جدا باطل کو حق سے کر دیا فاروقِ اعظم ﷜نے

جدا باطل کو حق سے کر دیا فاروقِ اعظم ﷜نے

جدا باطل کو حق سے کر دیا فاروقِ اعظمنے

علم  اسلام  کا  اونچا  کیا   فاروقِ اعظمنے

 

انہی  کے  نام  کی تاثیر تھی  یا  خط کی ہیبت تھی

رُکے دریا کو جاری کر دیا فاروقِ اعظم ﷜نے

 

جدا کیسے کرو گے  حشرتک  ان کو نبی سے تم

لیا پہلوئے محبوب ِ خدا فاروقِ اعظم ﷜نے

 

عمر   کو   دیکھ   کر   شیطان  خود  رستہ  بدل   لیتا

وہ پایا حق سے رعب و دبدبہ فاروق اعظم ﷜نے

 

نبی  کے  بعد  گر  کوئی نبی ہوتے عمر ہوتے

نبی سے پا لیا یہ مرتبہ فاروقِ اعظم ﷜نے

 

دعائے مصطفےٰ سے  دولتِ ایماں ملی ان کو

ملا کس کو جو رتبہ لے لیا فاروق اعظم ﷜نے

 

مصفّا   آئینۂِ   قلب   کیوں   نہ  ہو   اُجاگؔر   کا

اسے بھی اپنے دامن میں لیا فاروق اعظم﷜نے

Comments