bayaz e paak  

Kon Main Kon Hai Too Hi Too

 

کَون میں کَون ہے تو ہی تو، تو ہی تو ہے یَا مَنْ ھُو

تو ہی تو ہے تو ہر سویَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

ذرّے میں نور ہے گل میں بو، کوئل کُوکے ’’کُو کُو کُو‘‘
’’پی کہاں‘‘ پپیہا کہے ہر سو اللہٗ اللہٗ اللہٗ

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

کثرت میں ہے کیسی وحدت، وحدت میں پھر کیسی کثرت
چشمِ مست میں تیری رنگت، پھولوں میں تیری خوشبو

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

طور بنا ہے ذرّہ ذرّہ، نور بنا ہے قطرہ قطرہ
تیرا ثنا گر بُت کا بندہ، سجدہ بُتوں کا تیری سو

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

روح میں تو ہے دل میں تو، میری آب و گِل میں تو
اصل میں تو ہے ظل میں تو حَق حَق حَق، ھُوْ ھُوْ ھُوْ

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

لَامَعْبُوْدَ اِلَّااللہ لَامَشْھُوْدَ اِلَّااللہ
لَامَوْجُوْدَ اِلَّاہٗ لَامَقْصُوْدَ اِلَّاہٗ

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

روح و دل، سر اور خَفِیْ، اَخْفٰی میں بھی ہے تو ہی
قلبِ صنوبر، نیل و مری، جاری ساری سب میں تو

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

حَسْبِیْ رَبِّیْ جَلَّ اللہ مَا فِیْ قَلْبِیْ غَیْرُاللہ

نورِ مُحمّد صَلَّی اللہٗ، اللہٗ اللہٗ اللہٗ

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

اوّل تو ہے آخر تو، باطن تو ہے ظاہر تو
قادر قادر قادر تو اللہٗ اللہٗ اللہٗ

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

تو میرا آقا، میں تیرا بندہ؛ بندہ بھی کیسا گھنونا بندہ
لَوثِ مَعاصی سے آگندہ، کر اپنے کرم سے عَفْو، عَفُوْ!

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

تحریر ہے آبِ زر سے ورق، ہے دل میں لکھا حاؔمد کے سبق

اَنْتَ الْھَادِیْ، اَنْتَ الْحَقّ، لَیْسَ الْھَادِیْ اِلَّا ھُوْ

لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، لَآ اِلٰہَ اِلَّا ھُوْ، یَا مَنْ لَّیْسَ اِلَّا ھُوْ

بیاضِ پاک

...

Dil Mera Gudgudati Rahi Arzoo

دل مِرا گُدگُداتی رہی آرزو
آنکھ پِھر پِھر کے کرتی رہی جستجو

عرش تا فرش ڈھونڈ آیا میں تجھ کو، تو
نکلا اَقْرَبْ زِ حَبْلِ وَرِیْدِ گُلو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

طائرانِ چمن کی چہک وَحْدَہٗ
نغمہ بلبل کا ہے لَاشَرِیْکَ لَہٗ

قمریوں کا ترانہ ہے لَاغَیْرَہٗ
زمزمہ طوطی کا ھُوَہٗ ھُوَہٗ

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

بلبلوں کو چمن میں رہی جستجو
پپیہا کہتا پھرا ’’پی کہاں‘‘ سو بہ سو

پر نہ چٹکا کہیں غنچۂ آرزو
ہاں ملا تو ملا میرے دل ہی میں تو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

شاہدانِ چمن نے لبِ آب جو
آب گُل سے نہا کر کے تازہ وضو

حلقۂ ذکر گُل کے کیا رو بہ رو
اور لگانے لگے دم بہ دم ضربِ ھُوْ

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

رہ کے پردوں میں تو جلوہ آرا ہوا
بس کے آنکھوں میں آنکھوں سے پردہ کیا

آنکھ کا پردہ، پردہ ہوا آنکھ کا
بند آنکھیں ہوئیں تو نظر آیا تو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

