Manqabat (Praise of Allah’s friends)  

Bakar Bin Muhammad

جاں بلب ہوں آ مری جاں الغیاث
ہوتے ہیں کچھ اور ساماں الغیاث

درد مندوں کو دوا ملتی نہیں
اے دواے درد منداں الغیاث

جاں سے جاتے ہیں بے چارے غریب
چارہ فرماے غریباں الغیاث

حَد سے گزریں درد کی بے دردیاں
درد سے بے حد ہوں نالاں الغیاث

بے قراری چین لیتی ہی نہیں
اَے قرارِ بے قراراں الغیاث

حسرتیں دل میں بہت بے چین ہیں
گھر ہوا جاتا ہے زنداں الغیاث

خاک ہے پامال میری کُو بہ کُو
اے ہواے کوے جاناں الغیاث

المدد اے زُلفِ سرور المدد
ہوں بلاؤں میں پریشاں الغیاث

دلِ کی اُلجھن دُور کر گیسوے پاک
اے کرم کے سنبلستان الغیاث

اے سرِ پُر نور اے سرِ ّخدا
ہوں سراسیمہ پریشاں الغیاث

غمزدوں کی شام ہے تاریک رات
اے جبیں اے ماہِ تاباں الغیاث

اَبروے شہ کاٹ دے زنجیرِ غم
تیرے صدقے تیرے قرباں الغیاث

دل کے ہر پہلو میں غم کی پھانس ہے
میں فدا مژگانِ جاناں الغیاث

چشمِ رحمت آ گیا آنکھوں میں دم
دیکھ حالِ خستہ حالاں الغیاث

مردمک اے مہر نورِ ذاتِ بحت
ہیں سیہ بختی کے ساماں الغیاث

تیر غم کے دل میں چھد کر رہ گئے
اے نگاہِ مہر جاناں الغیاث

اے کرم کی کان اے گوشِ حضور
سُن لے فریادِ غریباں الغیاث

عَارضِ رنگیں خزاں کو دُور کر
اے جناں آرا گلستاں الغیاث

بینی پُر نور حالِ ما بہ بیں
ناک میں دم ہے مری جاں الغیاث

جاں بلب ہوں جاں بلب پر رحم کر
اے لب اے عیساے دوراں الغیاث

اے تبسم غنچہ ہاے دل کی جاں
کھل چلیں مُرجھائی کلیاں الغیاث

اے دہن اے چشمۂ آبِ حیات
مر مٹے دے آبِ حیواں الغیاث

دُرِّ مقصد کے لیے ہوں غرقِ غم
گوہرِ شادابِ دنداں الغیاث

اے زبانِ پاک کچھ کہہ دے کہ ہو
رد بلاے بے زباناں الغیاث

اے کلام اے راحتِ جانِ کلیم
کلمہ گو ہے غم سے نالاں الغیاث

کامِ شہ اے کام بخشِ کامِ دل
ہوں میں ناکامی سے گریاں الغیاث

چاہِ غم میں ہوں گرفتارِ اَلم
چاہِ یوسف اے زنخداں الغیاث

ریشِ اطہر سنبلِ گلزارِ خلد
ریشِ غم سے ہوں پریشاں الغیاث

اے گلو اے صبح جنت شمع نور
تیِرہ ہے شامِ غریباں الغیاث

غم سے ہوں ہمدوش اے دوش المدد
دوش پر ہے بارِ عصیاں الغیاث

اے بغل اے صبحِ کافورِ بہشت
مہر بر شام غریباں الغیاث

غنچۂ گل عطر دانِ عطر خلد
بوے غم سے ہوں پریشاں الغیاث

بازوے شہ دست گیری کر مری
اے توانِ ناتواناں الغیاث

