Manqabat (Praise of Allah’s friends)  

Teri Madha Khawan Har Zaban Ghous-e-Azam

تری مدح خواں ہر زباں غوث اعظم
ترا نام مومن کی جاں غوث اعظم

پناہ غریباں تری ذاتِ والا
ترا گھر ہے دار الاماں غوث اعظم

زمانہ نہ کیوں کر ہو مہماں کہ تم نے
بچھا یا ہے رحمت کا خواں غوث اعظم

تری مجلس و عظ میں آتے اکثر
عرب سے شہ مرسلاں غوث اعظم

جسے شک ہو وہ خضر سے پوچھ دیکھے
تری مجلسوں کا سماں غوث اعظم

نہ لے بھول کر نام بلبل چمن کا
جو دیکھے ترا گلستاں غوث اعظم

ہے بزم حسین و حسن تجھ سے روشن
توہے نور کا شمعداں غوث اعظم

ترے جد امجد ہیں نور الہٰی
ہے نوری ترا خانداں غوث اعظم

علوم و فیوض شہنشاہ طیبہ
ہیں سینے میں تیرے نہاں غوث اعظم

ترے سامنے حالت دل ہے روشن
کروں زور سے کیوں فغاں غوث اعظم

تمہاری ولایت سیادت کرم کا
ہوا شور تالامکاں غوث اعظم

ترے وعظ میں آکے شاہ عرب نے
بڑھائی تری عزوشاں غوث اعظم

ہوئے دیکھ کر تجھ کو کافر مسلماں
بنے سنگدل موم ساں غوث اعظم

قلوب خلائق کی باب جناں کی
ملی ہیں تجھے کنجیاں غوث اعظم

بخارا و اجمیر و مارہرہ کلیر
یہ سب ہیں تری مذیاں غوث اعظم

کریں جبھ سائی جہاں تاج والے
وہ ہے آپ کا آستاں غوث اعظم

مٹائے ترے درپہ جو اپنی ہستی
رہے اس کا نام و نشاں غوث اعظم

ملے اب تو گلزار بغداد مجھ کو
میں بلبل ہوں بے آشیاں غوث اعظم

ملے گی ہمیں تیرے دامن کے نیچے
دو عالم میں امن و اماں غوث اعظم

دو عالم میں ہےکون حامی ہمارا
یہاں غوثِ اعظم وہاں غوثِ اعظم

ذرا صدقِ دل سے پکارو تو انکو
ابھی جلوہ گرہوں یہاں غوث اعظم

نہ ہو مبتلا وہ کبھی رنج و غم میں
کرے جس کو تو شادماں غوث اعظم

اگر ذکر میں تیرے گزرے تو بہتر
یہ تھوڑی سی عمررواں غوث اعظم

ملے رنج و افکار سے مجھ کو مہلت
کہ ہوں آپ کا مدح خواں غوث اعظم

مرے دم میں جبتک رہے دم رہوں میں
ترے ذکر سے ترزباں غوث اعظم

دمِ صور مرقدسے کہتا اٹھوں گا
وہاں لے چلو ہیں جہاں غوث اعظم

ہمارے قصور و خطا بخشوا کر
دلائیں قصور جناں غوث اعظم

کیا مرغ سوکھی ہوئی ہڈیوں کو
یہ رکھتے ہیں تاب و تواں غوث اعظم

جمیل اب ہو ساکت مقام ادب ہے
کہاں تیرا منہ اور کہاں غوث اعظم

قبالۂ بخشش

...

yaqinan mamba e khuf e khuda siddiq e akbar hain

یقینا ًمنبعِ خوفِ خدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

یقیناً منبعِ خوفِ خدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

حقیقی عاشِقِ خیرُ الْوریٰ صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

بِلا شک پیکرِ صبر و رِضا صِدِّیقِ اکبر ہیں

یقیناً مخزنِ صِدق و وفا صِدِّیق اکبر ہیں

 

نِہایَت مُتَّقی و پارسا صِدِّیقِ اکبر ہیں

تَقی ہیں بلکہ شاہِ اَتْقِیا صِدِّیق اکبر ہیں

 

