Manqabat of Syed Aal e Rasool

خوشا دلے کہ دہندش ولائے آلِ رسول
خوشا سَرے کہ کُنِنْدَش فدائے آلِ رسول

گناہِ بندہ بِبخش اے خدائے آلِ رسول
برائے آلِ رسول از برائے آلِ رسول

ہزار دُرجِ سعادت بر آرد از صدفے
بہاے ہر گہرِ بے بہائے آلِ رسول

سیہ سَپید نہ شد گر رشید مصرش داد
سیہ سپید کہ سازد عطائے آلِ رسول

اِذَ رُؤُا ذُکِرَ اللہ معائنہ بینی!
مَن و خدائے من آنست ادائے آلِ رسول

خبر دَہد زِ تگِ لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللہ
فنائے آلِ رسول و بقائے آلِ رسول

ہزار مِہر پَرَد در ہوائے او چو ہَبا
بروزَنے کہ درخشد ضیائے آلِ رسول

نصیب پست نشیناں بلندیست ایں جا
تواضع ست دُرِ مُرتقائے آلِ رسول

برآ بہ چرخِ برین و ببیں ستانۂ او
گرا بہ خاک و بیا بر سمائے آلِ رسول

قبائے شہ بگلیمِ سیاہ خود نخرد
سیہ گلیم نباشد گدائے آلِ رسول

دوائے تلخ مَخور شہد نوش و مژدہ نیوش
۱بیا مریض بَدارُ الشّفائے آلِ رسول

ہمیں نہ از سرِ افسر کہ ہم زِ سر برخاست
نشست ہر کہ بفرقش ہمائے آلِ رسول

بسخر و طعنۂ سختی زند بعارضِ گل
بسنگِ صخرہ و زِ دگر صبائے آلِ رسول

دِہد زِ باغِ منیٰ غنچہ ہائے زر بہ گرہ
دمِ سوالِ حیا و غنائے آلِ رسول

ز چرخ کانِ زرِ شرقی، مغربی آرند
بدرد مس بمسِ کیمیائے آلِ رسول

جرس بصلصلہ اش آں چہ گفت راہی را
ہماں بسلسلہ آرد ورائے آلِ رسول

رسول داں شوی از نامِ او نمی بینی
دو حرفِ معرفہ در ابتدائے آلِ رسول

بخدمتش نخرد باج وتاج رنگ و فرنگ
سپید بخت سیاہِ سرائے آلِ رسول

اگر شب است و خطر سخت و رہ نمی دانی
ِببند چشم و بیا بر قفائے آلِ رسول

زِ سر نہند کلاہِ غرور مدّعیاں
بجلوۂ مدد اے کفشِ پائے آلِ رسول

ہزار جامۂ سالوس را کتانی دِہ
بتاب اے مہِ جیبِ قبائے آلِ رسول

مَرو بمیکدہ کانجا سیاہ کارانند
بیا بخانقہِ نورزائے آلِ رسول

مَرو بمجلسِ فسق و فجورِ شیّاداں
بیا بانجمنِ اتّقائے آلِ رسول

مَرو بدامگہِ ایں دروغ بافاں ہیچ
بیا بجلوہ گہِ دل کشائے آلِ رسول

ازاں بانجمنِ پاک سبز پوشاں رفت
کہ سبز بود دراں بزم جائے آلِ رسول

شکست شیشہ بہجر و پری بشیشہ ہنوز
زِ دل نمی رود آں جلوہ ہائے آلِ رسول

شہیدِ عشق نمیرد کہ جاں بجاناں داد
تو مُردی ایکہ جدائی زِ پائے آلِ رسول

بگو کہ وائے من و وائے مردہ ماندنِ من
منال ہر زہ کہ ہیہات وائے آلِ رسول

کہ می بُرد زِ مریضانِ تلخ کام نیاز
بعہد شہد فروشِ بقائے آلِ رسول

صبا سلامِ اسیرانِ بستہ بال رساں
بطائرانِ ہوا و فضائے آلِ رسول

خطا مکن دلکا؟ پردہ ایست دوری نیست
بگوش می خورد اَکنوں صدائے آلِ رسول

مگو کہ دیدہ گری و غبار دیدہ بخند
بکارِ تُست کنوں توتیائے آلِ رسول

مپیچ در غمِ عیّارگانِ ذنب شعار
اگر ادب نکنند از برائے آلِ رسول

ہر آں کہ نِکْث کند نکث بہرِ نفسِ وَیست
غنی ست حضرتِ چرخ اعتلائے آلِ رسول

سپاس کن کہ بپاس و سپاسِ بد منشاں
نیاز و ناز نَدارد ثنائے آلِ رسول

نہ سگ بَشور و نہ شپّر بخامُشی کاہد
زِ قدرِ بدر و ضیائے ذکائے آلِ رسول

تواضعِ شہِ مسکیں نواز را نازم
کہ ہمچو بندہ کند بوس پائے آلِ رسول

منم امیرِ جہانگیر کج کلہ یعنی
کمینہ بندہ ومسکیں گدائے آلِ رسول

اگر مثالِ خلافت دہد فقیرے را
عجب مَدار زِ فیض و سخائے آلِ رسول

مَگیر خردہ کہ آں کس نہ اہلِ ایں کاراست
کہ داند اہلِ نمودن عطائے آلِ رسول

’’ببیں تفاوُتِ رہ از کجاست تا بکجا‘‘
تَبَارَکَ اللہ ما و ثنائے آلِ رسول

مَرا زِ نسبتِ ملک است امید آں کہ بہ حشر
ندا کنند بیا اے رضؔائے آلِ رسول

حدائقِ بخشش


All Related

Comments