دستِ اقدس اے مرے نیسانِ جود
غم کے ہاتھوں سے ہوں گریاں الغیاث

اے کفِ دست اے یدِ بیضا کی جاں
تیرہ دل ہوں نور افشاں الغیاث

ہم سیہ ناموں کو اے تحریر دست
تو ہو دستاویز غفراں الغیاث

پھر بہائیں اُنگلیاں اَنہارِ فیض
پیاس سے ہونٹوں پہ ہے جاں الغیاث

بہرِ حق اے ناخن اے عقدہ کشا
مشکلیں ہو جائیں آساں الغیاث

سینۂ پُر نور صدقہ نور کا
بے ضیا سینہ ہے ویراں الغیاث

قلبِ انور تجھ کو سب کی فکر ہے
کر دے بے فکری کے ساماں الغیاث

اے جگر تجھ کو غلاموں کا ہے درد
میرے دُکھ کا بھی ہو درماں الغیاث

اے شکم بھر پیٹ صدقہ نور کا
پیٹ بھر اے کانِ احساں الغیاث

پشتِ والا میری پُشتی پر ہو تو
رُوبرو ہیں غم کے ساماں الغیاث

تیرے صدقے اے کمر بستہ کمر
ٹوٹی کمروں کا ہو درماں الغیاث

مُہر پشتِ پاک میں تجھ پر فدا
دے دے آزادی کا فرماں الغیاث

پاے انور اے سَرفرازی کی جاں
میں شکستہ پا ہوں جاناں الغیاث

نقشِ پا اے نو گل گلزارِ خلد
ہو یہ اُجڑا بَن گلستاں الغیاث

اے سراپا اے سراپا لطفِ حق
ہوں سراپا جرم و عصیاں الغیاث

اے عمامہ دَورِ گردش دُور کر
گرِد پھر پھر کر ہوں قرباں الغیاث

نیچے نیچے دامنوں والی عبا
خوار ہے خاکِ غریباں الغیاث

پڑ گئی شامِ اَلم میرے گلے
جلوۂ صبحِ گریباں الغیاث

کھول مشکل کی گرہ بندِ قبا
بندِ غم میں ہوں پریشاں الغیاث

آستیں نقدِ عطا در آستیں
بے نوا ہیں اَشک ریزاں الغیاث

چاک اے چاکِ جگر کے بخیہ کر
دل ہے غم سے چاک جاناں الغیاث

عیب کھلتے ہیں گدا کے روزِ حشر
دامنِ سلطانِ خوباں الغیاث

دور دامن دور دورہ ہے تیرا
دُور کر دُوری کا دوراں الغیاث

ہوں فسردہ خاطر اے گلگوں قبا
دل کھلا دیں تیری کلیاں الغیاث

دل ہے ٹکڑے ٹکڑے پیوندِ لباس
اے پناہِ خستہ حالاں الغیاث

ہے پھٹے حالوں مرا رختِ عمل
اے لباسِ پاک جاناں الغیاث

نعل شہ عزت ہے میری تیرے ہاتھ
اے وقارِ تاجِ شاہاں الغیاث

اے شراکِ نعلِ پاکِ مصطفےٰ
زیرِ نشتر ہے رگِ جاں الغیاث

شانۂ شہ دل ہے غم سے چاک چاک
اے انیسِ سینہ چاکاں الغیاث

سُرمہ اے چشم وچراغِ کوہِ طور
ہے سیہ شام غریباں الغیاث

ٹوٹتا ہے دم میں ڈورا سانس کا
ریشۂ مسواکِ جاناں الغیاث

آئینہ اے منزلِ انوارِ قدس
تیرہ بختی سے ہوں حیراں الغیاث

سخت دشمن ہے حسنؔ کی تاک میں
المدد محبوبِ یزداں الغیاث

ذوقِ نعت

...