کعبۂ کعبہ ہے کعبۂ دل مِرا
کعبہ پتّھر کا دل جلوہ گاہِ خدا

ایک دل پر ہزاروں ہی کعبے فدا
کعبۂ جان و دل کعبے کی آبرو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

طورِ سینا پہ تو جلوہ آرا ہوا
صاف موسیٰ سے فرما دیا لَنْ تَرَا

اور اِنِّیْٓ اَنَااللہ شجر بول اٹھا
تیرے جلووں کی نیرنگیاں سو بہ سو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

مجھ کو در در پھراتی رہی جستجو
ٹوٹے پائے طلب تھک رہی آرزو

ڈھونڈتا میں پھرا کو بہ کُو چار سو
تھا رگِ جاں سے نزدیک تر دل میں تو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

کون تھا جس نے سُبْحَانِیْ فرما دیا
اور مَآ اَعْظَمَ شَانِیْ کس نے کہا

بایزید اور بسطام میں کون تھا
کب اَنَاالْحَقّ تھی منصور کی گفتگو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

یا الٰہی! دکھا ہم کو وہ دن بھی تو
آبِ زم زم سے کر کے حرم میں وضو

با ادب شوق سے بیٹھ کے قبلہ رو
مل کے ہم سب کہیں یک زباں ہو بہ ہو

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

میں نے مانا کہ حاؔمد گنہ گار ہے
معصیت کیش ہے اور خطا کار ہے

میرے مولیٰ مگر تو تو غَفَّار ہے
کہتی رحمت ہے مجرم سے لَاتَقْنَطُوْا

اللہٗ اللہٗ اللہٗ اللہٗ

بیاض پاک

...

Muhammad Mustafa Naam e Khuda


محمد مصطفیٰ نورِ خدا نامِ خدا تم ہو
شَہِ خَیْرُالْوَریٰ شانِ خدا صَلِّ عَلٰی تم ہو

شکیبِ دل قرارِ جاں محمد مصطفی تم ہو
طبیبِ دردِ دل تم ہو مِرے دل کی دوا تم ہو

غریبوں درد مندوں کی دوا تم ہو دعا تم ہو
فقیروں بے نواؤں کی صدا تم ہو نِدا تم ہو

حبیبِ کبریا تم ہو اِمَامُ الْاَنْبِیَآء تم ہو
محمد مصطفیٰ تم ہو محمد مجتبیٰ تم ہو

ہمارے ملجا و ماوا ہمارا آسرا تم ہو
ٹھکانہ بے ٹھکانوں کا شَہِ ہر دوسرا تم ہو

غریبوں کی مدد بے بس کا بس رُوْحِیْ فِدَا تم ہو
سہارا بے سہاروں کا ہمارا آسرا تم ہو

نہ کوئی ماہ وَش تم سا نہ کوئی مہ جبیں تم سا
حسینوں میں ہو تم ایسے کہ محبوبِ خدا تم ہو

میں صدقے انبیا کے یوں تو محبوب ہیں، لیکن
جو سب پیاروں سے پیارا ہے وہ محبوبِ خدا تم ہو

حسینوں میں تمھیں تم ہو نبیوں میں تمھیں تم ہو
کہ محبوبِ خدا تم ہو نَبِیُّ الْاَنْبِیَآء تم ہو

تمھارے حُسنِ رنگیں کی جھلک ہے سب حسینوں میں
بہاروں کی بہاروں میں بہارِ جاں فزا تم ہو

زمیں میں ہے چمک کس کی فلک پر ہے جھلک کس کی
مہ (و) خورشید، سیّاروں، ستاروں کی ضیا تم ہو

وہ لاثانی ہو تم آقا نہیں ثانی کوئی جس کا
اگر ہے دوسرا کوئی تو اپنا دوسرا تم ہو

ھُوَالْاَوَّل ھُوَالْاٰخِر ھُوَالظَّاھِر ھُوَالْبَاطِن
بِکُلِّ شَیْء عَلِیْم لوحِ محفوظِ خدا تم ہو

نہ ہو سکتے ہیں دو اوّل، نہ ہو سکتے ہیں دو آخر
تم اوّل اور آخر، ابتداء تم انتہا تم ہو

خدا کہتے نہیں بنتی جدا کہتے نہیں بنتی
خدا پر اِس کو چھوڑا ہے وہی جانے کہ کیا تم ہو

اَنَا مِنْ حَامِد و حَامِد رضَا مِنِّی کے جلووں سے
بِحَمْدِ اللہ رضا حامد ہیں اور حاؔمد رضا تم ہو

بیاض پاک

...

