Dil Mera Gudgudati Rahi Arzoo

دل مِرا گُدگُداتی رہی آرزو
آنکھ پِھر پِھر کے کرتی رہی جستجو

عرش تا فرش ڈھونڈ آیا میں تجھ کو، تو
نکلا اَقْرَبْ زِ حَبْلِ وَرِیْدِ گُلو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

طائرانِ چمن کی چہک وَحْدَہٗ
نغمہ بلبل کا ہے لَاشَرِیْکَ لَہٗ

قمریوں کا ترانہ ہے لَاغَیْرَہٗ
زمزمہ طوطی کا ھُوَہٗ ھُوَہٗ

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

بلبلوں کو چمن میں رہی جستجو
پپیہا کہتا پھرا ’’پی کہاں‘‘ سو بہ سو

پر نہ چٹکا کہیں غنچۂ آرزو
ہاں ملا تو ملا میرے دل ہی میں تو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

شاہدانِ چمن نے لبِ آب جو
آب گُل سے نہا کر کے تازہ وضو

حلقۂ ذکر گُل کے کیا رو بہ رو
اور لگانے لگے دم بہ دم ضربِ ھُوْ

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

رہ کے پردوں میں تو جلوہ آرا ہوا
بس کے آنکھوں میں آنکھوں سے پردہ کیا

آنکھ کا پردہ، پردہ ہوا آنکھ کا
بند آنکھیں ہوئیں تو نظر آیا تو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

کعبۂ کعبہ ہے کعبۂ دل مِرا
کعبہ پتّھر کا دل جلوہ گاہِ خدا

ایک دل پر ہزاروں ہی کعبے فدا
کعبۂ جان و دل کعبے کی آبرو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

طورِ سینا پہ تو جلوہ آرا ہوا
صاف موسیٰ سے فرما دیا لَنْ تَرَا

اور اِنِّیْٓ اَنَااللہ شجر بول اٹھا
تیرے جلووں کی نیرنگیاں سو بہ سو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

مجھ کو در در پھراتی رہی جستجو
ٹوٹے پائے طلب تھک رہی آرزو

ڈھونڈتا میں پھرا کو بہ کُو چار سو
تھا رگِ جاں سے نزدیک تر دل میں تو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

کون تھا جس نے سُبْحَانِیْ فرما دیا
اور مَآ اَعْظَمَ شَانِیْ کس نے کہا

بایزید اور بسطام میں کون تھا
کب اَنَاالْحَقّ تھی منصور کی گفتگو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

یا الٰہی! دکھا ہم کو وہ دن بھی تو
آبِ زم زم سے کر کے حرم میں وضو

با ادب شوق سے بیٹھ کے قبلہ رو
مل کے ہم سب کہیں یک زباں ہو بہ ہو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

میں نے مانا کہ حاؔمد گنہ گار ہے
معصیت کیش ہے اور خطا کار ہے

میرے مولیٰ مگر تو تو غَفَّار ہے
کہتی رحمت ہے مجرم سے لَاتَقْنَطُوْا

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

بیاض پاک


All Related

Comments