Parey Mujh Per Naa Kuch Aftaad Ya Ghous

پڑے مجھ پر نہ کچھ اُفتاد یا غوث
مدد پر ہو تیری اِمداد یا غوث

اُڑے تیری طرف بعد فنا خاک
نہ ہو مٹی مری برباد یا غوث

مرے دل میں بسیں جلوے تمہارے
یہ ویرانہ بنے بغداد یا غوث

نہ بھولوں بھول کر بھی یاد تیری
نہ یاد آئے کسی کی یاد یا غوث

مُرِیْدِیْ لَا تَخَفْ فرماتے آؤ
بَلاؤں میں ہے یہ ناشاد یا غوث

گلے تک آ گیا سیلاب غم کا
چلا میں آئیے فریاد یا غوث

نشیمن سے اُڑا کر بھی نہ چھوڑا
ابھی ہے گھات میں صیاد یا غوث

خمیدہ سر گرفتارِ قضا ہے
کشیدہ خنجر جلاّد یا غوث

اندھیری رات جنگل میں اکیلا
مدد کا وقت ہے فریاد یا غوث

کھلا دو غنچۂ خاطر کہ تم ہو
بہارِ گلشنِ ایجاد یا غوث

مرے غم کی کہانی آپ سن لیں
کہوں میں کس سے یہ رُوداد یا غوث

رہوں آزادِ قیدِ عشق کب تک
کرو اِس قید سے آزاد یا غوث

کرو گے کب تک اچھا مجھ برے کو
مرے حق میں ہے کیا اِرشاد یا غوث

غمِ دنیا غمِ قبر و غمِ حشر
خدارا کر دو مجھ کو شاد یا غوث

حسنؔ منگتا ہے دے دے بھیک داتا
رہے یہ راج پاٹ آباد یا غوث

ذوقِ نعت

...

Ayan Hai Shan Aur Azmat Zia Uddin Madani Ki


لبوں پر ہے رواں مدحت ضیاءُ الدین مدنی کی
ہے دل میں جاگزیں الفت ضیاءُ الدین مدنی کی

خدا کی یہ نوازش ہے، نبی کی خاص رحمت ہے
بقیع میں بن گئی تربت ضیاءُ الدین مدنی کی

لقب محبوبِ محبوبِ الٰہ العالمین اُن کا
عیاں ہے شان اور عظمت ضیاءُ الدین مدنی کی

نظر والے یہ کہتے ہیں یہی قطبِ مدینہ ہے
سراپا آئینہ سیرت ضیاءُ الدین مدنی کی

خلافت اعلیٰ حضرت سے انھیں حاصل ہے جب لوگو
جہاں میں چھائی ہے نسبت،ضیاءُ الدین مدنی کی

بُھلا سکتی نہیں تاریخ ان کے کارناموں کو
رہے گی حشر تک شہرت، ضیاءُ الدین مدنی کی

حفؔیظ! اب تو دعا ہے کہ مجھے بھی خواب میں اک دن
نظر آجائے وہ صورت، ضیاءُ الدین مدنی کی

...

