردِ اُلفت وہ سکون دے الٰہیمری بے قراریوں کو نہ کبھی قرار آئے مجھے نزع چین بخشے مجھے موت زندگی دےوہ اگر مرے سرھانے دمِ احتضار آئے سببِ وفورِ رحمت میری بے زبانیاں ہیںنہ فغاں کے ڈھنگ جانوں نہ مجھے پکار آئے کھلیں پھول اِس پھبن کے کھلیں بخت اِس چمن کےمرے گل پہ صدقے ہو کے جو کبھی ب...

Parde Jis Waqt Uthain Jalwa e Zaibai K

پردے جس وقت اُٹھیں جلوۂ زیبائی کےوہ نگہبان رہیں چشمِ تمنائی کے دُھوم ہے فرش سے تا عرش تری شوکت کیخطبے ہوتے ہیں جہانبانی و دارائی کے حُسن رنگینی و طلعت سے تمہارے جلوےگل و آئینہ بنے محفل و زیبائی کے ذرّۂ دشتِ مدینہ کی ضیا مہر کرےاچھی ساعت سے پھریں دن شبِ تنہائی کے پیار سے لے لیے آغوش میں سر رحمت نےپائے انعام ترے دَر کی جبیں سائی کے لاشِ احباب اِسی دَر پر پڑی رہنے دیںکچھ تو ارمان نکل جائیں جبیں سائی کے جلو گر ہو جو کبھی چشمِ تمنائی میںپردے آنکھوں...

Do Alam Goonjtey Hain Naara e Allah hoo Akbar Se

دو عالم گونجتے ہیں نعرۂ اللہ اکبر سےاذانوں کی صدائیں آرہی ہیں مفت کشور سے کروں یادِ نبی میں ایسے نالے دیدۂ ترسےکہ دھل جائیں گناہ لا تعداد میرے رجسٹر سے خدا نے نور مولیٰ سے کیا مخلوق کو پیدا سبھی کون و مکاں مشتق ہوئے اس ایک مصدر سے وہ صورت جس سےحق کا خاص جلوہ آشکارہ ہےاسے تشبیہ دے سکتے ہیں کب ہم ماہ و اختر سے کچھ ایسا جوش پر ہے مَنْ رَّأنِیْ قَدْرَأَلْحَقَّخجل ہیں مہرومہ بھی آپ کے روئے منور سے نہیں ہے اور نہ ہوسکتا ہے بعد ان کے نبی کوئیہوا...

Jaan se Tang Hain Qaidi Gham e Tanhai Ki

جان سے تنگ ہیں قیدی غمِ تنہائی کےصدقے جاؤں میں تری انجمن آرائی کے بزم آرا ہوں اُجالے تری زیبائی کےکب سے مشتاق ہیں آئینے خود آرائی کے ہو غبارِ درِ محبوب کہ گردِ رہِ دوستجزو اعظم ہیں یہی سرمۂ بینائی کے خاک ہو جائے اگر تیری تمناؤں میںکیوں ملیں خاک میں اَرمان تمنائی کے وَرَفَعْنَالَکَ ذِکْرَکَ کے چمکتے خورشیدلامکاں تک ہیں اُجالے تری زیبائی کے دلِ مشتاق میں اَرمانِ لقا آنکھیں بندقابلِ دید ہیں انداز تمنائی کے لبِ جاں بخش کی کیا بات ہے سبحان اﷲتم ن...

Kare Chara Sazi Ziarat Kisi Ki

کرے چارہ سازی زیارت کسی کیبھرے زخم دل کے ملاحت کسی کی چمک کر یہ کہتی ہے طلعت کسی کیکہ دیدارِ حق ہے زیارت کسی کی نہ رہتی جو پردوں میں صورت کسی کینہ ہوتی کسی کو زیارت کسی کی عجب پیاری پیاری ہے صورت کسی کیہمیں کیا خدا کو ہے اُلفت کسی کی ابھی پار ہوں ڈوبنے والے بیڑےسہارا لگا دے جو رحمت کسی کی کسی کو کسی سے ہوئی ہے نہ ہو گیخدا کو ہے جتنی محبت کسی کی دمِ حشر عاصی مزے لے رہے ہیںشفاعت کسی کی ہے رحمت کسی کی رہے دل کسی کی محبت میں ہر دمرہے دل میں ہر دم محب...