Istighatha (asking for help)  

Hazrat Shah Kamal Kathreli


اے ساقیِ مہ لقا کہاں ہے
مے خوار کے دل رُبا کہاں ہے

بڑھ آئی ہیں لب تک آرزوئیں
آنکھوں کو ہیں مَے کی جستجوئیں

محتاج کو بھی کوئی پیالہ
داتا کرے تیرا بول بالا

ہیں آج بڑھے ہوئے اِرادے
لا منہ سے کوئی سبُو لگا دے

سر میں ہیں خمار سے جو چکر
پھرتا ہے نظر میں دَورِ ساغر

دے مجھ کو وہ ساغرِ لبالب
بس جائیں مہک سے جان و قالب

بُو زخم جگر کے دیں جو انگور
ہوں اہلِ زمانہ نشہ میں چُور

کیف آنکھوں میں دل میں نور آئیں
لہراتے ہوئے سُرور آئیں

جوبن پہ اَداے بے خودی ہو
بے ہوش فداے بے خودی ہو

کچھ ابرو ہوا پہ تو نظر کر
ہاں کشتیِ مے کا کھول لنگر

مے خوار ہیں بے قرار ساقی
بیڑے کو لگا دے پار ساقی

مے تاک رہے ہیں دیدۂ وا
دیوانہ ہے دل اسی پری کا

منہ شیشوں کے جلد کھول ساقی
قُلْقُل کے سنا دے بول ساقی

یہ بات ہے سخت حیرت انگیز
پُنْبَہ سے رُکی ہے آتشِ تیز

جب تک نہ وہاں شیشہ ہو وا
ہو وصف شراب سے خبر کیا

تا مرد سخن نگفتہ باشد
عیب و ہنرش نہفتہ باشد

کہتی ہیں اُٹھی ہوئی اُمنگیں
پھر لطف دکھا چلیں ترنگیں

پھر جوش پر آئے کیف مستی
پھر آنکھ سے ٹپکے مے پرستی

خواہش ہے مزاج آرزو کی
سنتا ہی رہوں ڈھلک سبُو کی

گہرا سا کوئی مجھے پلا جام
کہتی ہے ہوس کہ جام لا جام

دے چھانٹ کے مجھ کو وہ پیالی
لے آئے جو چہرے پر بحالی

ہوں دل میں تو نور کی ادائیں
آنکھوں میں سُرور کی ادائیں

ہو لطف فزا یہ جوشِ ساغر
دل چھین لے لب سے لب ملا کر

کچھ لغزشِ پا جو سر اٹھائے
بہکانے کو پھر نہ ہوش آئے

لطف آئے تو ہوش کو گمائیں
جب ہوش گئے تو لطف پائیں

یہ مے ہے میری کھنچی ہوئی جاں
یا رہ گئے خون ہو کے اَرماں

یہ بادہ ہے دل رُباے میکش
دردِ میکش دواے میکش

ہے تیز بہت مجھے یہ ڈر ہے
اُڑتی نہ پھرے کہیں بطِ مے

شیشہ میں ہے مے پری کی صورت
یا دل میں بھرا ہے خونِ حسرت

ساغر ہیں بشکل چشم میگوں
شیشہ ہے کسی کا قلب پُر خوں

مے خوار کی آرزو یہ مے ہے
مشتاق کی آبرو یہ مے ہے

ہو آتش تر جو مہر گستر
دم بھر میں ہو خشک دامنِ تر

ٹھنڈے ہیں اس آگ سے کلیجے
گرمی پہ ہیں مے کشوں کے جلسے

بہکا ہے کہاں دماغِ مُخْتَلْ
پہنچا ہے کدھر خیالِ اَسفل

یہ بادہ ہے آبروے کوثر
نتھرا ہوا آب جوے کوثر

یہ پھول ہے عطر باغِ رضواں
ایمان ہے رنگ، بُو ہے عرفاں

اس مے میں نہیں ہے دُرو کا نام
کیوں اہلِ صفا نہ ہوں مے آشام

جو رِند ہیں اس کے پارسا ہیں
بہکے ہوئے دل کے رہ نما ہیں

زاہد کی نثار اس پہ جاں ہے
واعظ بھی اسی سے تر زباں ہے