Maah o Man Se Bachaey Aal e Rasool


ما و مَن سے بچائے آلِ رسول
مِن و عَن ہوں رضائے آلِ رسول

حق میں مجھ کو گُمائے آلِ رسول
مجھ کو حق سے ملائے آلِ رسول

میری آنکھوں میں آئے آلِ رسول
میرے دل میں سمائے آلِ رسول

تو ہی جانے فدائے آلِ رسول
قدرِ سُمْوِ سمائے آلِ رسول

سات اَفلاک زینے پھر کرسی
عرشِ رِفعت سرائے آلِ رسول

چاندنا چاند کا مدینے کے
لُمعۂ حق نُمائے آلِ رسول

ہے ارادہ تِرا ارادۂ حق
حق کی مرضی رضائے آلِ رسول

بعد جس کے نہ ہوگا فقر کبھی
وہ غنا ہے غنائے آلِ رسول

صِبْغَۃُاللہ کی چڑھی اپنی
حق کی رنگت رچائے آلِ رسول

اس کی نیرنگیوں میں ہوں یک رنگ
رنگِ وحدت جمائے آلِ رسول

ہو خودی دور اور خدا باقی
ہو خدا ہی خدائے آلِ رسول

مَوت سے پہلے مجھ کو مَوت آئے
میری ہستی مٹائے آلِ رسول

یوں مٹوں میں کہ مجھ میں مٹ جائے
مجھ کو مجھ سے گُمائے آلِ رسول

جیتے جی جی میں مَیں گزر جاؤں
پھول میری اٹھائے آلِ رسول

بیڑی کٹ جائے ہر تشخص کی
قید سے یوں چھڑائے آلِ رسول

یہ خودی بھی فدائے دعویٰ ہے
کر دے بے خود خدائے آلِ رسول

صورتِ شیخ کا تصوّر ہو
ہوں میں مَحوِ لقائے آلِ رسول

سر تا پایَم فدا سر و پایَت
وَہ چہ نور و ضیائے آلِ رسول

دل و جانم فدا سَرَت گَردَم
لُمعۂ حق نمائے آلِ رسول

بھر دے قطرے کے سینے میں قلزم
نم میں یم کو سمائے آلِ رسول

حَقُّہٗ حق ہو ظاہر و باطن
حق کے جلوے دکھائے آلِ رسول

دل میں حق حق زباں پہ حق حق ہو
دید حق کی کرائے آلِ رسول

حق کا دیوانہ ہادیِ حق سے
حق کی دھومیں مچائے آلِ رسول

فانی ہو جاؤں شیخ میں اپنے
ہو بہ ہو ہو ادائے آلِ رسول

فَانِیْ فِی اللہ بَاقِیْ بِاللہ ہوں
تو ہی تو ہے خدائے آلِ رسول

یہ تَقَرُّبْ ملے نوافل سے
ہوں حبیبِ فدائے آلِ رسول

ہاتھ پاؤں ہو آنکھ کان ہو وہ
عقل بھی ہو فدائے آلِ رسول

میرے اَعضا بنے مِرا مولیٰ
مجھ پہ پیار آئے، آئے آلِ رسول

اس سے دیکھوں سنوں چلوں پکڑوں
مَولیٰ دے بندہ پائے آلِ رسول

میری ہستی حجاب ہے میرا
تو ہی پردہ اٹھائے آلِ رسول

قرب حاصل ہو پھر فرائض کا
صوفی کامل بنائے آلِ رسول

مُلکِ لَاہُوْت سے اِلَی النَّاسُوْتْ
ہونے رجعت نہ پائے آلِ رسول

سیرِ فِی اللہ اور مِنَ اللہ ہو
درجے سب طے کرائے آلِ رسول

پھر اِلَی اللہ فنائے مطلق سے
پورا سالک بنائے آلِ رسول

قیدِ نَاسُوْتْ سے رہائی ہو
پھیرے میرے بڑھائے آلِ رسول

شاخِ لَاھُوْتْ پر بسیرا ہو
ہو یہ طائر ہُمائے آلِ رسول

بیاض پاک

...

Ya Ilahi Bara e Aal e Rasool


یا الٰہی! برائے آلِ رسول
دل میں بھر دے وِلائے آلِ رسول

سوکھے دھانوں پہ بھی برس جائے
ابرِ جُود و سخائے آلِ رسول

سر سے قربان تجھ پہ آنکھوں سے
آنکھیں سر سے فدائے آلِ رسول

سُحقِ نعلین رگڑا آنکھوں کا
طوطیا خاکپائے آلِ رسول

میری بگڑی بنی ہے تیرے ہاتھ
تو ہی بگڑی بنائے آلِ رسول

تجھ سے جس کو ملا ملے پیارے
تجھ سے جو پائے پائے آلِ رسول

تیزیِ مہرِ حشر کا کیا خوف
میں ہوں زیرِ لِوائے آلِ رسول

بادشاہ ہیں گدا تِرے در کے
ہوں گدائے گدائے آلِ رسول

تاج والوں کا تاجِ عزّت ہے
کہنہ نعلینِ پائے آلِ رسول

ٹھنڈی ٹھنڈی نسیمِ مارہرہ
دل کی کلیاں کھلائے آلِ رسول

بھینی بھینی سی مست خوشبو سے
دل کی کلیاں بَسائے آلِ رسول

طِیبِ طَیبہ میں ہیں بسی کلیاں
مہکی گُل گوں قَبائے آلِ رسول

بھولے بھٹکوں کا خضر ہی تو ہے
راستے پر لگائے آلِ رسول

سبز گنبد پہ اڑ کے جا بیٹھوں
شوق کے پَر لگائے آلِ رسول

خاک میری اڑے جو بعدِ فنا
مدنی ہو ہوائے آلِ رسول

اب تو گَدیَہ گَروں کی چاندی ہے
ہیں کھرے سکّہ ہائے آلِ رسول

خُم سے آسن جمائے در پہ گدا
کوئی پیالہ پلائے آلِ رسول

بیاضِ پاک

...

