Munajat (Supplications to Almighty Allah)  

Ya Ilahi Har Jaga Teri Ata

یا الٰہی! ہر جگہ تیری عطا کا ساتھ ہو
جب پڑے مشکل شہِ مشکل کشا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! بھول جاؤں نزع کی تکلیف کو
شادیِ دیدارِ حُسنِ مصطفیٰ کا ساتھ ہو

یا الٰہی! گورِ تیرہ کی جب آئے سخت رات
اُن کے پیارے منھ کی صبحِ جاں فزا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! جب پڑے محشر میں شورِ دار و گیر
امن دینے والے پیارے پیشوا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! جب زبانیں باہر آئیں پیاس سے
صاحبِ کوثر شہِ جود و عطا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! سرد مہری پر ہو جب خورشیدِ حشر
سیّدِ بے سایہ کے ظِلِّ لِوا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! گرمیِ محشر سے جب بھڑکیں بدن
دامنِ محبوب کی ٹھنڈی ہوا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! نامۂ اعمال جب کھلنے لگیں
عیب پوشِ خلق، ستّارِ خطا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! جب بہیں آنکھیں حسابِ جرم میں
اُن تبسّم ریز ہونٹوں کی دُعا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! جب حسابِ خندۂ بے جا رُلائے
چشمِ گریانِ شفیعِ مُرتجٰی کا ساتھ ہو

یا الٰہی! رنگ لائیں جب مِری بے باکیاں
اُن کی نیچی نیچی نظروں کی حیا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! جب چلوں تاریک راہِ پل صراط
آفتابِ ہاشمی نور الہُدیٰ کا ساتھ ہو

یا الٰہی! جب سرِ شمشیر پر چلنا پڑے
رَبِّ سَلِّمْ کہنے والے غم زُدا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! جو دعائے نیک میں تجھ سے کروں
قدسیوں کے لب سے آمیں رَبَّنَا کا ساتھ ہو

یا الٰہی! جب رؔضا خوابِ گراں سے سر اٹھائے
دولتِ بیدار عشقِ مصطفیٰ کا ساتھ ہو

حدائقِ بخشش

...

Ya Ilahi Reham Farma Mustafa K Wastey

یا الٰہی! رحم فرما مصطفیٰ کے واسطے
یارسولَ اللہ! کرم کیجے خدا کے واسطے

مشکلیں حل کر شہِ مشکل کُشا کے واسطے
کر بلائیں رد شہیدِ کربلا کے واسطے

سیّدِ سجاد کے صدقے میں ساجد رکھ مجھے
علمِ حق بے باقرِ علمِ ہُدیٰ کے واسطے

صدقِ صادق کا تَصدّق صادق الاسلام کر
بے غضب راضی ہو کاظم اور رضا کے واسطے

بہرِ معروف و سَری معروف دے بے خود سَری
جُندِ حق میں گِن جُنیدِ با صفا کے واسطے

بہرِ شبلی شیرِ حق دُنیا کے کتوں سے بچا
ایک کا رکھ عبدِ واحد بے ریا کے واسطے

بوالفرح کا صدقہ کر غم کو فرح، دے حُسن و سعد
بوالحسن اور بو سعیدِ سعد زا کے واسطے

قادری کر قادری رکھ قادریّوں میں اٹھا
قدرِ عبدالقادرِ قدرت نُما کے واسطے

اَحْسَنَ اللہُ لَہُمْ رِزْقًا سے دے رزقِ حسن
بندۂ رزّاق تاجُ الاصفیا کے واسطے

نصر ابی صالح کا صدقہ صالح و منصور رکھ
دے حیاتِ دیں مُحیِّ جاں فزا کے واسطے

طورِ عرفان و علوّ و حمد و حسنیٰ و بہا
دے علی، موسیٰ، حَسن، احمد، بہا کے واسطے

بہرِ ابراہیم مجھ پر نارِ غم گلزار کر
بھیک دے داتا بھکاری بادشا کے واسطے

خانۂ دل کو ضیا دے روئے ایماں کو جمال
شہ ضیا مولیٰ جمالُ الاولیا کے واسطے

دے محمد کے لیے روزی، کر احمد کے لیے
خوانِ فضل اللہ سے حصّہ گدا کے واسطے

دین و دنیا کے مجھے برکات دے برکات سے
عشقِ حق دے عشقیِ عشق انتما کے واسطے

حُبِِّ اہلِ بیت دے آلِ محمد کے لیے
کر شہیدِ عشق حمزہ پیشوا کے واسطے

دل کو اچھا تن کو ستھرا جان کو پُر نور کر
اچھے پیارے شمسِ دیں بدر العلیٰ کے واسطے

دو جہاں میں خادمِ آلِ رسول اللہ کر
حضرتِ آلِ رسولِ مقتدا کے واسطے

صدقہ اِن اَعیاں کے دے چھ عین عز علم و عمل
عفو و عرفاں عافیت احمد رؔضا کے واسطے

حدائقِ بخشش

...