جام آنکھیں اُن آنکھوں میں مروّت
شیشے ہیں دل، اُن دلوں میں ہمت

ان شیشوں سے زندہ قلب مردم
قُلْقُل سے عیاں اداے قم قم

اللہ کا حکم وَ اشْرَبُوْا ہے
بے جا ہے اگر پئیں نہ یہ مے

اے ساقیِ با خبر خدارا
لا دے کوئی جام پیارا پیارا

جوبن ہے بہارِ جاں فزا پر
بادل کا مزاج ہے ہوا پر

ہر پھول دلہن بنا ہوا ہے
نکھرے ہوئے حسن میں سجا ہے

مستانہ گھٹائیں جھومتی ہیں
ہر سمت ہوائیں گھومتی ہیں

پڑتی ہے پھوہار پیاری پیاری
نہریں ہیں لسانِ فیضِ جاری

بلبل ہے فداے خندۂ گل
بھاتی ہے اداے خندۂ گل

ظاہر میں بہارِ دل رُبا ہے
باطن میں کچھ اور گل کھلا ہے

غنچوں کے چٹکنے سے اظہار
کھلنے لگے پردہاے اسرار

ہے سرو ’’الف‘‘ کی شکل بالکل
اور صورتِ ’’لام‘ زلفِ سنبل

تشدید‘عیاں ہے کنگھیوں سے
نرگس کی بیاض چشم ہے ’ھے

صانع کی یہ صنع ہے نمودار
اللّٰہ‘ لکھا بخط گل زار

خوشبو میں بسا ہے خلعتِ گل
دل جُو ہیں ترانہاے گل

ہے آفت ہوش موسم گل
پھر اس پہ یہ صبح کا تجمل

تاروں کا فلک پہ جھلملانا
شمعوں کا سپید منہ دکھانا

مرغانِ چمن کی خوشنوائی
شوخانِ چمن کی دلرُبائی

کلیوں کی چٹک مہک گلوں کی
مستانہ صفیر بلبلوں کی

پرواز طیور آشیاں سے
اور بارشِ نور آسماں سے

مسجد میں اَذاں کا شور برپا
زُہاد وضو کیے مہیا

آنکھوں سے فراق خواب غفلت
منزل سے مسافروں کی رخصت

میخانوں میں مے کشوں کی دھومیں
دل ساغر مے کی آرزو میں

لب پر یہ سخن کہ جام پائیں
دل میں یہ ہوس سرور آئیں

کہتا ہے کوئی فدائے ساقی
بھاتی ہے مجھے ادائے ساقی

پایا ہے کسی نے جام رنگیں
دل کو کوئی دے رہا ہے تسکیں

اے قلب حزیں چہ شورو شین است
چوں ساقی تو ابوالحسین است

برخیز و بگیر جام سرشار
بنشیں و بنوش و کیف بردار

ناشاد بیاد شاد میرو
پُر دامن و بامراد میرو

مایوس مشو کہ خوش جنابے ست
بر چرخِ سخاوت آفتابے ست

ہوش و سرہوش را رہا کن
مے نوش و بدیگراں عطا کن

تُو نور ہے تیرا نام نوری
دے مجھ کو بھی کوئی جام نوری

ہر جرعہ ہو حامل کرامات
ہر قطرہ ہو کاشف مقامات

ہوں دل کی طرح سے صاف راہیں
اسرار پہ جا پڑیں نگاہیں

بغداد کے پھول کی مہک آئے
نکہت سے مشام روح بس جائے

گھٹ جائے ہوس بڑھیں اُمنگیں
آنکھوں سے ٹپک چلیں ترنگیں

یہ بادۂ تند لطف دے جائے
بغداد مجھے اُڑا کے لے جائے

جس وقت دیارِ یار دیکھوں
دیکھوں درِ شہریار دیکھوں

بے تابیِ دل مزے دکھا جائے
خود رفتگی میرے لینے کو آئے

دل محوِ جمال شکر باری
شَیئاً لِلّٰہ زباں پہ جاری

خم فرق زمین آستاں پر
قسمت کا دماغ آسماں پر

سینہ میں بہار کی تجلی
