Mustafa Jane Rehmat Pe Lakhon Salam

مصطفیٰ جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام
شمعِ بزم ہدایت پہ لاکھوں سلام

مِہرِ چرخِ نبوّت پہ روشن دُرود
گُلِ باغِ رسالت پہ لاکھوں سلام

شہر یارِ اِرم تاجْدارِ حرم
نو بہارِ شفاعت پہ لاکھوں سلام

شبِ اَسریٰ کے دولھا پہ دائم دُرود
نوشۂ بزمِ جنّت پہ لاکھوں سلام

عرش کی زیب و زینت پہ عرشی دُرود
فرش کی طِیب و نزہت پہ لاکھوں سلام

نورِ عینِ لطافت پہ اَلطف دُرود
زیب و زَینِ نظافت پہ لاکھوں سلام

سروِ نازِ قِدَم مغزِ رازِ حِکَم
یکّہ تازِ فضیلت پہ لاکھوں سلام

نقطۂ سِرِّ وحدت پہ یکتا دُرود
مرکزِ دورِ کثرت پہ لاکھوں سلام

صاحبِ رَجعتِ شمس و شقّ القمر
نائبِ دستِ قدرت پہ لاکھوں سلام

جس کے زیرِ لِوا آدم و من سوا
اس سزائے سیادت پہ لاکھوں سلام

عرش تا فرش ہے جس کے زیرِ نگیں
اس کی قاہر ریاست پہ لاکھوں سلام

اصلِ ہر بُود و بہبود تخمِ وجود
قاسمِ کنزِ نعمت پہ لاکھوں سلام

فتحِ بابِ نبوّت پہ بے حد دُرود
ختمِ دورِ رسالت پہ لاکھوں سلام

شرقِ انوارِ قدرت پہ نوری دُرود
فَتقِ اَزہارِ قربت پہ لاکھوں سلام

بے سہیم و قسیم و عدیل و مَثیل
جوہرِ فردِ عزّت پہ لاکھوں سلام

سرِّ غیبِ ہدایت پہ غیبی دُرود
عطرِ جَیبِ نہایت پہ لاکھوں سلام

ماہِ لاہوتِ خلوت پہ لاکھوں دُرود
شاہِ ناسوت جلوت پہ لاکھوں سلام

کنزِ ہر بے کس و بے نوا پر دُرود
حرزِ ہر رفتہ طاقت پہ لاکھوں سلام

پرتِو اسمِ ذاتِ اَحَد پر دُرود
نسخۂ جامعیّت پہ لاکھوں سلام

مَطلعِ ہر سعادت پہ اسعد دُرود
مَقطعِ ہر سِیادت پہ لاکھوں سلام

خَلق کے داد رس سب کے فریاد رس
کہفِ روزِ مصیبت پہ لاکھوں سلام

مجھ سے بے کس کی دولت پہ لاکھوں دُرود
مجھ سے بے بس کی قوّت پہ لاکھوں سلام

شمعِ بزمِ دَنٰی ھُوْ میں گم کُنْ اَنَا
شرحِ مَتنِ ہُوِیَّت پہ لاکھوں سلام

انتہائے دوئی ابتدائے یکی
جمعِ تفریق وکثرت پہ لاکھوں سلام

کثرتِ بعدِ قلّت پہ اکثر دُرود
عزّتِ بعد ذلّت پہ لاکھوں سلام

ربِّ اعلیٰ کی نعمت پہ اعلیٰ دُرود
حق تَعَالٰی کی مِنَّت پہ لاکھوں سلام

ہم غریبوں کے آقا پہ بے حد دُرود
ہم فقیروں کی ثروت پہ لاکھوں سلام

فرحتِ جانِ مومن پہ بے حد دُرود
غیظِ قلبِ ضَلالت پہ لاکھوں سلام

سببِ ہر سبب منتہائے طلب
علّتِ جملہ علّت پہ لاکھوں سلام

مصدرِ مظہریّت پہ اظہر دُرود
مظہرِ مصدریّت پہ لاکھوں سلام

جس کے جلوے سے مرجھائی کلیاں کھلیں
اُس گُلِ پاک مَنبت پہ لاکھوں سلام

قدِّ بے سایہ کے سایۂ مرحمت
ظِلِّ ممدودِ رافت پہ لاکھوں سلام

طائرانِ قُدُس جس کی ہیں قُمریّاں
اس سہی سرْو قامت پہ لاکھوں سلام

وصف جس کا ہے آئینۂ حق نما
اس خدا ساز طلعت پہ لاکھوں سلام

