Bashar Ko Chahiye Jis K Liyai Hayat e Khizer

بشر کو چاہیے جس کے لیےحیاتِ خضر

بشر کو چاہیے جس کے لیے حیاتِ خضر

قلیل وقت میں  وہ کام  کر گیا  صدیق

 

اُسی کے لہجے میں حق نے نبی سے باتیں کیں

فراز عرش پہ جیسے ہو  لب کُشا  صدیق

 

شرف ہزار تھا  حاصل  اُسے  رفاقت  کا

غلام بن کے رہا پھر بھی آپ کا صدیق

 

سفر حضر میں رہا ساتھ اپنے آقا کے

یہ شان  مہر و وفا،  واہ مرحبا  صدیق

 

نبی علیل تھے  پوچھا بلال نے آکر

نماز کون پڑھائے ہمیں، کہا صدیق

 

زبعدِ مرگ بہ آغوشِ رحمتش پیوست

بہ قُرب سیدِ کونین یافت جا صدیق

 

وہ ایک اپنی مثال آپ تھا زمانے میں

جَنے گی مادرِ گیتی نہ دُوسرا صدیق

 

خدا کا شکر کہ  ہے تیری ذات سے  نسبت

تِراوجودہےتنویر ِمصطفےٰصدیق

 

یہ   آرزو    ہے    کہ   محشر    میں   میرے   ساتھ   نصیؔر

عمرہوں حضرت عثمانہوں مرتضٰے،صدیق

 

Comments