سائیں نانگاہلی والے

 

آپ کا مزار دربار بری امام رحمۃ اللہ علیہ بالکل سامنے متصل  اڈہ نورپور شاہاں میں مرجع خاص و عام بنا ہوا ہے آپ  کئی سال جنگوں میں چلّہ کشی کرتے رہے۔

          آپ کی عقیدت کا یہ عالم تھا کہ گرمیوں کی کڑکتی دھوپ میں در بار بری امام میں بے سدوبے ہوش پڑے رہتے جب ریاضت ختم ہوئی تو نور شاہاں میں ہی قیام پذیر ہوئے آپ اپنی زندگی می بلانغہ گیارہویں شریف کا اہتمام فرماتے رہے چنانچہ یہ سلسلہ اب بھی جاری ہے آُ کا جب انتقال ہوا تو آپ کے عقیدت مندوں کے جذبہ شوق کا یہ عالم تھا کہ چالیس دنوں میں بری امام کے روضے کی طرح ان کا ہوا بہو روضہ تیارر کردیا۔

(فیضانِ امام برّی)

مزید

اساتذہٗ کرام   (1)

تجویزوآراء