جس کے آگے سرِ سروَراں خم رہیں
اُس سرِ تاجِ رفعت پہ لاکھوں سلام

وہ کرم کی گھٹا گیسوئے مشک سا
لکّۂ ابرِ رأفت پہ لاکھوں سلام

لَیْلَۃُ الْقَدْر میں مَطْلَعِ الْفَجْرِ حق
مانگ کی استقامت پہ لاکھوں سلام

لخت لختِ دلِ ہر جگر چاک سے
شانہ کرنے کی حالت پہ لاکھوں سلام

دور و نزدیک کے سننے والے وہ کان
کانِ لعلِ کرامت پہ لاکھوں سلام

چشمۂ مہر میں موجِ نورِ جلال
اُس رگِ ہاشمیّت پہ لاکھوں سلام

جس کے ماتھے شفاعت کا سہرا رہا
اس جبینِ سعادت پہ لاکھوں سلام

جن کے سجدے کو محرابِ کعبہ جھکی
اُن بھووں کی لطافت پہ لاکھوں سلام

اُن کی آنکھوں پہ وہ سایہ افگن مِژہ
ظُلّۂ قصرِ رحمت پہ لاکھوں سلام

اشک باریِ مِژگاں پہ برسے دُرود
سِلکِ دُرِّ شفاعت پہ لاکھوں سلام

معنیِ قَدْ رَاٰی مقصدِ مَا طَغٰی
نرگسِ باغِ قدرت پہ لاکھوں سلام

جس طرف اٹھ گئی دم میں دم آ گیا
اُس نگاہِ عنایت پہ لاکھوں سلام

نیچی آنکھوں کی شرم و حیا پر دُرود
اونچی بینی کی رفعت پہ لاکھوں سلام

جن کے آگے چراغِ قمر جھلملائے
اُن عَذاروں کی طلعت پہ لاکھوں سلام

اُن کے خَدّ کی سہولت پہ بے حد دُرود
ان کے قد کی رَشاقت پہ لاکھوں سلام

جس سے تاریک دل جگمگانے لگے
اُس چمک والی رنگت پہ لاکھوں سلام

چاند سے منھ پہ تاباں درخشاں دُرود
نمک آگیں صباحت پہ لاکھوں سلام

شبنمِ باغِ حق یعنی رخ کا عرق
اس کی سچی بَراقت پہ لاکھوں سلام

خط کی گردِ دہن وہ دل آرا پھبن
سبزۂ نہرِ رحمت پہ لاکھوں سلام

ریشِ خوش مُعتدل مرہمِ ریشِ دل
ہالۂ ماہِ ندرت پہ لاکھوں سلام

پتلی پتلی گُلِ قدْس کی پتیاں
اُن لبوں کی نزاکت پہ لاکھوں سلام

وہ دہن جس کی ہر بات وحیِ خدا
چشمۂ علم و حکمت پہ لاکھوں سلام

جس کے پانی سے شاداب جان و جَناں
اُس دہن کی طراوت پہ لاکھوں سلام

جس سے کھاری کنویں شیرۂ جاں بنے
اُس زُلالِ حَلاوت پہ لاکھوں سلام

وہ زباں جس کو سب ’’کُنْ‘‘ کی کنجی کہیں
اُس کی نافذ حکومت پہ لاکھوں سلام

اُس کی پیاری فصاحت پہ بے حد دُرود
اُس کی دل کَش بلاغت پہ لاکھوں سلام

اُس کی باتوں کی لذّت پہ لاکھوں دُرود
اُس کے خطبے کی ہیبت پہ لاکھوں سلام

وہ دعا جس کا جوبن بہارِ قبول
اُس نسیمِ اجابت پہ لاکھوں سلام

جن کے گچھے سے لچھے جھڑیں نور کے
اُن ستاروں کی نزہت پہ لاکھوں سلام

جس کی تسکیں سے روتے ہوئے ہنس پڑیں
اُس تبسّم کی عادت پہ لاکھوں سلام

جس میں نہریں ہیں شیرو شکر کی رواں
اَس گلے کی نَضارت پہ لاکھوں سلام

دوش بردوش ہے جن سے شانِ شرف
ایسے شانوں کی شوکت پہ لاکھوں سلام

حجرِ اَسوَدِ کعبۂ جان و دل
یعنی مُہرِ نُبوّت پہ لاکھوں سلام

روئے آئینۂ علم پشتِ حضور
پُشتیِ قصرِ ملّت پہ لاکھوں سلام