دل میں رُخِ یار کی تجلی

ہاتھوں میں کسی کا دامنِ پاک
آنکھوں میں بجائے سُرمہ وہ خاک

لب پر یہ صدا مراد دیجیے
ناشاد گدا کو شاد کیجیے

آیا ہے یہ بے کسی کا مارا
پایا ہے بہت بڑا سہارا

حسرت سے بھرا ہوا ہے سینہ
دل داغ ملال کا خزینہ

یہ دن مجھے بخت نے دکھایا
قسمت سے درِ کریم پایا

اے دست تہی و جانِ مضطر
مژدہ ہو رسا ہوا مقدر

گزرے وہ بکاؤ بین کے دن
اب خیر سے آئے چین کے دن

آیا ہوں میں درگہِ سخی میں
پہنچا ہوں کریم کی گلی میں

پرواہ نہیں کسی کی اب کچھ
بے مانگے ملے گا مجھ کو سب کچھ

اب دونوں جہاں سے بے غمی ہے
سرکار غنی ہے کیا کمی ہے

اے حُبّ وطن سقر کی ٹھہرا
اب کس کو پسند ساتھ تیرا

جائیں گے نہ اُس دیار سے ہم
اٹھیں گے نہ کوئے یار سے ہم

کون اُٹھتا ہے ایسے آستاں سے
اُٹھے نہ جنازہ بھی یہاں سے

کیا کام کہ چھوڑ کر یہ گلشن
کانٹوں میں پھنسائیں اپنا دامن

ہے سہل ہمیں جہاں سے جانا
مشکل ہے اس آستاں سے جانا

کیوں لطف بہار چھوڑ جائیں
کیوں نازِ خزاں اُٹھانے آئیں

دیکھا نہ یہاں اَسیر کوئی
محتاج نہیں فقیر کوئی

ہر وقت عیاں ہے فیضِ باری
ہر فصل ہے موسمِ بہاری

ہر شب میں شب برات کا رنگ
ہر روز میں روزِ عید کا ڈھنگ

تفریح و سُرور ہر گھڑی ہے
نوروز کی روز حاضری ہے

ہے عیش کی یہ خوشی ہمیشہ
حاضر رہے ہر گھڑی ہمیشہ

پیوستہ خوشی کا راج ہے یاں
ہر سن سنِ اِبْتِہاج ہے یاں

شوال ہے یاں کا ہر مہینہ
ہر چاند میں ماہِ عید دیکھا

انوار سے ہے بھری ہوئی رات
ہر شب ہے یہاں کی چاندنی رات

راحت نے یہاں لیا ہے آرام
آرام ہے اس جناب کا رام

مقصود دل انبساط خاطر
خدام کی خدمتوں میں حاضر

شادی کی ہوس یہیں رہوں میں
آرام مجاوروں کو دوں میں

حُضَّار سے کاوِشِ اَلم دُور
دل غم سے جدا تو دل سے غم دُور

طلعت سے دل و دماغ روشن
مقبول دعا چراغ روشن

آراستہ بزمِ خُسروی ہے
شادی کی گھڑی رَچی ہوئی ہے

مدّاح حضور آ رہے ہیں
اپنی اپنی سنا رہے ہیں

ہاں اے حسنـؔ اے غلام سرکار
مدّاح حضور نغز گفتار

مشتاق سخن ہیں اہل محفل
منّت کش انتظار ہے دل

کچھ منقبتیں سنا دعا لے
سرکار سے مدح کا صلہ لے

اے خالقِ قادر و توانا
اے واحد بے مثال و دانا

دے طبع کو سیل کی روانی
دل کش ہو اداے خوش بیانی

ہر حرف سے رنگ گل عیاں ہو
ہر لفظ ہزار داستاں ہو

مقبول میرا کلام ہو جائے
وہ کام کروں کہ نام ہو جائے

دے ملک سخن کا تاج یا رب
رکھ لے میری آج لاج یا رب

اے سیّدِ خوش بیاں کرم کر
اے افصحِ افصحاں کرم کر

اے رُوحِ امیں مدد کو آنا
لغزش سے کلام کو بچانا

وسائلِ بخشش

...