Gunahgaroun Ka Roz e Mehshar

گناہ گاروں کا روزِ محشر شفیع خَیْرُالْاَنَام ہوگا
دُلھن شفاعت بنے گی دُلھا نبی عَلَیْہِ السَّلَام ہوگا

کبھی تو چمکے گا نجمِ قسمت ہلال ماہِ تمام ہوگا
کبھی تو ذرّے پہ مہر ہوگی وہ مہر ادھر خوش خَرام ہوگا

پڑا ہوں میں ان کی رہ گزر میں پڑے ہی رہنے سے کام ہوگا
دل و جگر فرشِ رہ بنیں گے یہ دیدہ مشقِ خرام ہوگا

وہی ہے شافع وہی مشفّع اسی شفاعت سے کام ہوگا
ہماری بگڑی بنے گی اس دن وہی مَدارُالْمَھَامْ ہوگا

اُنھیں کا مُنھ سب تکیں گے اس دن جو وہ کریں گے وہ کام ہوگا
دہائی سب ان کی دیتے ہوں گے اُنھیں کا ہر لب پہ نام ہوگا

’’اَنَا لَھَا‘‘ کہہ کے عاصیوں کو وہ لیں گے آغوشِ مرحمت میں
عزیز، اکلوتا جیسے ماں کو، انھیں ہر اک یوں غلام ہوگا

اُدھر وہ گرتوں کو تھام لیں گے اُدھر(وہ) پیاسوں کو جام دیں گے
صِراط و میزان و حوضِ کوثر یہیں وہ عالی مقام ہوگا

کہیں وہ جلتے بجھاتے ہوں گے کہیں وہ روتے ہنساتے ہوں گے
وہ پائے نازک پہ دوڑنا اور بعید ہر اک مقام ہوگا

ہوئی جو مجرم کو بازیابی تو خوفِ عصیاں سے دھج یہ ہوگی
خمیدہ سر، آبدیدہ آنکھیں، لرزتا ہندی غلام ہوگا

حضورِ مُرشِد کھڑا رہوں گا کھڑے ہی رہنے سے کام ہوگا
نگاہِ لطف و کرم اٹھے گی تو جھک کے میرا سلام ہوگا

خدا کی مرضی ہے اُن کی مرضی، ہے اُن کی مرضی خدا کی مرضی
اُنھیں کی مرضی پہ ہو رہاں ہے، اُنھیں کی مرضی پہ کام ہوگا

جدھر خدا ہے اُدھر نبی ہے، جدھر نبی ہے اُدھر خدا ہے
خدائی بھر سب اُدھر پھرے گی جدھر وہ عالی مقام ہوگا

اِسی تمنّا میں دم پڑا ہے، یہی سہارا ہے زندگی کا
بُلا لو مجھ کو مدینے سرور! نہیں تو جینا حرام ہوگا

حضورِ روضہ ہوا جو حاضر تو اپنی سج دھج یہ ہوگی، حاؔمد!
خمیدہ سر، آنکھ بند، لب پر مِرے دُرود و سلام ہوگا

بیاض پاک

...