ہاتھ جس سمت اُٹھّا غنی کر دیا
موجِ بحرِ سماحت پہ لاکھوں سلام

جس کو بارِ دو عالم کی پروا نہیں
ایسے بازو کی قوّت پہ لاکھوں سلام

کعبۂ دین و ایماں کے دونوں ستون
ساعدَینِ رسالت پہ لاکھوں سلام

جس کے ہر خط میں ہے موجِ نورِ کرم
اس کفِ بحرِ ہمّت پہ لاکھوں سلام

نور کے چشمے لہرائیں دریا بہیں
انگلیوں کی کرامت پہ لاکھوں سلام

عیدِ مشکل کُشائی کے چمکے ہلال
ناخنوں کی بِشارت پہ لاکھوں سلام

رفعِ ذکرِ جلالت پہ ارفع دُرود
شرحِ صدرِ صدارت پہ لاکھوں سلام

دل سمجھ سے ورا ہے مگر یوں کہوں
غنچۂ رازِ وَحدت پہ لاکھوں سلام

کُل جہاں مِلک اور جو کی روٹی غذا
اُس شکم کی قناعت پہ لاکھوں سلام

جو کہ عزمِ شفاعت پہ کھنچ کر بندھی
اُس کمر کی حمایت پہ لاکھوں سلام

انبیا تہ کریں زانو اُن کے حضور
زانووں کی وجاہت پہ لاکھوں سلام

ساقِ اصلِ قدم شاخِ نخلِ کرم
شمعِ راہِ اِصابت پہ لاکھوں سلام

کھائی قرآں نے خاکِ گزر کی قسم
اُس کفِ پا کی حرمت پہ لاکھوں سلام

جس سُہانی گھڑی چمکا طیبہ کا چاند
اُس دِل افروز ساعت پہ لاکھوں سلام

پہلے سجدے پہ روزِ ازل سے دُرود
یادگاریِ امّت پہ لاکھوں سلام

زَرعِ شاداب و ہرضَرعِ پُر شیر سے
برکاتِ رضاعت پہ لاکھوں سلام

بھائیوں کے لئے ترکِ پستاں کریں
دودھ پیتوں کی نصفت پہ لاکھوں سلام

مہدِ والا کی قسمت پہ صدہا دُرود
بُرجِ ماہِ رسالت پہ لاکھوں سلام

اللہ اللہ وہ بچپنے کی پھبن!
اُس خدا بھاتی صورت پہ لاکھوں سلام

اٹھتے بوٹوں کی نَشْو و نَما پر دُرود
کھلتے غنچوں کی نکہت پہ لاکھوں سلام

فضلِ پیدائشی پر ہمیشہ دُرود
کھیلنے سے کراہت پہ لاکھوں سلام

اِعتلائے جبلّت پہ عالی دُرود
اعتدالِ طَوِیّت پہ لاکھوں سلام

بے بناوٹ ادا پر ہزاروں دُرود
بےتکلّف ملاحت پہ لاکھوں سلام

بھینی بھینی مہک پر مہکتی دُرود
پیاری پیاری نفاست پہ لاکھوں سلام

میٹھی میٹھی عبارت پہ شیریں دُرود
اچھی اچھی اِشارت پہ لاکھوں سلام

سیدھی سیدھی روش پر کروروں دُرود
سادی سادی طبیعت پہ لاکھوں سلام

روزِ گرم و شبِ تیرہ و تار میں
کوہ و صحرا کی خلوت پہ لاکھوں سلام

جس کے گھیرے میں ہیں انبیا و مَلک
اُس جہانگیر بعثت پہ لاکھوں سلام

اندھے شیشے جھلاجھل دمکنے لگے
جلوہ ریزیِ دعوت پہ لاکھوں سلام

لُطفِ بیداریِ شب پہ بے حد دُرود
عالمِ خوابِ راحت پہ لاکھوں سلام

خندۂ صبحِ عشرت پہ نوری دُرود
گریۂ ابرِ رحمت پہ لاکھوں سلام

نرمیِ خوئے لینت پہ دائم دُرود
گرمیِ شانِ سطوت پہ لاکھوں سلام

جس کے آگے کھنچی گردنیں جھک گئیں
اُس خدا داد شوکت پہ لاکھوں سلام

کس کو دیکھا یہ موسیٰ سے پوچھے کوئی
آنکھوں والوں کی ہمت پہ لاکھوں سلام

گردِ مہ دستِ انجم میں رخشاں ہلال
بدر کی دفعِ ظلمت پہ لاکھوں سلام

