Zameen o Zaman Tumhare Liye

زمین و زماں تمھارے لیے مکین و مکاں تمھارے لیے
چنیں و چناں تمھارے لیے بنے دو جہاں تمھارے لیے

دہن میں زباں تمھارے لیے بدن میں ہے جاں تمھارے لیے
ہم آئے یہاں تمھارے لیے اٹھیں بھی وہاں تمھارے لیے

فرشتے خِدَم رسولِ حِشم تمامِ اُمَم غُلامِ کرم
وُجود و عَدم حُدوث وقِدم جہاں میں عیاں تمھارے لیے

کلیم و نجی، مسیح و صفی، خلیل و رضی، رسول و نبی
عتیق و وصی، غنی و علی؛ ثنا کی زباں تمھارے لیے

اِصالتِ کُل، اِمامتِ کُل، سِیادتِ کُل، اِمارتِ کُل
حکومتِ کُل، وِلایتِ کُل؛ خدا کے یہاں تمھارے لیے

تمھاری چمک، تمھاری دمک، تمھاری مہک
زمین و فلک، سِماک و سمک میں سکّہ نشاں تمھارے لیے

وہ کنزِ نہاں، یہ نورِ فَشاں، وہ کُنْ سے عیاں یہ بزمِ فکاں
یہ ہر تن و جاں، یہ باغِ جناں، یہ سارا سماں تمھارے لیے

ظہورِ نہاں، قیامِ جہاں، رکوعِ مہاں، سجودِ شہاں
نیازیں یہاں، نمازیں وہاں، یہ کس لیے ہاں تمھارے لیے

یہ شمس و قمر، یہ شام وسحر، یہ برگ و شجر ، یہ باغ و ثمر
یہ تیغ و سپر، یہ تاج و کمر، یہ حکم رواں تمھارے لیے

یہ فیض دیے وہ جود کیے کہ نام لیے زمانہ جیے
جہاں نے لیے تمھارے دیے یہ اَکرمیاں تمھارے لیے

سَحابِ کرم روانہ کیے کہ آبِ نِعَم زمانہ پیے
جو رکھتے تھے ہم وہ چاک سیے یہ سترِ بداں تمھارے لیے

ثنا کا نشاں وہ نور فشاں کہ مہروَشاں بآں ہمہ شاں
بسایہ کَشاں مَواکِبِ شاں یہ نام و نشاں تمھارے لیے

عطائے اَرَب جلائے کَرب فُیوضِ عجب بغیرِ طلب
یہ رحمتِ رب ہے کس کے سبب بَربِّ جہاں تمھارے لیے

ذُنوب فنا عُیوب ہبا قلوب صفا خطوب روا
یہ خوب عطا کُروب زُوا پئے دل و جاں تمھارے لیے

نہ جنّ و بشر کہ آٹھوں پہر ملائکہ در پہ بستہ کمر
نہ جبہ و سر کہ قلب و جگر ہیں سجدہ کناں تمھارے لیے

نہ روحِ امیں نہ عرشِ بریں نہ لوحِ مبیں کوئی بھی کہیں
خبر ہی نہیں جو رمزیں کھلیں ازل کی نہاں تمھارے لیے

جناں میں چمن، چمن میں سمن، سمن میں پھبن، پھبن میں دُلھن
سزائے مِحَن پہ ایسے مِنَن یہ امن و اماں تمھارے لیے

کمالِ مہاں جلالِ شہاں جمالِ حساں میں تم ہو عیاں
کہ سارے جہاں میں روزِ فکاں ظل آئینہ ساں تمھارے لیے

یہ طور کجا سپہر تو کیا کہ عرشِ عُلا بھی دور رہا
جہت سے ورا وصال مِلا یہ رفعتِ شاں تمھارے لیے

خلیل و نجی، مسیح و صفی سبھی سے کہی کہیں بھی بنی
یہ بے خبری کہ خَلق پھری کہاں سے کہاں تمھارے لیے

بَفَورِ صدا سماں یہ بندھا یہ سدرہ اٹھا وہ عرش جھکا
صُفوفِ سما نے سجدہ کیا ہوئی جو اذاں تمھارے لیے

یہ مرحمتیں کہ کچی متیں نہ چھوڑیں لَتیں نہ اپنی گتیں
قصور کریں اور ان سے بھریں قصورِ جناں تمھارے لیے

فنا بدرت بقا ببرت زِ ہر دو جہت بگردِ سَرت
ہے مرکزیت تمھاری صفت کہ دونوں کماں تمھارے لیے

اشارے سے چاند چیر دیا چھپے ہوئے خور کو پھیر لیا
گئے ہوئے دن کو عصر کیا یہ تاب و تواں تمھارے لیے

صباہ وہ چلے کہ باغ پھلے وہ پھول کھلے کہ دن ہوں بھلے
لِوا کے تلے ثنا میں کھلے رضؔا کی زباں تمھارے لیے

حدائقِ بخشش


All Related

Comments