Qafle Ne Soey Taiba Qamar Aarai Ki

قافلے نے سوئے طیبہ کمر آرائی کی
مشکل آسان الٰہی مِری تنہائی کی

لاج رکھ لی طَمَعِ عفو کے سودائی کی
اے میں قرباں مِرے آقا بڑی آقائی کی

فرش تا عرش سب آئینہ ضمائر حاضر
بس قسم کھائیے اُمّی تِری دانائی کی

شش جہت سمت مقابل شب و روز ایک ہی حال
دھوم وَالنَّجْم میں ہے آپ کی بینائی کی

پانسو (۵۰۰) سال کی راہ ایسی ہے جیسے دو گام
آس ہم کو بھی لگی ہے تِری شنوائی کی

چاند اشارے کا ہلا حکم کا باندھا سورج
واہ کیا بات شہا! تیری توانائی کی

تنگ ٹھہری ہے رؔضا جس کے لیے وسعتِ عرش
بس جگہ دل میں ہے اس جلوۂ ہر جائی کی

حدائقِ بخشش


All Related

Comments