Hazrat Sheikh Abu Saeed Fazlullah

حضرت شیخ ابو سعید بن ابوالخیر فضل اللہ رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ

 

آپ کا اسم گرامی فضل اللہ تھا اور خراسان کے رہنے والے تھے آپ مقتدائے اہل طریقت اور پیشوائے اہل حقیقت تھے صاحب علوم ظاہر و باطن اور مشرف القلوب تھے دنیا آپ کی گفتگو سے مسخر ہوجاتی تھی حضرت شیخ ابوالفضل بن حسن سرخسی﷫ تھے چند واسطوں سے سیّد الطائفہ جنید بغدادی کے مرید تھے آپ شیخ ابوالفضل حسن اور وہ ابوالنصر سراج اور وہ ابو محمد مرتعش اور وہ حضرت جنید بغدادی کے مرید تھے شیخ ابوالفضل کی وفات کے بعد آپ نے شیخ عبدالرحمٰن سلمی﷫ سے فرقہِ خلافت حاصل کیا اور بعض مشکلات کے حل کے لیے ایک سال تک شیخ ابوالعباس کی صحبت میں رہے۔

کہتے ہیں ایک رات شیخ ابوالعباس اپنے صومعہ سے باہر نکلے آپ نے کسی وقت فصد کرایا تھا اتفاقاً زخم کھل گیا اور خون جاری ہوگیا حضرت ابوسعید کو خبر ہوئی تو آپ کے پاس پہنچے اور زخم دھو کر دوبارہ باندھ دیا اور شیخ کے خون آلودہ کپڑے اتار دئیے اور انہیں دھو کر حضرت کی خدمت میں پیش کیے حضرت شیخ نے فرمایا کہ ان کپڑوں کو میرے سامنے خود پہن لو آپ نے حسب الحکم حضرت شیخ کا لباس پہن لیا یہ کپڑے پہنتے ہی آپ کی قلبی مشکلات دور ہوگئیں اور مراتب میں عروج حاصل ہوا علی الصباح احباب مجلس نے آپ کو لباس شیخ میں دیکھا تو بڑے متعجب ہوئے حضرت شیخ نے فرمایا رات ایک کیفیت طاری ہوئی تھی ابوسعید اپنا نصیب اور حصہ لے گئے۔

ایک دن آپ کے پاس دو شخص آئے آپ کے پاس بیٹھ گئے اور باتیں کرنے لگے اور کہنے لگے حضرت ہمیں ایک مسئلہ میں راہنمائی فرمائیں ایک نے کہا ازل وَابد کا اندوہ ہی تمام ہے دوسرے نے کہا ازل و ابد کی خوشی ہی سب کچھ ہے آپ کا کیا خیال ہے آپ نے فرمایا۔ قصاب کے بیٹے کا گھر اندوہ سے پُر ہے اور خوشی وہاں نہیں آتی۔ لَیسُ عِند رَبْکَمُ صَباحٌ ومسَاع تمہارے اللہ کے نزدیک نہ صبح ہے نہ شام جب یہ دونوں حضرات چلے گئے تو لوگوں نے آپ سے پوچھا حضرت یہ کون تھے آپ نے فرمایا ایک تو حضرت ابوالحسن خرقانی تھے اور دوسرے اَبُو عبداللہ داستانی تھے﷫۔

حضرت شیخ ابو سعید ابوالخیر نے علوم تصوّف میں بہت سے اشعار کہے ہیں۔ ایک رباعی میں فرماتے ہیں۔

چشم ہمہ اَشک شدہ چو از غم بگر یست
ازمن اثرے نماند این عشق ازچیست
 
در عشق تو بے چشم ہمی باید زیست
چوں من ہمہ معشوق شدم عاشق کیست

رغم دوست میں میری آنکھیں رُو رُو کر آنسو بن گئی ہیں تیرے عشق میں تو بے چشم ہی جیا جاسکتا ہے یہ عشق کیا ہے؟ مجھ سے تو کچھ اثر نہیں رہا چونکہ میں تمام تر معشوق ہوچکا ہوں آخر عاشق کون ہے؟

بزرگانِ دین نے ایک رباعی ایسی یاد کی ہے جو حضرت کے منہ سے نکلی اور پھر اسے لوگ بخار کی حالت میں مریض کے گلے میں باندھ دیتے ہیں۔ جس سے شفا ہوجاتی ہے وہ رباعی یوں ہے۔

اے درصفتِ ذات تو حیران کہہ دمہ
علّت توستانی وشفاء ہم تو دہی
    
و ز جملہ جہاں خدمت درگاہ توبہ
یارب توبہ فضل خویش بستاں دبدہ

اے ذات اقدس تیری صفتِ ذات میں چھوٹے بڑے سب حیران ہیں تمام جہاں سے تیرے ہی دروازے کی خدمت بہتر ہے تو ہی بیماری دیتا ہے اور توہی شفا بخشتا ہے، اے اللہ! تو اپنے فضل و کرم سے لے اور عطاکر۔

ایک شخص نے حضرت ابو سعید کو بتایا کہ فلاں ولی اللہ تو پانی پر چلنا جانتا ہے آپ نے فرمایا یہ بڑا آسان کام ہے ہمارے ہاں تو مینڈک بھی پانی میں تیرتے پھیرتے ہیں پھر اس نے کہا ’’فلاں ولی اللہ ہوا میں اڑتے ہیں‘‘ آپ نے فرمایا ’’یہ بھی آسان کام ہے زاغ و زغن ہوا میں اڑتے پھرتے ہیں‘‘ اس نے کہا کہ ’’فلاں ولی اللہ ایک قدم ایک شہر میں اور دوسرا قدم دوسرے شہر تک اٹھاتا ہے‘‘ آپ نے فرمایا ’’یہ کمال تو شیطان میں بھی پایا جاتا ہے‘‘ آپ نے فرمایا ’’ان چیزوں کی بارگاہ الٰہی میں کوئی عزت و منزلت نہیں ہے اصل مقام عظمت یہ ہے کہ وہ خلق خدا میں رہے امور دنیا میں حصہ لے زن و فرزند میں زندگی گزارے مخلوق خدا سے ملے جلے مگر ایک لحظہ کے لیے یاد خداوندی سے غافل نہ رہے اور ذکر خداوندی کو فراموش نہ کرے۔‘‘

شیخ ابو سعید﷫ کی تاریخ ولادت بروز اتوار یکم ماہ محرم ۳۵۷ھ ہے مگر تاریخ وفات بروز جمعہ چہارم ماہ شعبان ۴۰۴ھ ہے آپ نے وصیّت فرمائی تھی کہ یہ رباعی آپ کے جنازے کے ساتھ بآوازبلند پڑھی جائے۔

خوبتر حپسیت زین بعالَم کار
باشد اندوہ او سراپا فرح
    
دوست با دوست رفت یار بیار
گررَود نزد دوست عاشق زار

آپ کی تاریخ وفات ان اشعار سے بھی برآمد ہوتی ہے۔

بو سعید آں خیر دین فضل جہاں
سالک معصوم شد تولید او
۳۵۷ھ
    
بہر عالم در دوعالم مقتدا
رحلتش آمد سعید راہنما
۴۴۰ھ

سعید راہنما
سعید نامدار
محرم بوسعید
سلطان سعید
۴۴۰ھ

ولی زمان بوسعید
۴۴۰ھ

(خزینۃ الاصفیاء)

مزید

Comments