Chand Se Un k Chehrey Pe

چاند سے اُن کے چہرے پر گیسوئے مشک فام دو
دن ہے کھلا ہوا مگر وقتِ سحر ہے شام دو

روئے صبیح اک سحر زلفِ دوتا ہے شام دو
پھول سے گال صبح دم مہر ہیں لَالَہ فام دو

عارضِ نور بار سے بکھری ہوئی ہٹی جو زلف
ایک اندھیری رات میں نکلے مہِ تمام دو

اُن کی جبینِ نور پر زلفِ سیہ بکھر گئی
جمع ہیں ایک وقت میں ضِدّیں صبح و شام دو

خیر سے دن خدا وہ لائے دونوں حرم ہمیں دکھائے
زمزم و بیرِ فاطمہ کے پئیں چل کے جام دو

ذاتِ حَسن حُسین ہے عَینِ شبیہِ مصطفیٰ
ذات ہے اک نبی کی ذات ہیں یہ اسی کے نام دو

پی کے پِلا کے مَے کشو! ہم کو بچیکُھچی ہی دو
قطرہ دو قطرہ ہی سہی کچھ تو برائے نام دو

ہاتھ سے چار یار کے ہم کو ملیں گے چار جام
دستِ حَسن حُسین سے اور ملیں گے جام دو

ایک نگاہِ ناز پر سیکڑوں جامِ مَے نثار
گردشِ چشمِ مست سے ہم نے پئے ہیں جام دو

وسطِ مُسَبِّحَہ پہ سر رکھیے انگوٹھے کا اگر
نامِ اِلٰہ ہے لکھا ’’ہ‘‘ اور ’’الف‘‘ ہے ’’لام‘‘ دو

ہاتھ کو کان پر رکھو پا بہ ادب سمیٹ لو
’’دال‘‘ ہو، ایک ’’ح‘‘ ہو، ایک آخرِ حرفِ ’’ لام‘‘ دو

نامِ خدا ہے ہاتھ میں، نامِ نبی ہے ذات میں
مُہرِ غلامی ہے پڑی، لکھے ہوئے ہیں نام دو

نامِ حبیب کی ادا جاگتے سوتے ہو ادا
نامِ محمدی بنے جسم کو یہ نظام دو

نامِ خدا مرقّعہ، نامِ خدا رخِ حبیب
بینی ’’الف‘‘ ہے، ’’ہ‘‘ دہن، زلفِ دوتا ہے ’’لام‘‘ دو

وحشی ہے ایک دل مِرا زلفِ سیاہ فام کا
بندشِ عشق سخت تر صَید ہے ایک دام دو

تلووں سے اُن کے چار چاند لگ گئے مہر و ماہ کو
ہیں یہ اُنھیں کی تابشیں، ہیں یہ اُنھیں کے نام دو

گاہ وہ آفتاب ہیں گاہ وہ ماہتاب ہیں
جمع ہیں ان کے گالوں میں مہر و مہِ تمام دو

بازیِ زیست مات ہے موت کو بھی مَمات ہے
موت کو بھی ہے ایک دن موت پہ اذنِ عام دو

اب تو مدینے لے بُلا گنبدِ سبز دے دکھا
حاؔمد و مصطفیٰ تِرے ہند میں ہیں غلام دو

بیاض پاک

...

Shahid e Gul Hai Mast Naaz

شاہدِ گُل ہے مست ناز حجلۂ نو بہار میں
ناز و ادا کے پھول ہیں پھولے گلے کے ہار میں

آئیں گھٹائیں جھوم کر عشق کے کوہ سار میں
بارشِ غم ہے اشک بار گریۂ بے قرار میں

عشق نے چھوڑی پھلجھڑی دل کی لگی بھڑک اٹھی
آتشِ گُل کے پھول سے آگ لگی بہار میں

آنکھوں سے لگ گئی جھڑی بحر میں موج آ گئی
سَیلِ سِرِشک اُبل پڑا نالۂ قلبِ زار میں

شوق کی چیرہ دستیاں دل کی اُڑائیں دھجّیاں
وحشتِ عشق کا سماں دامنِ تار تار میں

بجلی سی اک تڑپ گئی خِرمَنِ ہوش اُڑ گیا
برق شرارَہ بار تھی جلوۂ نورِ یار میں

تابشِ رُخ سے چار چاند لگ گئے مہر و ماہ کو
حُسنِ ازل ہے جلوہ ریز آئینۂ عِذار میں

کعبۂ ابرو دیکھ کر سجدے جبیں میں مضطرب
دل کی تڑپ کو چین کیا تاب کہاں قرار میں

شاہدِ گُل ہے مصطفیٰ طیبہ چمن ہے جاں فزا
گُلشنِ قُدس ہے کِھلا صحنِ حریمِ یار میں

سُوسَن و یاسَمَن، سَمَن، سُنبل و لالہ نَستَرَن
سارا ہرا بھرا چمن پھولا اسی بہار میں