Aey Kareem Bin Kareem

اے کریم بنِ کریم اے رہنما اے مقتدا      اخترِ برجِ سخاوت گوہرِ درجِ عطا
آستانے پہ ترے حاضر ہے یہ تیرا گدا              لاج رکھ لے دست و دامن کی مرے بہرِ خدا
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
شاہِ اقلیمِ ولایت سرورِ کیواں جناب ہے          تمہارے آستانے کی زمیں گردوں قباب
حسرتِ دل کی کشاکش سے ہیں لاکھوں اضطراب     التجا مقبول کیجے اپنے سائل کی شتاب
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
سالکِ راہِ خدا کو راہنما ہے تیری ذات          مسلکِ عرفانِ حق ہے پیشوا ہے تیری ذات
بے نوایانِ جہاں کا آسرا ہے تیری ذات        تشنہ کاموں کے لیے بحر عطا ہے تیری ذات
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ہر طرف سے فوجِ غم کی ہے چڑھائی الغیاث          کرتی ہے پامال یہ بے دست و پائی الغیاث
پھر گئی ہے شکل قسمت سب خدائی الغیاث        اے مرے فریادرس تیری دہائی الغیاث
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
منکشف کس پر نہیں شانِ معلی کا عروج          آفتابِ حق نما ہو تم کو ہے زیبا عروج
میں حضیضِ غم میں ہوں اِمداد ہو شاہا عروج       ہر ترقی پر ترقی ہو بڑھے دونا عروج
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
تا کجا ہو پائمالِ لشکرِ اَفکارِ روح          تابکے ترساں رہے بے مونس و غمخوار روح
ہو چلی ہے کاوشِ غم سے نہایت زار روح       طالبِ اِمداد ہے ہر وقت اے دلدار روح
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
دبدبہ میں ہے فلک شوکت ترا اے ماہِ کاخ        دیکھتے ہیں ٹوپیاں تھامے گدا و شاہ کاخ
قصر جنت سے فزوں رکھتا ہے عزو و جاہ کاخ          اب دکھا دے دیدۂ مشتاق کو للہ کاخ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
توبہ سائل اور تیرے در سے پلٹے نامراد         ہم نے کیا دیکھے نہیں غمگین آتے جاتے شاد
آستانے کے گدا ہیں قیصر و کسریٰ قباد          ہو کبھی لطف و کرم سے بندۂ مضطر بھی یاد
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
نفس امارہ کے پھندے میں پھنسا ہوں العیاذ        در ترا بیکس پنہ کوچہ ترا عالم ملاذ
رحم فرما یا ملاذی لطف فرما یا ملاذ            حاضرِ در ہے غلامِ آستاں بہرِ لواذ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
شہرِ یار اے ذی وقار اے باغِ عالم کی بہار      بحر احساں رشخۂ نیسانِ جودِ کردگار
ہوں خزانِ غم کے ہاتھوں پائمالی سے دوچار        عرض کرتا ہوں ترے در پر بچشمِ اشکبار
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
برسرِ پرخاش ہے مجھ سے عدوے بے تمیز          رات دن ہے در پئے قلبِ حزیں نفسِ رجیز
مبتلا ہے سو بلاؤں میں مری جانِ عزیز       حلِ مشکل آپ کے آگے نہیں دشوار چیز
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
اک جہاں سیرابِ اَبرِ فیض ہے اب کی برس     تر نوا ہیں بلبلیں پڑتا ہے گوشِ گل میں رس
ہے یہاں کشتِ تمنا خشک و زندانِ قفس          اے سحابِ رحمتِ حق سوکھے دھانوں پر برس
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
فصلِ گل آئی عروسانِ چمن ہیں سبز پوش       شادمانی کا نواںسنجانِ گلشن میں ہے جوش
جوبنوں پر آ گیا حسنِ بہارِ گل فروش           ہائے یہ رنگ اور ہیں یوں دام میںگم کردہ ہوش
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
دیکھ کر اس نفسِ بد خصلت کے یہ زشتی خواص         سوزِ غم سے دل پگھلتا ہے مرا شکلِ رصاص
کس سے مانگوں خونِ حسرت ہاے کشتہ کا قصاص         مجھ کو اس موذی کے چنگل سے عطا کیجے خلاص
