Dushman e Ahmad Pe Shiddat Kijiye

دشمنِ احمد پہ شدّت کیجیے
ملحدوں کی کیا مروّت کیجیے

ذکر اُن کا چھیڑیے ہر بات میں
چھیڑنا شیطاں کا عادت کیجیے

مثلِ فارس زلزلے ہوں نجد میں
ذکرِ آیاتِ ولادت کیجیے

غیظ میں جل جائیں بے دینوں کے دل
’’یَا رَسُوْلَ اللہ‘‘ کی کثرت کیجیے

کیجیے چرچا اُنھیں کا صبح و شام
جانِ کافر پر قیامت کیجیے

آپ درگاہِ خُدا میں ہیں وجیہ
ہاں شفاعت بالوجاہت کیجیے

حق تمھیں فرما چکا اپنا حبیب
اب شفاعت بالمحبّت کیجیے

اِذن کب کا مل چکا اب تو حضور
ہم غریبوں کی شفاعت کیجیے

ملحدوں کا شک نکل جائے حضور
جانبِ مہ پھر اشارت کیجیے

شرک ٹھہرے جس میں تعظیم ِحبیب
اُس بُرے مذہب پہ لعنت کیجیے

ظالمو! محبوب کا حق تھا یہی
عشق کے بدلے عداوت کیجیے

وَالضُّحٰی، حُجْرَاتْ، اَلَمْ نَشْرَحْ سے پھر
مومنو! اتمامِ حجّت کیجیے

بیٹھتے اٹھتے حضورِ پاک سے
التجا و استعانت کیجیے

یا رسول اللہ دُہائی آپ کی
گوشمالِ اہلِ بدعت کیجیے

غوثِ اعظم آپ سے فریاد ہے
زندہ پھر یہ پاک ملّت کیجیے

یا خدا تجھ تک ہے سب کا منتہیٰ
اولیا کو حکمِ نصرت کیجیے

میرے آقا حضرتِ اچھے میاں!
ہو رضؔا اچھا وہ صورت کیجیے

حدائقِ بخشش


All Related

Comments