جو یارِ غارِ مَحْبوبِ خدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

وُہی یارِ مزار ِمصطَفیٰ صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

طبیبِ ہر مریضِ لادوا صِدِّیق اکبر ہیں

غریبوں بے کسوں کا آسرا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

امیرُ الْمؤمنیں  ہیں آپ امامُ الْمسلمین ہیں آپ

نبی نے جنّتی جن کو کہا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

سبھی اَصحاب سے بڑھ کر مقرَّب ذات ہے انکی

رفیقِ سرور ِاَرض و سماء صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

عمر سے بھی وہ افضل ہیں وہ عثماں سے بھی اعلیٰ ہیں

یقیناً پیشوائے مُرْتَضیٰ صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

امامِ احمد و مالِک، امامِ بُو حنیفہ اور

امامِ شافِعی کے پیشوا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

تمامی اولیاءُ اللہ کے سردار ہیں جو اُس

ہمارے غوث کے بھی پیشوا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

سبھی عُلَمائے اُمَّت کے، امام و پیشوا ہیں آپ

بِلا شک پیشوائے اَصفیا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

خدائے پاک کی رَحْمت سے انسانوں میں ہر اک سے

فُزوں تر بعد از گُل اَنْبِیا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

ہلاکت خیز طُغیانی ہو یا ہوں موجیں طوفانی

کیوں ڈوبے اپنا بَیڑا ناخدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

بھٹک سکتےنہیں ہم اپنی منزِل ٹھوکر وں میں ہے

نبی کا ہے کرم اور رہنما صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

گناہوں کے مَرض نے نیم جاں ہے کر دیا مجھ کو

طبیب اب بس مِرے تو آپ یا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

نہ گھبراؤ گنہگار وتمھارے حَشْر میں حامی

مُحبِّ شافِعِ روزِ جزا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

نہ ڈر عطّؔارآفت سے خدا کی خاص رَحْمت سے

نبی والی تِرے، مُشْکِل کُشاصِدِّیقِ اکبر ہیں

 

یقینا ًمنبعِ خوفِ خدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

یقیناً منبعِ خوفِ خدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

حقیقی عاشِقِ خیرُ الْوریٰ صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

بِلا شک پیکرِ صبر و رِضا صِدِّیقِ اکبر ہیں

یقیناً مخزنِ صِدق و وفا صِدِّیق اکبر ہیں

 

نِہایَت مُتَّقی و پارسا صِدِّیقِ اکبر ہیں

تَقی ہیں بلکہ شاہِ اَتْقِیا صِدِّیق اکبر ہیں

 

جو یارِ غارِ مَحْبوبِ خدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

وُہی یارِ مزار ِمصطَفیٰ صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

طبیبِ ہر مریضِ لادوا صِدِّیق اکبر ہیں

غریبوں بے کسوں کا آسرا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

امیرُ الْمؤمنیں  ہیں آپ امامُ الْمسلمین ہیں آپ

نبی نے جنّتی جن کو کہا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

سبھی اَصحاب سے بڑھ کر مقرَّب ذات ہے انکی

رفیقِ سرور ِاَرض و سماء صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

عمر سے بھی وہ افضل ہیں وہ عثماں سے بھی اعلیٰ ہیں

یقیناً پیشوائے مُرْتَضیٰ صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

امامِ احمد و مالِک، امامِ بُو حنیفہ اور

امامِ شافِعی کے پیشوا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

تمامی اولیاءُ اللہ کے سردار ہیں جو اُس

ہمارے غوث کے بھی پیشوا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

سبھی عُلَمائے اُمَّت کے، امام و پیشوا ہیں آپ

بِلا شک پیشوائے اَصفیا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

خدائے پاک کی رَحْمت سے انسانوں میں ہر اک سے

فُزوں تر بعد از گُل اَنْبِیا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

ہلاکت خیز طُغیانی ہو یا ہوں موجیں طوفانی

کیوں ڈوبے اپنا بَیڑا ناخدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

بھٹک سکتےنہیں ہم اپنی منزِل ٹھوکر وں میں ہے

نبی کا ہے کرم اور رہنما صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

گناہوں کے مَرض نے نیم جاں ہے کر دیا مجھ کو

طبیب اب بس مِرے تو آپ یا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

نہ گھبراؤ گنہگار وتمھارے حَشْر میں حامی

مُحبِّ شافِعِ روزِ جزا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

نہ ڈر عطّؔارآفت سے خدا کی خاص رَحْمت سے

نبی والی تِرے، مُشْکِل کُشاصِدِّیقِ اکبر ہیں

 

...