Akhund Mulla Muhammad Jamaluddin

اسیروں کے مشکل کشا غوث اعظم
فقیروں کے حاجت رَوا غوث اعظم

گھرا ہے بَلاؤں میں بندہ تمہارا
مدد کے لیے آؤ یا غوث اعظم

ترے ہاتھ میں ہاتھ میں نے دیا ہے
ترے ہاتھ ہے لاج یا غوث اعظم

مریدوں کو خطرہ نہیں بحرِ غم سے
کہ بیڑے کے ہیں ناخدا غوث اعظم

تمھیں دُکھ سنو اپنے آفت زدوں کا
تمھیں درد کی دو دوا غوث اعظم

بھنور میں پھنسا ہے ہمارا سفینہ
بچا غوث اعظم بچا غوث اعظم

جو دکھ بھر رہا ہوں جو غم سہ رہا ہوں
کہوں کس سے تیرے سوا غوث اعظم

زمانے کے دُکھ درد کی رنج و غم کی
ترے ہاتھ میں ہے دوا غوث اعظم

اگر سلطنت کی ہوس ہو فقیرو
کہو شیئاً ﷲیا غوث اعظم

نکالا ہے پہلے تو ڈوبے ہوؤں کو
اور اب ڈوبتوں کو بچا غوث اعظم

جسے خلق کہتی ہے پیارا خدا کا
اُسی کا ہے تو لاڈلا غوث اعظم

کیا غورجب گیارھویں بارھویں میں
معمہ یہ ہم پر کھلا غوث اعظم

تمھیں وصلِ بے فصل ہے شاہِ دیں سے
دیا حق نے یہ مرتبہ غوث اعظم

پھنسا ہے تباہی میں بیڑا ہمارا
سہارا لگا دو ذرا غوث اعظم

مشائخ جہاں آئیں بہرِ گدائی
وہ ہے تیری دولت سرا غوث اعظم

مری مشکلوں کو بھی آسان کیجے
کہ ہیں آپ مشکل کشا غوث اعظم

وہاں سرجھکاتے ہیں سب اُونچے اُونچے
جہاں ہے ترا نقشِ پا غوث اعظم

قسم ہے کہ مشکل کو مشکل نہ پایا
کہا ہم نے جس وقت یا غوث اعظم

مجھے پھیر میں نفسِ کافر نے ڈالا
بتا جایئے راستہ غوث اعظم

کھلا دے جو مرجھائی کلیاں دلوں کی
چلا کوئی ایسی ہوا غوث اعظم

مجھے اپنی اُلفت میں ایسا گما دے
نہ پاؤں پھر اپنا پتا غوث اعظم

بچا لے غلاموں کو مجبوریوں سے
کہ تو عبدِ قادِر ہے یا غوث اعظم

دکھا دے ذرا مہر رُخ کی تجلی
کہ چھائی ہے غم کی گھٹا غوث اعظم

گرانے لگی ہے مجھے لغزشِ َپا
سنبھالو ضعیفوں کو یا غوث اعظم

لپٹ جائیں دامن سے اُس کے ہزاروں
پکڑ لے جو دامن ترا غوث اعظم

سروں پہ جسے لیتے ہیں تاج والے
تمہارا قدم ہے وہ یا غوث اعظم

دوائے نگاہے عطائے سخائے
کہ شد دردِ ما لا دوا یا غوث اعظم

ز ہر رو و ہر راہ رویم بگرداں
سوے خویش را ہم نما غوث اعظم

اَسیر کمند ہوا یم کریما
بہ بخشائے بر حالِ ما غوث اعظم

فقیر تو چشمِ کرم از تو دارد
نگاہے بحالِ گدا غوث اعظم

گدایم مگر از گدایانِ شاہے
کہ گویندش اہل صفا غوث اعظم

کمر بست بر خونِ من نفسِ قاتل
اَغِثنی برائے خدا غوث اعظم

اَدھر میں پیا موری ڈولت ہے نیّا
کہوں کا سے اپنی بپا غوث اعظم

بپت میں کٹی موری سگری عمریا
کرو مو پہ اپنی دَیاَ غوث اعظم

بھیو دو جو بیکنٹھ بگداد توسے
کہو موری نگری بھی آ غوث اعظم

کہے کس سے جا کر حسنؔ اپنے دل کی
سنے کون تیرے سوا غوث اعظم

ذوقِ نعت

...