شورِ تکبیر سے تھرتھراتی زمیں
جنبشِ جیشِ نصرت پہ لاکھوں سلام

نعرہائے دلیراں سے بَن گونجتے
غُرِّشِ کُوسِ جرأت پہ لاکھوں سلام

وہ چقا چاق خنجر سے آتی صَدا
مصطفیٰ تیری صولت پہ لاکھوں سلام

اُن کے آگے وہ حمزہ کی جاں بازیاں
شیرِِ غُرّانِ سطوت پہ لاکھوں سلام

الغرض اُن کے ہر مُو پہ لاکھوں دُرود
اُن کی ہر خو و خصلت پہ لاکھوں سلام

ان کے ہر نام و نسبت پہ نامی دُرود
اُن کے ہر وقت و حالت پہ لاکھوں سلام

اُن کے مولیٰ کی اُن پر کروروں دُرود
اُن کے اصحاب و عترت پہ لاکھوں سلام

پارَہائے صحف غنچہائے قُدُس
اہلِ بیتِ نُبوّت پہ لاکھوں سلام

آبِ تطہیر سے جس میں پودے جمے
اُس ریاضِ نجابت پہ لاکھوں سلام

خونِ خَیْرُ الرُّسُل سے ہے جن کا خمیر
اُن کی بے لوث طینت پہ لاکھوں سلام

اُس بتولِ جگر پارۂ مصطفیٰ
حجلہ آرائے عفّت پہ لاکھوں سلام

جس کا آنچل نہ دیکھا مہ و مِہر نے
اُس رِدائے نَزاہت پہ لاکھوں سلام

سیّدہ زاہرہ طیّبہ طاہرہ
جانِ احمد کی راحت پہ لاکھوں سلام

حَسنِ مجتبیٰ سَیِّدُ الْاَسْخِیَا
راکبِ دوشِ عزّت پہ لاکھوں سلام

اَوجِ مِہرِ ہُدیٰ مَوجِ بحرِ نَدیٰ
روحِ روحِ سخاوت پہ لاکھوں سلام

شہد خوارِ لعاب زبانِ نبی
چاشنی گیرِ عصمت پہ لاکھوں سلام

اس شہیدِ بلا شاہ گلگلوں قَبا
بے کسِ دشتِ غربت پہ لاکھوں سلام

دُرِّ دُرجِ نجف، مِہرِ بُرجِ شرف
رنگِ روئے شہادت پہ لاکھوں سلام

اہلِ اسلام کی مادرانِ شفیق
بانُوانِ طہارت پہ لاکھوں سلام

جلوگیّانِ بیت الشرف پر دُرود
پروگیّانِ عفّت پہ لاکھوں سلام

سِیَّمَا پہلی ماں کہفِ امن و اماں
حق گزارِ رفاقت پہ لاکھوں سلام

عرش سے جس پہ تسلیم نازل ہوئی
اُس سرائے سلامت پہ لاکھوں سلام

مَنْزِلٌ مِّنْ قَصَبْ لَا نَصَبْ لَا صَخَبْ
ایسے کُوشک کی زینت پہ لاکھوں سلام

بنتِ صدّیق آرامِ جانِ نبی
اُس حریمِ بَراءت پہ لاکھوں سلام

یعنی ہے سورۂ نور جن کی گواہ
اُن کی پُر نور صورت پہ لاکھوں سلام

جن میں روح القدس بے اجازت نہ جائیں
اُن سُرادِق کی عصمت پہ لاکھوں سلام

شمعِ تابانِ کاشانۂ اجتہاد
مُفتیِ چار ملّت پہ لاکھوں سلام

جاں نثارانِ بدر و اُحُد پر دُرود
حق گزارانِ بیعت پہ لاکھوں سلام

وہ دسوں جن کو جنّت کا مژدہ ملا
اُس مُبارک جماعت پہ لاکھوں سلام

خاص اُس سابقِ سَیرِ قربِ خدا
اَوحدِ کاملیت پہ لاکھوں سلام

سایۂ مصطفیٰ مایۂ اِصْطَفٰی
عزّ و نازِ خلافت پہ لاکھوں سلام

یعنی اُس اَفْضَلُ الْخَلْق بَعْدَ الرُّسُل
ثَانِیَ اثْنَیْنِ ہجرت پہ لاکھوں سلام

اَصْدَقُ الصَّادِقِیں سَیِّدُ الْمُتَّقِیں
چشم وگوشِ وِزارت پہ لاکھوں سلام

وہ عمر جس کے اَعدا پہ شیدا سقر
اُس خدا دوست حضرت پہ لاکھوں سلام

