Jobano Par Hai Bahar e Chaman

جوبنوں پر ہے بہارِ چمن آرائیِ دوست
خلد کا نام نہ لے بلبلِ شیدائیِ دوست

تھک کے بیٹھے تو درِ دل پہ تمنّائیِ دوست
کون سے گھر کا اُجالا نہیں زیبائیِ دوست

عرصۂ حشر کجا موقفِ محمود کجا
ساز ہنگاموں سے رکھتی نہیں یکتائیِ دوست

مہر کس منھ سے جلو داریِ جاناں کرتا
سائے کے نام سے بیزار ہے یکتائیِ دوست

مرنے والوں کو یہاں ملتی ہے عمرِ جاوید
زندہ چھوڑے گی کسی کو نہ مسیحائیِ دوست

ان کو یکتا کیا اور خلق بنائی یعنی
انجمن کرکے تماشا کریں تنہائیِ دوست

کعبہ و عرش میں کہرام ہے نا کامی کا
آہ کس بزم میں ہے جلوۂ یکتائیِ دوست

حُسنِ بے پردہ کے پردے نے مٹا رکھا ہے
ڈھونڈنے جائیں کہاں جلوۂ ہرجائیِ دوست

شوق روکے نہ رُکے پاؤں اٹھائے نہ اُٹھے
کیسی مشکل میں ہیں اللہ تمنّائیِ دوست

شرم سے جھکتی ہے محراب کہ ساجد ہیں حضور
سجدہ کرواتی ہے کعبہ سے جبیں سائیِ دوست

تاج والوں کا یہاں خاک پہ ماتھا دیکھا
سائے داراؤں کی دارا ہوئی دارائیِ دوست

طُور پر کوئی کوئی چرخ پہ یہ عرش سے پار
سارے بالاؤں پہ بالا رہی بالائیِ دوست

اَنْتَ فِیْہِمْ نے عدو کو بھی لیا دامن میں
عیشِ جاوید مبارک تجھے شیدائیِ دوست

رنج اَعدا کا رؔضا چارہ ہی کیا ہے جب انھیں
آپ گستاخ رکھے حلم و شکیبائیِ دوست

حدائقِ بخشش

 


All Related

Comments