Sun lo Meri Iltija Achey Miyan

سن لو میری اِلتجا اچھے میاں
میں تصدق میں فدا اَچھے میاں

اب کمی کیا ہے خدا دے بندہ لے
میں گدا تم بادشا اچھے میاں

دین و دنیا میں بہت اچھا رہا
جو تمہارا ہو گیا اچھے میاں

اس بُرے کو آپ اچھا کیجیے
آپ اچھے میں بُرا اچھے میاں

ایسے اچھے کا بُرا ہوں میں بُرا
جن کو اچھوں نے کہا اچھے میاں

میں حوالے کر چکا ہوں آپ کے
اپنا سب اچھا بُرا اچھے میاں

آپ جانیں مجھ کو اِس کی فکر کیا
میں بُرا ہوں یا بھلا اچھے میاں

مجھ بُرے کے کیسے اچھے ہیں نصیب
میں بُرا ہوں آپ کا اچھے میاں

اپنے منگتا کو بُلا کر بھیک دی
اے میں قربانِ عطا اچھے میاں

مشکلیں آسان فرما دیجیے
اے مرے مشکل کشا اچھے میاں

میری جھولی بھر دو دستِ فیض سے
حاضرِ دَر ہے گدا اچھے میاں

دَم قدم کی خیر منگتا ہوں ترا
دَم قدم کی خیر لا اچھے میاں

جاں بلب ہوں دردِ عصیاں سے حضور
جاں بلب کو دو شفا اچھے میاں

دشمنوں کی ہے چڑھائی الغیاث
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

نفسِ سرکش دَر پئے آزار ہے
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

شام ہے نزدیک صحرا ہولناک
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

نزع کی تکلیف اِغواے عدو
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

وہ سوالِ قبر وہ شکلیں مہیب
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

پرسشِ اعمال اور مجھ سا اثیم
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

بارِ عصیاں سر پہ رعشہ پاؤں میں
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

خالی ہاتھ آیا بھرے بازار میں
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

مجرمِ ناکارہ و دیوانِ عدل
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

پوچھتے ہیں کیا کہا تھا کیا کیا
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

پا شکستہ اور عبورِ پل صراط
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

خائن و خاطی سے لیتے ہیں حساب
ہے مدد کا وقت یا اچھے میاں

بھول جاؤں میں نہ سیدھی راہ کو
میرے اچھے رہنما اچھے میاں

تم مجھے اپنا بنا لو بہرِ غوث
میں تمہارا ہو چکا اچھے میاں

کون دے مجھ کو مرادیں آپ دیں
میں ہوں کس کا آپ کا اچھے میاں

یہ گھٹائیں غم کی یہ روزِ سیاہ
مہر فرما مہ لقا اچھے میاں

احمدِ نوری کا صدقہ ہر جگہ
منہ اُجالا ہو مرا اچھے میاں

آنکھ نیچی دونوں عالم میں نہ ہو
بول بولا ہو مرا اچھے میاں

میرے بھائی جن کو کہتے ہیں رضاؔ
جو ہیں اِس دَر کے گدا اچھے میاں

اِن کی منہ مانگی مرادیں ہوں حصول
آپ فرمائیں عطا اچھے میاں

عمر بھر میں اِن کے سایہ میں رہوں
اِن پہ سایہ آپ کا اچھے میاں

مجھ کو میرے بھائیوں کو حشر تک
ہو نہ غم کا سامنا اچھے میاں

مجھ پہ میرے بھائیوں پہ ہر گھڑی
ہو کرم سرکار کا اچھے میاں

مجھ سے میرے بھائیوں سے دُور ہو
دُکھ مرض ہر قسم کا اچھے میاں

میری میرے بھائیوں کی حاجتیں
فضل سے کیجے رَوا اچھے میاں

ہم غلاموں کے جو ہیں لخت جگر
خوش رہیں سب دائما اچھے میاں

پنجتن کا سایہ پانچوں پر رہے
اور ہو فضل خدا اچھے میاں

سب عزیزوں سب قریبوں پر رہے
سایۂ فضل و عطا اچھے میاں

غوثِ اعظم قطبِ عالم کے لیے
رَد نہ ہو میری دعا اچھے میاں

ہو حسنؔ سرکارِ والا کا حسنؔ
کیجیے ایسی عطا اچھے میاں!

