Iman Hai Qaal e Mustafai

ایمان ہے قالِ مصطفائی
قرآن ہے حالِ مصطفائی

اللہ کی سلطنت کا دولھا
نقشِ تِمثالِ مصطفائی

کُل سے بالا رسل سے اعلیٰ
اجلال و جلال مصطفائی

اصحاب نجومِ رہنما ہیں
کشتی ہے آل مصطفائی

اد بار سے تو مجھے بچالے
پیارے اقبال مصطفائی

مرسل مشتاقِ حق ہیں اور حق
مشتاق وصال مصطفائی

خواہان وصالِ کبریا ہیں
جویان جمال مصطفائی

محبوب و محب کی ملک ہے ایک
کونین ہیں مال مصطفائی

اللہ نہ چھوتے دست دل سے
دامانِ خیال مصطفائی

ہیں تیرے سپرد سب امیدیں
اے جودو نوال مصطفائی

روشن کر قبر بیکسوں کی
اے شمع جمال مصطفائی

اندھیرے ہے بے ترے مرا گھر
اے شمع جمال مصطفائی

مجھ کو شب غم ڈرا رہی ہے
اے شمع جمال مصطفائی

آنکھوں میں چمک کے دل میں اجا
اے شمع جمال مصطفائی

میری شب تار دن بنادے
اے شمع جمال مصطفائی

چمکا دے نصیب بد نصیباں
اے شمع جمال مصطفائی

قزاق ہیں سر پہ راہ گم ہے
اے شمع جمال مصطفائی

چھایا آنکھوں تلے اندھیرا
اے شمع جمال مصطفائی

دل سرد ہے اپنی لو لگادے
اے شمع جمال مصطفائی

گھنگھنور گھٹائیں غم کی چھائیں
اے شمع جمال مصطفائی

بھٹکا ہوں تو راستہ بتاجا
اے شمع جمال مصطفائی

فریاد دباتی ہے سیاہی
اے شمع جمال مصطفائی

میرے دل مردہ کو جلادے
اے شمع جمال مصطفائی

آنکھیں تری راہ تک رہی ہیں
اے شمع جمال مصطفائی

دکھ میں ہیں اندھیری رات والے
اے شمع جمال مصطفائی

تاریک ہے رات غمزدوں کی
اے شمع جمال مصطفائی

ہو دونوں جہاں میں منھ اجالا
اے شمع جمال مصطفائی

تاریکی گور سے بچانا
اے شمع جمال مصطفائی

پُر نور ہے تجھ سے بزمِ عالم
اے شمع جمال مصطفائی

ہم تیرہ دلوں پہ بھی کرم
اے شمع جمال مصطفائی

للہ اِدھر بھی کوئی پھیرا
اے شمع جمال مصطفائی

تقدیر چمک اٹھے رضؔا کی
اے شمع جمال مصطفائی

حدائقِ بخشش


All Related

Comments