Ya khuda Behr e Janab e Mustafa

یا خدا بہرِ جنابِ مصطفیٰ امداد کُن
یا رسولَ اللہ از بہرِ خدا امداد کُن

یَا شَفِیْعَ الْمُذْنِبِیں یَا رَحْمَۃً لِّلْعٰلَمِیں
یَا اَمَانَ الْخَآئِفِیں یا مُلْتَجٰی امداد کُن

حِرْزَ مَنْ لَّا حِرْزَ لَہٗ یَا کَنْزَ مَنْ لَّا کَنْزَ لَہٗ
عِزَّ مَنْ لَّا عِزَّ لَہٗ یَا مُرْتَجٰی امداد کُن

ثروتِ بے ثروتاں اے قوّتِ بے قوّتاں
اے پناہِ بے کساں اے غم زِدا امداد کُن

یَا مُفِیْضَ الْجُوْد یَا سِرَّالْوُجُوْد اے تخمِ بُود
اے بہارِ ابتدا و انتہا امداد کُن

اے مغیث اے غوث اے غیث اے غِیاثِ نشأتین
اےغنی اے مُغنی اے صاحب حیا امداد کُن

نعمتِ بے محنتا اے مِنّتِ بے منتہیٰ
رحمتا بے زحمتا عینِ عطا امداد کُن

نیّرا نور الہُدیٰ بدرالدجیٰ شمس الضحیٰ
اے رُخَت آئینۂ ذاتِ خدا امداد کُن

اے گدایت جنّ و انس وحور و غلمان و مَلک
وَے فِدایت عرش و فرش، ارض و سما امداد کُن

اے قریشی ہاشمی طیبی تہامی ابطحی
عزِّ بیت اللہ و عذرا و قبا امداد کُن

یَا طَبِیْبَ الرُّوْح یَا طِیْبَ الْفُتُوْح اے بے قبوح
مظہرِ سُبُّوْح پاک از عَیبہا امداد کُن

اے عطا پاش اے خطا پوش اے عفو کیش اے کریم
اے سراپا رافتِ رَبُّ الْعُلیٰ امداد کُن

اے سُرورِ جانِ غمگیں اے پئے اُمت حزیں
اے غمِ تو ضامنِ شادیّ ما امداد کُن

اے بِہیں عطرے زِ اعلیٰ جونۂ عطّار قُدْس
اے مِہیں دُرّے زِ دُرجِ اِصطفا امداد کُن

اے کہ عالَم جملہ دادَندَت مگر عیب و قصور
سَرورِ بے نقص شاہِ بے خطا امداد کُن

بندۂ مولیٰ و مولائے تمامی بندگان
اے زِ عالَم بیش و بیش از تو خدا امداد کُن

اے علیم اے عالِم اے عَلّام اعلم اے علم
علمِ تو مُغنی زِ عرضِ مُدّعا امداد کُن

اے بدستِ تو عنانِ کُنْ مَکُنْ کُنْ لَا تَکُنْ
وَے بحکمت عرش و ما تحت الثریٰ امداد کُن

سیدا قلبُ الہدیٰ جلبُ النَّدیٰ سلبُ الرَّویٰ
غمزِدا غمر الرِّدا اَلحدی… امداد کُن

سَرورا کہف الوریٰ تن را دوا جاں را شفا
اے نسیمِ دامَنَت عیسیٰ لِقا امداد کُن

اے برائے ہر دلِ مغشوش و چشمِ پُر غبار
خاکِ کُویت کیمیا و توتیا امداد کُن

جانِ جاں جانِ جہاں جانِ جہاں را جانِ جاں
بلکہ جانہا خاکِ نعلینت شہا امداد کُن

مَنْ عَلَیْھَا فَانْ آقا آنچہ بر روئے زمیں ست
در تو فانی در تو گم بر تو فدا امداد کُن

کُلُّ شَیْءٍ ہَالِک اِلَّا وَجْہَہٗ اے آں کہ خَلق
دَر تو مستہلک تو در ذاتِ خدا امداد کُن

سہل کارے باشدت تسہیل ہر مشکل از آں کہ
ہر چہ خواہی می کند فوراً ترا امداد کُن

دارہاں ازمن مرابے من سوئے خود خواں مرا
مدّعا بخشا دِلے بے مدّعا امداد کُن

حدائقِ بخشش

...