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ایک تو ناخن بدل ہے شدتِ افکار قرض       اس پر اَعدا نے نشانہ کر لیا ہے مجھ کو فرض
فرض اَدا ہو یا نہ ہو لیکن مرا آزار فرض       رد نہ فرمائو خدا کے واسطے سائل کی عرض
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
نفس شیطاں میں بڑھے ہیں سو طرح کے اختلاط         ہر قدم در پیش ہے مجھ کو طریقِ پل صراط
بھولی بھولی سے کبھی یاد آتی ہے شکل نشاط       پیش بارِ کوہِ کاہِ ناتواں کی کیا بساط
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
آفتوں میں پھنس گیا ہے بندۂ دارالحفیظ       جان سے سو کاہشوں میں دم ہے مضطر الحفیظ
ایک قلبِ ناتواں ہے لاکھ نشتر الحفیظ      المدد اے داد رس اے بندہ پرور الحفیظ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
صبح صادق کا کنارِ آسماں سے ہے طلوع       ڈھل چکا ہے صورتِ شب حسنِ رخسارِ شموع
طائروں نے آشیانوں میں کیے نغمے شروع          اور نہیں آنکھوں کو اب تک خوابِ غفلت سے رجوع
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
بدلیاں چھائیں ہوا بدلی ہوئے شاداب باغ          غنچے چٹکے پھول مہکے بس گیا دل کا دماغ
آہ اے جورِ قفس دل ہے کہ محرومی کا داغ           واہ اے لطفِ صبا گل ہے تمنا کا چراغ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
آسماں ہے قوس فکریں تیر میرا دل ہدف         نفس و شیطاں ہر گھڑی کف برلب و خنجر بکف
منتظر ہوں میں کہ اب آئی صداے لا تخف        سرورِ دیں کا تصدق بحر سلطانِ نجف
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
بڑھ چلا ہے آج کل اَحباب میں جوشِ نفاق      خوش مذاقانِ زمانہ ہو چلے ہیں بد مذاق
سیکڑوں پردوں میں پوشیدہ ہے حسنِ اتفاق      برسر پیکار ہیں آگے جو تھے اہلِ وفاق
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ڈر درندوں کا اندھیری رات صحرا ہولناک        راہ نامعلوم رعشہ پائوں میں لاکھوں مغاک
دیکھ کر ابرِ سیہ کو دل ہوا جاتا ہے چاک       آئیے اِمداد کو ورنہ میں ہوتا ہوں ہلاک
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ایک عالم پر نہیں رہتا کبھی عالم کا حال        ہر کمالے را زوال و ہر زوالے را کمال
بڑھ چکیں شب ہاے فرقت اب تو ہو روزِ وصال       مہرادھرمنہ کر کہ میرے دن پھریں دل ہو نہال
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
گو چڑھائی کر رہے ہیں مجھ پہ اندوہ و اَلم       گو پیاپے ہو رہے ہیں اہلِ عالم کے ستم
پر کہیں چھٹتا ہے تیرا آستاں تیرے قدم        چارۂ دردِ دلِ مضطر کریں تیرے کرم
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ہر کمر بستہ عداوت پر بہت اہلِ زمن       ایک جانِ ناتواں لاکھوں الم لاکھوں محن
سن لے فریادِ حسن فرما دے اِمدادِ حسن        صبحِ محشر تک رہے آباد تیری انجمن
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ہے ترے الطاف کا چرچا جہاں میں چار سو        شہرۂ آفاق ہیں یہ خصلتیں یہ نیک خو
ہے گدا کا حال تجھ پر آشکارا مو بمو           آجکل گھیرے ہوئے ہیں چار جانب سے عدو
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
شام ہے نزدیک منزل دور میں گم کردہ راہ           ہر قدم پر پڑتے ہیں اس دشت میں خس پوش جاہ
کوئی ساتھی ہے نہ رہبر جس سے حاصل ہو پناہ       اشک آنکھوں میں قلق دل میں لبوں پر آہ آہ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
تاج والوں کو مبارک تاجِ زر تختِ شہی         بادشا لاکھوں ہوئے کس پر پھلی کس کی رہی
میں گدا ٹھہروں ترا میری اسی میں ہے بہی       ظلِ دامن خاک در دیہیم و افسر ہے یہی
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من

