Tasawur Main Yeh Kaisa Manzar e Taiba Hai Lehraya

تصوّر میں یہ کیسا منظرِ طیبہ ہے لہرایا
زباں پر نام جب آیا ضیاءُ الدین احمد کا

مقدّر کیوں نہ ہو نازاں کہ اُن کو تا دمِ آخر
مکینِ گنبدِ خضرا کا قربِ خاص حاصل تھا

چراغِ عشقِ مصطفوی جلائے عمر بھر جس نے
کہ روز و شب رہا معمول ذکرِ مصطفیٰ جن کا

وہ جس کی ذات اِک سر چشمۂ رشد و ہدایت تھی
عرب میں اور عجم میں بھی ہے اُس فیّاض کا چرچا

مہکتا تھا جو حُبِّ احمدِ مُرسَل کی خوشبو سے
وہ پیکر نسبتِ احمد رضا خاں سے منوّر تھا

رہا کردار اُس کا شیوۂ اَسلاف کا مظہر
نہیں ملتا کہیں دنیا میں گوہر بے بہا ایسا

سبق دیتی ہے اُن کی زندگی ہر سانس ہو جائے
رسولِ ہاشمی کی ہر ادا پہ والہ و شیدا

ظہوؔری نے بھی اُن کے ہاں حضوری کےمزے لوٹے
’’خدا رحمت کند ایں عاشقانِ پاک طینت را‘‘

 


All Related

Comments