باغِ جناں لہک اٹھا، قصرِ جناں مہک اٹھا
سیکڑوں ہیں چمن کِھلے پھول کی اک بہار میں

سارے بہاروں کی دُلَھن ہے مِرے پھول کا چمن
گُلشنِ ناز کی پھبن طیبہ کے خار خار میں

تم ہو حبیبِ کبریا پیاری تمھاری ہر ادا
تم سا کوئی حَسیں بھی ہے گُلشنِ روز گار میں

نکلی نہ کوئی آرزو دل کی ہی دل میں رہ گئی
حسرتیں ہیں ہزار دفن قلب کے اک مزار میں

خارِ مدینہ دیکھ کر وحشتِ دل ہے زور پر
دستِ جنوں الجھ گیا دامنِ دل کے تار میں

ماہ تِری رکاب میں، نور ہے آفتاب میں
بو ہے تِری گلاب میں رنگ تِرا انار میں

غنچۂ دل مہک اٹھا موجِ نسیمِ طیبہ سے
روحِ شمیم تھی بسی گیسوئے مشک بار میں

شوق کی ناشکیبیاں سوز کی دل گدازیاں
وصل کی نامُرادیاں عاشقِ دل فگار میں

گردشِ چشمِ ناز سے حاؔمدِ مَے گُسار مست
رنگِ سرور و کیف ہے چشمِ خمار دار میں

بیاض پاک

...

