Sozish Aur Jalan Dur Hogai

سوزش اور جلن دور ہوگئی

 غیر مسلم بھی آپ کی کرامات کے قائل تھے چنانچہ بہت سے غیر مسلم بھی آپ کے درِ اقدس پر حاضر ہوکر اپنی پریشانی دورکرنے کی درخواست کرتے تھے ایک مرتبہ ایک ہندو آپ کی خدمت میں حاضر ہوا جس کے جسم پر برسوں سے جلن اور سوزش کا عارضہ تھا اور کسی بھی طرح اس کو افاقہ نہ ہوتا تھا جسم پر جلن ہوتے رہنے کی وجہ سے کافور ملتا رہتا تھا تاکہ اسے کچھ سکون مل جائے مگر پھر بھی اس کی بے چینی ختم نہ ہوتی تھی اُس کو یوں محسوس ہوتا تھا کہ جیسے اس کے بدن پر آگ لگی ہوئی ہو اپنی اس تکلیف کے ساتھ وہ ہندو آیا اور عرض کی کہ میں حضور کا نام سُن کر خدمت میں حاضر ہوا ہوں بہت مجبور اور پریشان حال ہوں تکلیف اتنی ہے کہ برداشت نہیں ہوتی آپ اُس وقت وضو فرما رہے تھے جب وضو سے فارغ ہوئے تو اپنا گیلا ہاتھ اس شخص کے جسم پر پھیر دیا ہاتھ مبارک کی برکت سے اُس کو لاحق عارضہ ختم ہوگیا اللہ رب العزت نے اس شخص کو شفا دے دی اور پھر کبھی اُس بیماری نے اس پر حملہ نہ کیا۔

Comments