فارقِ حقّ و باطل اِمامُ الہُدیٰ
تیغِ مسلولِ شدّت پہ لاکھوں سلام

ترجمانِ نبی، ہم زبانِ نبی
جانِ شانِ عدالت پہ لاکھوں سلام

زاہدِ مسجدِ احمدی پر دُرود
دولتِ جیشِ عسرت پہ لاکھوں سلام

دُرِّ منثور قرآں کی سلکِ بہی
زوجِ دو نورِ عفّت پہ لاکھوں سلام

یعنی عثمان صاحب قمیصِ ہُدیٰ
حُلّہ پوشِ شہادت پہ لاکھوں سلام

مرتضیٰ شیرِ حق اشجع الاشجعیں
ساقیِ شیر و شربت پہ لاکھوں سلام

اصلِ نسلِ صفا وجہِ وصلِ خُدا
بابِ فصلِ ولایت پہ لاکھوں سلام

اوّلیں دافعِ اہلِ رفض و خروج
چارُمی رکنِ ملّت پہ لاکھوں سلام

شیرِِ شمشیر زن شاہِ خیبر شکن
پرتَوِ دستِ قدرت پہ لاکھوں سلام

ماحیِ رفض و تفضیل و نصب و خُروج
حامیِ دین و سنّت پہ لاکھوں سلام

مومنیں پیشِ فتح و پسِ فتح سب
اہلِ خیر و عدالت پہ لاکھوں سلام

جس مسلماں نے دیکھا اُنھیں اِک نطر
اُس نظر کی بصارت پہ لاکھوں سلام

جن کے دشمن پہ لعنت ہے اللہ کی
اُن سب اہلِ محبّت پہ لاکھوں سلام

باقیِ ساقیانِ شرابِ طَہور
زَینِ اہلِ عبادت پہ لاکھوں سلام

اور جتنے ہیں شہزادے اُس شاہ کے
اُن سب اہلِ مَکانت پہ لاکھوں سلام

اُن کی بالا شرافت پہ اعلیٰ دُرود
ان کی والا سِیادت پہ لاکھوں سلام

شافعی، مالک، احمد، امامِ حَنیف
چار باغِ امامت پہ لاکھوں سلام

کاملانِ طریقت پہ کامل دُرود
حاملانِ شریعت پہ لاکھوں سلام

غوثِ اعظم اِمَامُ التُّقٰی وَالنُّقٰی
جلوۂ شانِ قدرت پہ لاکھوں سلام

قطبِ اَبدال و ارشاد و رُشدُ الرَّشاد
محییِ دین و ملّت پہ لاکھوں سلام

مردِ خَیلِ طریقت پہ بے حد دُرود
فردِ اہلِ حقیقت پہ لاکھوں سلام

جس کی منبر ہوئی گردنِ اولیا
اُس قدم کی کرامت پہ لاکھوں سلام

شاہِ برکات و برکاتِ پیشینیاں
نو بہارِ طریقت پہ لاکھوں سلام

سیّد آلِ محمد امامُ الرَّشید
گُلِ رَوضِ ریاضت پہ لاکھوں سلام

حضرتِ حمزہ شیرِ خدا و رسول
زینتِ قادِریّت پہ لاکھوں سلام

نام و کام و تن وجان وحال و مَقال
سب میں اچھے کی صورت پہ لاکھوں سلام

نورِ جاں، عِطرِ مجموعہ آلِ رسول
میرے آقائے نعمت پہ لاکھوں سلام

زیبِ سجادہ سجّاد نوری نِہاد
احمدِ نور طینت پہ لاکھوں سلام

بے عذاب وعِتاب و حساب و کتاب
تا ابد اہلِ سنّت پہ لاکھوں سلام

تیرے اِن دوستوں کے طفیل اے خدا
بندۂ ننگِ خلقت پہ لاکھوں سلام

میرے اُستاد، ماں، باپ، بھائی، بہن
اہلِ وُلد و عَشیرت پہ لاکھوں سلام

ایک میرا ہی رحمت میں دعویٰ نہیں
شاہ کی ساری امّت پہ لاکھوں سلام

کاش محشر میں جب اُن کی آمد ہو اور
بھیجیں سب اُن کی شوکت پہ لاکھوں سلام

مجھ سے خدمت کے قُدسی کہیں ہاں رضؔا
مصطفیٰ جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

حدائقِ بخشش


All Related

Comments