Shahid e Gul Hai Mast Naaz

شاہدِ گُل ہے مست ناز حجلۂ نو بہار میں
ناز و ادا کے پھول ہیں پھولے گلے کے ہار میں

آئیں گھٹائیں جھوم کر عشق کے کوہ سار میں
بارشِ غم ہے اشک بار گریۂ بے قرار میں

عشق نے چھوڑی پھلجھڑی دل کی لگی بھڑک اٹھی
آتشِ گُل کے پھول سے آگ لگی بہار میں

آنکھوں سے لگ گئی جھڑی بحر میں موج آ گئی
سَیلِ سِرِشک اُبل پڑا نالۂ قلبِ زار میں

شوق کی چیرہ دستیاں دل کی اُڑائیں دھجّیاں
وحشتِ عشق کا سماں دامنِ تار تار میں

بجلی سی اک تڑپ گئی خِرمَنِ ہوش اُڑ گیا
برق شرارَہ بار تھی جلوۂ نورِ یار میں

تابشِ رُخ سے چار چاند لگ گئے مہر و ماہ کو
حُسنِ ازل ہے جلوہ ریز آئینۂ عِذار میں

کعبۂ ابرو دیکھ کر سجدے جبیں میں مضطرب
دل کی تڑپ کو چین کیا تاب کہاں قرار میں

شاہدِ گُل ہے مصطفیٰ طیبہ چمن ہے جاں فزا
گُلشنِ قُدس ہے کِھلا صحنِ حریمِ یار میں

سُوسَن و یاسَمَن، سَمَن، سُنبل و لالہ نَستَرَن
سارا ہرا بھرا چمن پھولا اسی بہار میں

باغِ جناں لہک اٹھا، قصرِ جناں مہک اٹھا
سیکڑوں ہیں چمن کِھلے پھول کی اک بہار میں

سارے بہاروں کی دُلَھن ہے مِرے پھول کا چمن
گُلشنِ ناز کی پھبن طیبہ کے خار خار میں

تم ہو حبیبِ کبریا پیاری تمھاری ہر ادا
تم سا کوئی حَسیں بھی ہے گُلشنِ روز گار میں

نکلی نہ کوئی آرزو دل کی ہی دل میں رہ گئی
حسرتیں ہیں ہزار دفن قلب کے اک مزار میں

خارِ مدینہ دیکھ کر وحشتِ دل ہے زور پر
دستِ جنوں الجھ گیا دامنِ دل کے تار میں

ماہ تِری رکاب میں، نور ہے آفتاب میں
بو ہے تِری گلاب میں رنگ تِرا انار میں

غنچۂ دل مہک اٹھا موجِ نسیمِ طیبہ سے
روحِ شمیم تھی بسی گیسوئے مشک بار میں

شوق کی ناشکیبیاں سوز کی دل گدازیاں
وصل کی نامُرادیاں عاشقِ دل فگار میں

گردشِ چشمِ ناز سے حاؔمدِ مَے گُسار مست
رنگِ سرور و کیف ہے چشمِ خمار دار میں

بیاض پاک


All Related

Comments