وسائلِ بخشش

 

...

An Arabic Kalam of Alahazrat

اَلَآ یٰٓاَیُّھَاالسَّاقِیْٓ اَدِرْ کَاسًا وَّنَاوِلْھَا
کہ بر یادِ شہِ کوثر بنا سازیم محفلہا

بلا بارید حُبِّ شیخِ نجدی بر وہابیّہ
کہ عشق آساں نمود اوّل ولے افتاد مشکلہا

وہابی گرچہ اخفا می کند بغضِ نبی لیکن
نہاں کے ماند آں رازے کزو سازند محفلہا

توہّب گاہ ملکِ ہند اقامت را نمی شاید
جرس فریاد می دارد کہ بر بندید محملہا

صلائے مجلسم در گوش آمد بیں بیا بشنو
جرس مستانہ می گوید کہ بر بندید محملہا

مگر داں رُو ازیں محفل رہِ اربابِ سنّت رَو
کہ سالک بے خبر نبود زِ راہ و رسم منزلہا

در ایں جلوت بیا از راہِ خلوت تا خُدا یابی
مَتٰی مَاتَلْقَ مَنْ تَھْوٰی دَعِ الدُّنْیَا وَاَمْھِلْھَا

دلم قربانت اے دودِ چراغِ محفلِ مولد
ز تاب جعدِ مشکینت چہ خوں افتاد در دلہا

غریقِ بحرِ عشقِ احمدیم از فرحتِ مولد
کجا دانند حالِ ما سُبکسارانِ ساحلہا

رضؔاءِ مستِ جامِ عشقِ ساغر باز می خواہد
اَلَآ یٰٓاَیُّھَاالسَّاقِیْ اَدِرْ کَاسًا وَّنَاوِلْھَا

حدائقِ بخشش

...

Ummata o Siyakariha

اُمّتان و سیاہ کاریہا
شافعِ حشر و غم گساریہا

دور از کوئے صاحبِ کوثر
چشم دارد چہ اشکباریہا

در فراقِ تو یا رسولَ اللہ!
سینہ دارد چہ بے قراریہا

ظلمت آبادِ گورِ روشن شد
داغِ دل راست نور باریہا

چہ کند نفس پردہ در مولیٰ
چوں توئی گرمِ پردہ داریہا

سگِ کوئے نبی و یک نگہے
من و تا حشر جاں نثاریہا

سَوْفَ یُعْطِیْکَ رَبُّکَ تَرْضٰی
حق نمودت چہ پاس داریہا

دارم اے گل بیادِ زلف و رخت
سحر و شام آہ و زاریہا

تازہ لطفِ تو بر رضؔا ہر دم
مرہمِ کہنہ دل فگاریہا

حدائقِ بخشش

...