Dard Apna De Is Qadar Ya Rab

درد اپنا دے اس قدر یا رب
نہ پڑے چین عمر بھر یارب

میری آنکھوں کو دے وہ بینائی
تو ہی آئے مجھے نظر یارب

ورد میرا ہو تیرا کلمۂ پاک
جب کہ دنیا سے ہو سفر یا رب

شجر نعت دل میں بویا ہے
جلد اس میں لگا ثمر یارب

تیرے محبوب کا میں واصف ہوں
دے زباں میں مری اثر یارب

بطفیل رسولِ ہر دوسرا
ساتھ میرے رہے ظفر یارب

تیری رحمت جو میرے ساتھ رہے
مجھ کو کس کا ہو پھر خطر یا رب

ایسا مجھ کو گمادے الفت میں
نہ رہے اپنی کچھ خبر یارب

دیکھنے کے لیے مجھے تر سے
عمر بھر میری چشم تریارب

جان نکلے تو اس طرح نکلے
تیرے در پر ہو میرا سریارب

قبر میں اور جانکنی کے وقت
جب ہو حالت مری دگریارب

سختیوں سے مجھے بچا لینا
رکھنا رحمت کی تو نظر یارب

ایسی دے میرے دل کو اپنی تلاش
مجھ کو ملجائے تیرا گھر یارب

آستانے کا اپنے رکھ منگتا
نہ پھر امجھ کو دربدر یا رب

میں نے پھیلایا دامن مقصود
بھر دے رحمت کے تو گہریارب

دل ویراں کو نور سے بھردے
کہ ہو آباد یہ کھنڈر یارب

عرش اس کو کہوں کہ بیت اللہ
میرے دل میں ہے تیرا گھر یارب

نام کو تیرے رٹتے رٹتے روز
شام سے میں کروں سحر یارب

میرے سینے کو اپنی الفت سے
بطفیل حبیب بھر یارب

ذرہ ذرہ سے آشکارا ہے
گو کسی جانہیں مگر یا رب

تیرا جلوہ کہاں نہیں موجود
سب کے دل میں ہے تیرا گھر یارب

نحن اقرب سے کھل گیا توہے
رگِ جاں سے قریب تر یارب

تیری تحمید کرتے ہیں ہر دم
مورو مار و شجر حجر یا رب

کرتے ہیں صبح و شام لیل و نہار
تیری تسبیح خشک و تر یارب

میرے جرم و قصور پر تونہ جا
اپنی رحمت پہ کر نظر یارب

نہ ٹھکانہ مرالگے گا کہیں
تو نے چھوڑا مجھے اگر یارب

اپنے محبوب کا مجھے واصف
رکھ تو رحمت سے عمر بھر یارب

اڑکے پہنچوں میں شہر طیبہ میں
میرے لگ جائیں ایسے پر یارب

یوں اٹھوں قبر سے درخشاں رو
جیسے نکلا کوئی قمر یا رب

میرے پیارے ترے حبیب جنہیں
تو نے بلوایا عرش پر یارب

ان کا اور ان کی آل کا صدقہ
خاتمہ تو بخیر کر یارب

میری اولاد اور مری بہنیں
اور مرے مادر وپدریارب

جملہ احباب اور سب اہل سنن
کل پہ رحمت کی رکھ نظر یارب

دشمنوں پر طفیل غوث و رسیٰ
میرے مرشد کو دے ظفر یا رب

میرے استاد تھے حسن مرحوم
نور سے ان کی قبر بھر یارب

اتحاد ایسا سنیوں میں دے
کہ رہیں شیر اور شکر یارب

ذکر محبوب کی یہ محفل ہے
اس میں حاضرہے جو بشر یارب

مرد و عورت گدا غریب و امیر
سب کی پوری مرادیں کریارب

نیک کاموں کی ان کو دے توفیق
کر عطا سب کو زور و زریا رب

جو ہیں کم رزق مفلس و محتاج
رز ق دے ان کو پیٹ بھریارب

لاولد کی مراد پوری کر
نیک بیٹوں سے گود بھر یارب

بانی مجلس مبارک کا
رہے ٹھنڈا دل و جگر یا رب

جو کہ جلتے ہیں ذکر مولد سے
کر عطا ان کو تو سفر یا رب

نیچری و وہابی و رفاض
قہر کی ان پہ کر نظر یارب

اور جتنے ہیں دشمن اسلام
جلد دوزخ میں ان کو بھر یار ب

مسخ کردےکہ ان کی ہوجائے
صورت وصوت مثل خریارب

دے یہ تو فیق تیرے اعدا سے
اہلسنت کریں حذر یارب

زیر ہر دم رہیں تیرے دشمن
دین تیرا رہے زبر یارب

قادری ہے جمیل اے غفار
سب گنہ اس کے عفو کر یارب

قبالۂ بخشش

...