ذوقِ نعت

...

Baharon per hai Aaraishain Gulzar e Jannat Ki

بہاروں پر ہیں آج آرائشیں گلزارِ جنت کی
سواری آنے والی ہے شہیدانِ محبت کی

کھلے ہیں گل بہاروں پر ہے پھلواری جراحت کی
فضا ہر زخم کی دامن سے وابستہ ہے جنت کی

گلا کٹوا کے بیڑی کاٹنے آئے ہیں اُمت کی
کوئی تقدیر تو دیکھے اَسیرانِ محبت کی

شہیدِ ناز کی تفریح زخموں سے نہ کیوں کر ہو
ہوائیں آتی ہیں ان کھڑکیوں سے باغِ جنت کی

کرم والوں نے دَر کھولا تو رحمت نے سماں باندھا
کمر باندھی تو قسمت کھول دی فضل شہادت کی

علی کے پیارے خاتونِ قیامت کے جگر پارے
زمیں سے آسماں تک دُھوم ہے اِن کی سیادت کی

زمین کربلا پر آج مجمع ہے حسینوں کا
جمی ہے انجمن روشن ہیں شمعیں نور و ظلمت کی

یہ وہ شمعیں نہیں جو پھونک دیں اپنے فدائی کو
یہ وہ شمعیں نہیں رو کر جو کاٹیں رات آفت کی

یہ وہ شمعیں ہیں جن سے جانِ تازہ پائیں پروانے
یہ وہ شمعیں ہیں جو ہنس کر گزاریں شب مصیبت کی

یہ وہ شمعیں نہیں جن سے فقط اک گھر منور ہو
یہ وہ شمعیں ہیں جن سے رُوح ہو کافور ظلمت کی

دلِ حور و ملائک رہ گیا حیرت زدہ ہو کر
کہ بزم گل رُخاں میں لے بلائیں کس کی صورت کی

جدا ہوتی ہیں جانیں جسم سے جاناں سے ملتے ہیں
ہوئی ہے کربلا میں گرم مجلس وصل و فرقت کی

اسی منظر پہ ہر جانب سے لاکھوں کی نگاہیں ہیں
اسی عالم کو آنکھیں تک رہی ہیں ساری خلقت کی

ہوا چھڑکاؤ پانی کی جگہ اشکِ یتیماں سے
بجائے فرش آنکھیں بچھ گئیں اہلِ بصیرت کی

ہواے یار نے پنکھے بنائے پر فرشتوں کے
سبیلیں رکھی ہیں دیدار نے خود اپنے شربت کی

اُدھر افلاک سے لائے فرشتے ہار رحمت کے
ادھر ساغر لیے حوریں چلی آتی ہیں جنت کی

سجے ہیں زخم کے پھولوں سے وہ رنگین گلدستے
بہارِ خوشنمائی پر ہے صدقے رُوح جنت کی

ہوائیں گلشن فردوس سے بس بس کر آتی ہیں
نرالی عطر میں ڈوبی ہوئی ہے رُوح نکہت کی

دلِ پُر سوز کے سُلگے اگر سوز ایسی حرکت سے
کہ پہنچی عرش و طیبہ تک لَپٹ سوزِ محبت کی

ادھر چلمن اُٹھی حسنِ ازل کے پاک جلوؤں سے
ادھر چمکی تجلی بدرِ تابانِ رسالت کی

زمین کربلا پر آج ایسا حشر برپا ہے
کہ کھنچ کھنچ کر مٹی جاتی ہیں تصویریں قیامت کی

گھٹائیں مصطفیٰ کے چاند پر گھر گھر کر آئی ہیں
سیہ کارانِ اُمت تِیرہ بختانِ شقاوت کی