Ya Shaheed e Karbala


یا شہیدِ کربلا یا دافعِ کرب و بلا
گُل رُخا شہزادۂ گلگوں قَبا امداد کُن

اے حُسین اے مصطفیٰ را راحتِ جاں نورِ عین
راحتِ جاں نورِ عینم دِہ بیا امداد کُن

اے زِ حسنِ خلق و حسنِ خلقِ احمد نسخۂ
سینہ تا پا شکلِ محبوبِ خدا امداد کُن

جانِ حُسنِ ایمانِ حُسن اے کانِ حُسن اے شانِ حُسن
اے جمالت لَمعِ شمعِ مَنْ رَاٰی امداد کُن

جانِ زَہرا و شہیدِ زَہر را زور و ظہیر
زہرتِ اَزہارِ تسلیم و رضا امداد کُن

اے بَواقع بے کسانِ دہر را زیبا کَسے
وَے بظاہر بے کسِ دشتِ جفا امداد کُن

اے گلویت گہ لبانِ مصطفیٰ را بوسہ گاہ
گہ لبِ تیغِِ لعیں را حسرتا امداد کُن

اے تنِ تو گہ سوارِ شہسوارِ عرشِ تاز
گہ چُناں پامال خیلِ اَشقیا امداد کُن

اے دل و جانہا فدائے تشنہ کامیہائے تو
اے لبت شرحِ رَضِیْنَا بِالْقَضَا امداد کُن

اے کہ سوزت خان مانِ آب را آتش زَدے
گر نہ بُودے گریۂ ارض و سَما امداد کُن

ہے چہ بحر و تفتگی کوثر لب و ایں تشنگی
خاک بر فرقِ فُرات از لب مَرا امداد کُن

ابر گو ہرگز مبار و نہر گو ہرگز مَریز
خود لبَت تسلیم و فیضت حبّذا امداد کُن

حدائقِ بخشش

...

باقی اسیاد یا سجاد یا شاہِ جواد


باقیِ اَسیاد یا سجاد یا شاہِ جواد
خضرِ ارشاد آدمِ آلِ عَبا امداد کُن

اے بقیدِ ظلم و صد قیدی زِ بندِ غم کُشا
اے تہِ بے داد و کانِ دادہا امداد کُن

باقرا یا عالمِ سادات یا بحر العلوم
از علومِ خود بَدَفعِ جہلِ ما امداد کُن

جعفرِ صادق بحق ناطق بحق واثق توئی
بہرِ حق ما را طریقِ حق نما امداد کُن

شانِ حلماً کانِ علماً جانِ سلماً اَلسّلام
موسیِ کاظم جہاں ناظم مَرا امداد کُن

اے ترا زَین از عبادت وز تو زینِ عابداں
بہرِ ایں بے زینت از زَین و صفا امداد کُن

ضامنِ ثامن رِضا بر من نگاہے از رضا
خشم را شایانم و گویم رِضا امداد کُن

یا شہِ معروف ما را رہ سوئے معروف دِہ
یا سری اَمن از سَقَط در دوسرا امداد کُن

یا جنید اے بادشاہِ جُندِ عرفاں المدد
شبلیا اے شبلِ شیرِ کبریا امداد کُن

شیخ عبد الواحدا راہم سوئے واحد نما
بے فرح را بالفرح طرطوسیا امداد کُن

بوالحسن ہکاریا حالم حسن کُن بے ریا
اے علی اے شاہِ عالی مرتقیٰ امداد کُن

سرورِ مخزوم سیف اللہ اے خالد بقرب
بو سعیدا اسعدا سعد الوریٰ امداد کُن

اے ترا ببرے چو عبدالقادرِ جیلی مزید
برسگانِ ور گہش لطفے نما امداد کُن

وَہ چہ شیرِ شَرزَہ راہِ تست از بختِ سعید
دشتِ ضیغم لیث شیر و شیر زا امداد کُن

حدائقِ بخشش

...