Maah o Man Se Bachaey Aal e Rasool


ما و مَن سے بچائے آلِ رسول
مِن و عَن ہوں رضائے آلِ رسول

حق میں مجھ کو گُمائے آلِ رسول
مجھ کو حق سے ملائے آلِ رسول

میری آنکھوں میں آئے آلِ رسول
میرے دل میں سمائے آلِ رسول

تو ہی جانے فدائے آلِ رسول
قدرِ سُمْوِ سمائے آلِ رسول

سات اَفلاک زینے پھر کرسی
عرشِ رِفعت سرائے آلِ رسول

چاندنا چاند کا مدینے کے
لُمعۂ حق نُمائے آلِ رسول

ہے ارادہ تِرا ارادۂ حق
حق کی مرضی رضائے آلِ رسول

بعد جس کے نہ ہوگا فقر کبھی
وہ غنا ہے غنائے آلِ رسول

صِبْغَۃُاللہ کی چڑھی اپنی
حق کی رنگت رچائے آلِ رسول

اس کی نیرنگیوں میں ہوں یک رنگ
رنگِ وحدت جمائے آلِ رسول

ہو خودی دور اور خدا باقی
ہو خدا ہی خدائے آلِ رسول

مَوت سے پہلے مجھ کو مَوت آئے
میری ہستی مٹائے آلِ رسول

یوں مٹوں میں کہ مجھ میں مٹ جائے
مجھ کو مجھ سے گُمائے آلِ رسول

جیتے جی جی میں مَیں گزر جاؤں
پھول میری اٹھائے آلِ رسول

بیڑی کٹ جائے ہر تشخص کی
قید سے یوں چھڑائے آلِ رسول

یہ خودی بھی فدائے دعویٰ ہے
کر دے بے خود خدائے آلِ رسول

صورتِ شیخ کا تصوّر ہو
ہوں میں مَحوِ لقائے آلِ رسول

سر تا پایَم فدا سر و پایَت
وَہ چہ نور و ضیائے آلِ رسول

دل و جانم فدا سَرَت گَردَم
لُمعۂ حق نمائے آلِ رسول

بھر دے قطرے کے سینے میں قلزم
نم میں یم کو سمائے آلِ رسول

حَقُّہٗ حق ہو ظاہر و باطن
حق کے جلوے دکھائے آلِ رسول

دل میں حق حق زباں پہ حق حق ہو
دید حق کی کرائے آلِ رسول

حق کا دیوانہ ہادیِ حق سے
حق کی دھومیں مچائے آلِ رسول

فانی ہو جاؤں شیخ میں اپنے
ہو بہ ہو ہو ادائے آلِ رسول

فَانِیْ فِی اللہ بَاقِیْ بِاللہ ہوں
تو ہی تو ہے خدائے آلِ رسول

یہ تَقَرُّبْ ملے نوافل سے
ہوں حبیبِ فدائے آلِ رسول

ہاتھ پاؤں ہو آنکھ کان ہو وہ
عقل بھی ہو فدائے آلِ رسول

میرے اَعضا بنے مِرا مولیٰ
مجھ پہ پیار آئے، آئے آلِ رسول

اس سے دیکھوں سنوں چلوں پکڑوں
مَولیٰ دے بندہ پائے آلِ رسول

میری ہستی حجاب ہے میرا
تو ہی پردہ اٹھائے آلِ رسول

قرب حاصل ہو پھر فرائض کا
صوفی کامل بنائے آلِ رسول

مُلکِ لَاہُوْت سے اِلَی النَّاسُوْتْ
ہونے رجعت نہ پائے آلِ رسول

سیرِ فِی اللہ اور مِنَ اللہ ہو
درجے سب طے کرائے آلِ رسول

پھر اِلَی اللہ فنائے مطلق سے
پورا سالک بنائے آلِ رسول

قیدِ نَاسُوْتْ سے رہائی ہو
پھیرے میرے بڑھائے آلِ رسول

شاخِ لَاھُوْتْ پر بسیرا ہو
ہو یہ طائر ہُمائے آلِ رسول

بیاض پاک

...

Ya Ilahi Bara e Aal e Rasool


یا الٰہی! برائے آلِ رسول
دل میں بھر دے وِلائے آلِ رسول

سوکھے دھانوں پہ بھی برس جائے
ابرِ جُود و سخائے آلِ رسول

سر سے قربان تجھ پہ آنکھوں سے
آنکھیں سر سے فدائے آلِ رسول

سُحقِ نعلین رگڑا آنکھوں کا
طوطیا خاکپائے آلِ رسول

میری بگڑی بنی ہے تیرے ہاتھ
تو ہی بگڑی بنائے آلِ رسول

تجھ سے جس کو ملا ملے پیارے
تجھ سے جو پائے پائے آلِ رسول

تیزیِ مہرِ حشر کا کیا خوف
میں ہوں زیرِ لِوائے آلِ رسول

بادشاہ ہیں گدا تِرے در کے
ہوں گدائے گدائے آلِ رسول

تاج والوں کا تاجِ عزّت ہے
کہنہ نعلینِ پائے آلِ رسول

ٹھنڈی ٹھنڈی نسیمِ مارہرہ
دل کی کلیاں کھلائے آلِ رسول

بھینی بھینی سی مست خوشبو سے
دل کی کلیاں بَسائے آلِ رسول

طِیبِ طَیبہ میں ہیں بسی کلیاں
مہکی گُل گوں قَبائے آلِ رسول

بھولے بھٹکوں کا خضر ہی تو ہے
راستے پر لگائے آلِ رسول

سبز گنبد پہ اڑ کے جا بیٹھوں
شوق کے پَر لگائے آلِ رسول

خاک میری اڑے جو بعدِ فنا
مدنی ہو ہوائے آلِ رسول

اب تو گَدیَہ گَروں کی چاندی ہے
ہیں کھرے سکّہ ہائے آلِ رسول

خُم سے آسن جمائے در پہ گدا
کوئی پیالہ پلائے آلِ رسول

بیاضِ پاک

...