یہ کس کے خون کے پیاسے ہیں اُس کے خون کے پیاسے
بجھے گی پیاس جس سے تشنہ کامانِ قیامت کی

اکیلے پر ہزاروں کے ہزاروں وار چلتے ہیں
مٹا دی دین کے ہمراہ عزت شرم و غیرت کی

مگر شیر خدا کا شیر جب بپھرا غضب آیا
پَرے ٹوٹے نظر آنے لگی صورت ہزیمت کی

کہا یہ بوسہ دے کر ہاتھ پر جوشِ دلیری نے
بہادر آج سے کھائیں گے قسمیں اِس شجاعت کی

تصدق ہو گئی جانِ شجاعت سچے تیور کے
فدا شیرانہ حملوں کی اَدا پر رُوح جرأت کی

نہ ہوتے گر حسین ابن علی اس پیاس کے بھوکے
نکل آتی زمین کربلا سے نہر جنت کی

مگر مقصود تھا پیاسا گلا ہی اُن کو کٹوانا
کہ خواہش پیاس سے بڑھتی رہے رُؤیت کے شربت کی

شہید ناز رکھ دیتا ہے گردن آبِ خنجر پر
جو موجیں باڑ پر آ جاتی ہیں دریاے اُلفت کی

یہ وقتِ زخم نکلا خوں اچھل کر جسمِ اطہر سے
کہ روشن ہو گئی مشعل شبستانِ محبت کی

سرِ بے تن تن آسانی کو شہر طیبہ میں پہنچا
تنِ بے سر کو سرداری ملی مُلکِ شہادت کی

حسنؔ سُنّی ہے پھر افراط و تفریط اِس سے کیوں کر ہو
اَدب کے ساتھ رہتی ہے روش اربابِ سُنت کی

ذوقِ نعت

...

Hoa Houn Daad e Sitam Ko Main Hazir e Darbaar

ہوا ہوں دادِ ستم کو میں حاضرِ دربار
گواہ ہیں دلِ محزون و چشمِ دریا بار
طرح طرح سے ستاتا ہے زمرۂ اشرار
بدیع بہر خدا حرمتِ شہِ ابرار
مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار

اِدھر اقارب عقارب عدو اجانب و خویش
اِدھر ہوں جوشِ معاصی کے ہاتھ سے دل ریش
بیاں میں کس سے کروں ہیں جو آفتیں در پیش
پھنسا ہے سخت بلاؤں میں یہ عقیدت کیش
مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار

نہ ہوں میں طالبِ افسر نہ سائل دیہیم
کہ سنگ منزلِ مقصد ہے خواہش زر و سیم
کیا ہے تم کو خدا نے کریم ابنِ کریم
فقط یہی ہے شہا آرزوے عبد اثیم
مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار

ہوا ہے خنجر افکار سے جگر گھائل
نفس نفس ہے عیاں دم شماریِ بسمل
مجھے ہو مرحمت اب داروے جراحتِ دل
نہ خالی ہاتھ پھرے آستاں سے یہ سائل
مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار

تمہارے وصف و ثنا کس طرح سے ہوں مرقوم
کہ شانِ ارفع و اعلیٰ کسے نہیں معلوم
ہے زیرِ تیغِ الم مجھ غریب کا حلقوم
ہوئی ہے دل کی طرف یورشِ سپاہِ ہموم
مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار

ہوا ہے بندہ گرفتار پنجۂ صیاد
ہیں ہر گھڑی ستم ایجاد سے ستم ایجاد
حضور پڑتی ہے ہر روز اک نئی اُفتاد
تمہارے دَر پہ میں لایا ہوں جور کی فریاد
مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار

تمام ذرّوں پہ کاالشمس ہیں یہ جود و نوال
فقیر خستہ جگر کا بھی رد نہ کیجے سوال
حسنؔ ہوں نام کو پر ہوں میں سخت بد افعال
عطا ہو مجھ کو بھی اے شاہ جنسِ حسنِ مآل
مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار

ذوقِ نعت

...