Baqi Asyad Ya Sajjad


باقیِ اَسیاد یا سجاد یا شاہِ جواد
خضرِ ارشاد آدمِ آلِ عَبا امداد کُن

اے بقیدِ ظلم و صد قیدی زِ بندِ غم کُشا
اے تہِ بے داد و کانِ دادہا امداد کُن

باقرا یا عالمِ سادات یا بحر العلوم
از علومِ خود بَدَفعِ جہلِ ما امداد کُن

جعفرِ صادق بحق ناطق بحق واثق توئی
بہرِ حق ما را طریقِ حق نما امداد کُن

شانِ حلماً کانِ علماً جانِ سلماً اَلسّلام
موسیِ کاظم جہاں ناظم مَرا امداد کُن

اے ترا زَین از عبادت وز تو زینِ عابداں
بہرِ ایں بے زینت از زَین و صفا امداد کُن

ضامنِ ثامن رِضا بر من نگاہے از رضا
خشم را شایانم و گویم رِضا امداد کُن

یا شہِ معروف ما را رہ سوئے معروف دِہ
یا سری اَمن از سَقَط در دوسرا امداد کُن

یا جنید اے بادشاہِ جُندِ عرفاں المدد
شبلیا اے شبلِ شیرِ کبریا امداد کُن

شیخ عبد الواحدا راہم سوئے واحد نما
بے فرح را بالفرح طرطوسیا امداد کُن

بوالحسن ہکاریا حالم حسن کُن بے ریا
اے علی اے شاہِ عالی مرتقیٰ امداد کُن

سرورِ مخزوم سیف اللہ اے خالد بقرب
بو سعیدا اسعدا سعد الوریٰ امداد کُن

اے ترا ببرے چو عبدالقادرِ جیلی مزید
برسگانِ ور گہش لطفے نما امداد کُن

وَہ چہ شیرِ شَرزَہ راہِ تست از بختِ سعید
دشتِ ضیغم لیث شیر و شیر زا امداد کُن

حدائقِ بخشش

...

Istighasa Ghous e Azam


یلّلے خوش آمدم در کوئے بغداد آمدم
رقصم و جوشد زِ ہر مویم ندا امداد کُن
طُرفہ تر سازے زَنم بر لب زَدَہ مُہرِ ادب
خیزد از ہر تارِ جیبِ مَن صَدا امداد کُن
بوسہ گستاخانہ چِیدَن خواہم از پائے سگش
ورنہ بخشد پیشِ شہ گریم شہا امداد کُن

حدائقِ بخشش

...

Kalam Written By Alahazrat

یَا ابْنَ ہٰذَا الْمُرْتَجٰی یَا عَبْدَ رَزَّاقِ الْوَرٰی
تا کہ باشد رزقِ ما عشقِ شما امداد کُن

یا ابا صالح صَلاحِ دین و اِصلاحِ قلوب
فاسدم گلزارِ و در جوشِ ہوا امداد کُن

جانِ نَصْری یا محی الدین فَانْصُرْ وَانْتَصِرْ
اے علی اے شہر یارِ مرتضیٰ امداد کُن

سیّدِ موسیٰ! کلیمِ طورِ عرفاں المدد!
اے حسن اے تاجْدار مجتبیٰ امداد کُن

منتقیٰ جوہر زِ جیلاں سیّد احمد اَلاَماں
بے بہا گوہر بہاؤ الدیں بَہا امداد کُن

بندہ را نمرودِ نفس اَنداخت در نارِ ہوا
یا بَراہیم ابرِ آتش گُل کُنا امداد کُن

اے محمد اے بھکاری اے گدائے مصطفیٰ
ما گدایانِ دَرَت اے با سخا امداد کُن

اَلنَّجَا اے زندۂ جاوید اے قاضی جیا
اے جمالِ اولیا یوسف لِقا امداد کُن

یا محمد یا علم واخَر زِ دستِ غفلتم
اے کہ ہر مُوئے تو در ذکرِ خدا امداد کُن

اے بنامت شیرۂ جاں شد نباتِ کالپی
احمدا نوشیں لبا شیریں ادا امداد کُن

شاہ فضل اللہ یا ذُو الفضل یا فضلِ الٰہ
چشم در فضلِ تو بست ایں بے نوا امداد کُن

حدائقِ بخشش

...