Hanafi Scholars  

Muhammmad Bin Samaa

            محمد بن سماعہ بن عبد اللہ بن ہلال بن وکیع تمیمی کوفی : ۱۳۰ھ؁ میں پیدا ہوئے ۔ فقیہ کامل محدث حافظ ظقہ صدوق تھے  یہاں تک کہ ابن معین کہتے ہیں کہ اگر اہل حدیث ایسی تصدیق کرنے والے حدیث میں ہوتے جیسے کہ محمد بن سماعہ راے میں ہیں تو البتہ نہایت عمدہ بات ہوتی کنیت ابو عبد اللہ رکھتے تھے، آپ نے فقہ کو امام ابو یوسف وامام محمد او ر حسن بن زیاد سے اخذ کیا اور حدیث کو لیث بن سعد اور نیز امام ابو...

Nasar Bin Ziyad

            نصر بن زیاد نیسا پوری : فقیہ محدث آمر با لمعروف ، ناہی عن المنکر اور قاضی تھے، ابو محمد کنیت تھی،فقہ امام محمد سے اخذ کی اور حدیث کو عبد اللہ مبارک سے سنا۔آپ کاقاعد ہ تھا کہ آپ ہمیشہ رات کو قائم رکھتے اور ہفتہ میں دوشنبہ و پنجشنبہ اور جمعہ کو روزہ رکھا کرتے تھے،چھیا سٹھ سال کے ہوکر ۲۳۳ھ؁ میں وفات پائی۔ ’’ نجم علم ‘‘ آپ کی تاریخ وفات ہے۔ (حدائق الحنفیہ)...

Ali Bin Jaad

            علی بن جعد بن عبید جوہر بغدادی : امام ابو یوسف کے اصحاب میں سے حافظ حدیث ثقہ معتمد متقن صدوق تھے۔ ابو الحسن کنیت تھی ۔بنی  ہاشم کے غلام آزاد کردہ تھے، امام ابو حنیفہ کو دیکھا اور ان کے جنازے پر حاضر ہوئے۔آپ نے حدیث کو جریری بن عثمان و شعبہ و ثوری وامام مالک وابن ابی ذئب ومعرف بن واصل شبا ن بن عبد الرحمٰن وصخر بن جویریہ وعبد الرحمٰن بن ثابت بن ثوہان وقیس بن الربیع ویز ید  بن عمرالت...

Ismail Jarhani

        اسمٰعیل بن [1] ابی سعید البطری الاصل الجرجانی: امام محمد کے اصحاب میں سے اپنے زمانے کے امام فاضل فقیہ محدث تھے۔ ابو اسحٰق کنیت اور شالخی کے نام ے معروف تھے، فقہ امام محمد سے اخذ کی اور حدیث کو ابی عینیہ ویحییٰ قطان اور امام محمد سے سُنا اور روایت کیا اور آپ سے ضحاک بن حسین استر ا آبادی اور ابو العباس احمد بن عباس مسعود ی نے روایت کی۔ حضرت ابو بکر صدیق و عمر خطاب و عثمان ذی النورین رضی اللہ تعالیٰ عنہم کے...

Farrukh Mola

            فرخ مولیٰ امام ابو یوسف [1] : ثقہ ، فقی فاضل تھے ، امام احمد بن حنبل ویحییٰ بن معین وامام بخاری و مسلم وابو داؤد ابو زرعہ وابراہیم حراثی اور بغوی نے آپ سے حدیث لی اور آپ کی توثیق کی ، آپ صغر سن ہی تھے ۔جب آپ نے امام ابو حنیفہ کو دیکھا تھا اور ان کے جنازے پر حاضر ہوئے تھے ، فقہ امام ابو یوسف سے اخذ کی اور آپ سے احمد بن ابی عمران نے تفقہ کیا،طحطاوی نے احمد بن ابی عمران سے روایت کی ہےکہ فرخ مو...