Paar Bera Lagaey Aal e Rasool

پار بیڑا لگائے آلِ رسول
ڈوبے بجرے تَرائے آلِ رسول

جو ہیں اپنے پرائے آلِ رسول
سب کو اپنا بنائے آلِ رسول

ٹھوکروں پہ نہ ڈال غیروں کی
ہم ہیں قدموں میں آئے آلِ رسول

تیرا باڑا ہے بٹ رہا جگ میں
تو ہی دے یا دلائے آلِ رسول

جھولی پھیلائے ہے تِرا منگتا
بھر دے داتا برائے آلِ رسول

دے دے چُمکار کر کوئی ٹکڑا
سگِ در کو رضائے آلِ رسول

در سے اپنے نہ کر اسے در در
در دے در کی رضائے آلِ رسول

دور دوری کا دور دورا ہو
دَور پھر یہ نہ آئے آلِ رسول

نِگھرے در بہ در بھٹکتے ہیں
دے ٹھکانہ برائے آلِ رسول

تلخیاں ساری دور ہو جائیں
مَئے شربت پلائے آلِ رسول

ہیں رضا، غوث کے قدم بہ قدم
ہیں قدم ان کے پائے آلِ رسول

جس نے پایہ تمھارا پایا ہے
کہہ اٹھا میں نے پائے آلِ رسول

اپنی قدموں کے نیچے ہے جنّت
اور قدم ہیں یہ پائے آلِ رسول

ان کی سیرت ہے سیرتِ نبوی
ان کی صورت لقائے آلِ رسول

ان کے جلووں میں ان کے جلوے ہیں
ہر ادا سے ادائے آلِ رسول

آتے دیکھیں جو اعلیٰ حضرت کو
آنکھیں کہہ دیں یہ آئے آلِ رسول

ہے بریلی میں آج مارہرہ
اعلیٰ حضرت ہے جائے آلِ رسول

قادریّوں کا ہے لگا میلہ
ہے تماشا ضیائے آلِ رسول

نوری مَسند پہ نوری پتلا ہے
اچھا ستھرا رضائے آلِ رسول

چتھر رحمت کا شامیانہ ہے
سر پہ ہے یا ردائے آلِ رسول

ہیں پروں سے کیے ہوئے سایہ
پرے قدسی جمائے آلِ رسول

ہیں گھٹا ٹوپ رحمتیں چھائیں
پا ہے ظلِّ ہُمائے آلِ رسول

غوث کا ہاتھ ہے مریدوں پر
بر زمیں کَالسَّمَاءِ آلِ رسول

بَرَکاتی برکات کا دولھا
شاہ احمد رضائے آلِ رسول

بَرَکاتی پیار کا سہرا
تیرے سر ہے رضائے آلِ رسول

قادریّت دُلھن بنی، نوشہ
شاہ احمد رضائے آلِ رسول

نور کا حُلّہ جوڑا شاہانہ
نوری جامہ عَبائے آلِ رسول

نور کی چہرے پر نچھاور ہے
صدقے ہم سب گدائے آلِ رسول

بیل میری بھی اب مَندھے چڑھ جائے
صدقہ حاؔمد رضائے آلِ رسول

بیاض پاک

...

Hain Arsh e Bareen Per Jalwa Figan


ہیں عرشِ بریں پر جلوہ فگن محبوبِ خدا سُبْحَانَ اللہ!
اک بار ہوا دیدار جسے سو بار کہا سُبْحَانَ اللہ!

حیران ہوئے برق اور نظر اک آن ہے اور برسوں کا سفر
راکب نے کہا اَللہُ غَنِیّ مَرکَب نے کہا سُبْحَانَ اللہ!

طالب کا پتا مطلوب کو ہے مطلوب ہے طالب سے واقف
پردے میں بلا کر مل بھی لیے پردہ بھی رہا سُبْحَانَ اللہ!

ہے عبد کہاں معبود کہاں معراج کی شب ہے راز نہاں
دو نور حجابِ نور میں تھے خود رب نے کہا سُبْحَانَ اللہ!

جب سجدوں کی آخری حدّوں تک جا پہنچا عُبودیّت والا
خالق نے کہا مَاشَآءَاللہ! حضرت نے کہا سُبْحَانَ اللہ!

سمجھے حاؔمد انسان ہی کیا یہ راز ہیں حُسن و الفت کے
خالق کا ’’حَبِیْبِیْ‘‘ کہنا تھا خَلقت نے کہا سُبْحَانَ اللہ!

بیاض پاک

...