Naeem Hamad Bin Muavia

          نعیم حماد بن معاویہ حارث خزاعی مروزعی: محدث صد وق فقیہ فاضل اور عارط فرائض مخطی کثیر تھے،جن احادیث میں آپ نے خطا کی ہےان کو ابن عدی نے تلاش کر کےکہا ہے کہ باقی حدیث آپ کی مستقیم ہے۔کنیت ابو عبد اللہ تھی۔مرو سے آکر مصر میں اقامت اختیار کی تھی لیکن فتنہ قول بہ خلق قرآن میں مصر سے نکالے گئے ۔ آپ ہی نے پہلے پہل مسند جمع کی اور امام ابو حنیفہ سے فرضیت وتر کی روایت کی۔آپ وہی خزاعی ہیں جو امام بخاری اور ...

Esa Bin Aban

        عیسیٰ بن ابان بن صدقہ : حفاظ حدیث میں سے فقہ تھے ۔کنیت ابو موسیٰ تھی، فقہ امام محمد سے حاصل کی اور حدیث کو اسمٰعیل بن جعفر و ہاشم بن بشر و یحییٰ بن زکریا بن ابی زائدہ و امام محمد وغیرہ سے سُنا اور روایت کیا۔ طحطاوی نے بکار بن قتیبہ سے روایت کی ہے کہ میں نے ہلال بن یحییٰ  کو سُنا کہ وہ کہتے تھے کہ اہل اسلام میں عیسیٰ بن ایان اور بشر ب الولید کے کوئی مکثر حدیث نہیں دیکھا ۔ محمد بن سماعہ کہتے ہیں کہ عی...

Shaddad Bin Hakim

            شدا د بن حکیم بلخی : امام زفر کے اصحاب میں سے بڑے فقیہ محدث اور احمد بن عمران استاذ طحطاوی کے شیخ تھے، ابو عاصم ضحاک ملقب بہ نبیل نے امام ابو حنیفہ کی وفات کے بعد آپ کی صحبت کی اور فقہ کو اخذ کیا۔ پہلے آپ کو بلخ کی قضا کےلیے کہا گیا مگر آپنے انکار کیا پھر کسی قدر مدت کے بعد آپ نے خود قضا کو طلب کیا ، لوگوں نے آپ کو ملامت کی ، آپ نے فرمایا کہ اس وقت میرے سوا اور بہت سے حالم قضا کی صلاحیت رکھ...

Abu Hifs Kabir

            احمد بن حفص المعروف بہ ابو حفص کبیر بخاری : مجتہد عصر امام دہر فاضل بے عدیل فقیہ بے تمثیل تھے،فقہ وحدیث امام محمد سے حاصل کی ۔آپ کے اصحاب اس قدر تھے کہ شمار میں نہ آسکتے تھے چنانچہ سمعانی شافعی نے لکھا ہے کہ بخارا کے پاس ایک گاؤں آباد ہے جہاں فقہاء کی ایک جماعت آپ کے اصحاب میں سے رہتی تھی۔کہتے ہیں کہ آپ اور خلف بن ایوب اور ابو سلیمان تینوں امام محمد سے تحصیل علم کیا کرتے تھے۔ خلف بن ایوب سل...

Ibraheem bin Jarrah

            ابراہیم بن جراح کوفی نزیل مصر عالم فاضل فقیہ محدث تھے۔فقہ وحدیث کو امام ابو یوسف سے اخذ کیا اور سُنا ار ان سے اور ابی جعد وغیرہ سے امالی کو لکھا ۔امالی جمع املاءکی ہے اور املاء اس کو کہتے یں کہ ایک عالم کے ارد گرد اس کے شاگرد کا غذ قلم لے کر بیٹھ جائیں اور جو تقریر وہ کرے اس کو لکھتے ہیں یہاں تک کہ ایک کتاب بن جائے چنانچہ علمائے سلف اہل حدیث وفقہ و عربی کا افادۂ علوم میں ایسا ہی دستور تھا ۔...