منظومات  

ہدیۂ سلام  بارگاہ صاحب عرش مقام ﷺ

یَانَبِیْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، یَارَسُولْ سَلَامٌ عَلَیْکَ یَاحَبِیبْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، صَلَوٰۃُ اللہِ عَلَیْکَ اپنے گرتوں کو سنبھالو، نفس و شیطاں سے چھڑالو اپنا ہی بندہ بنا لو، نارِ دوزخ سے بچا لو یَانَبِیْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، یَارَسُولْ سَلَامٌ عَلَیْکَ یَاحَبِیبْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، صَلَوٰۃُ اللہِ عَلَیْکَ کُفر کے پہلے تھے پھیرے، شرک تھا عالم کو گھیرے پھیلے جب انوار تیرے، مٹ گئے سارے اندھیرے یَانَبِیْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، یَارَسُولْ سَلَامٌ ...

ہدیہ سلام

یَانَبِیْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، یَارَسُولْ سَلَامٌ عَلَیْکَیَاحَبِیبْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، صَلَوٰۃُ اللہِ عَلَیْکَ السّلام اے نورِ رحمت، السّلام اے  شانِ رفعت السّلام اے جانِ ملّت، السّلام ایمانِ امّت یَانَبِیْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، یَارَسُولْ سَلَامٌ عَلَیْکَ یَاحَبِیبْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، صَلَوٰۃُ اللہِ عَلَیْکَ جبرئیل آئے ہیں در پر، رب کا کچھ پیغام لے کر آئے ہیں محبوبِ داور، حق کے اب مہمان بن کر یَانَبِیْ سَلَامٌ عَلَیْکَ، یَارَسُولْ سَلَامٌ...

مصطفی جان رحمت پہ لاکھوں سلام

مظہر سرِّ وحدت پہ لاکھوں سلام منبعِ ہر فضیلت پہ لاکھوں سلام صدرِ بزمِ نبوّت پہ لاکھوں سلام مصطفٰے جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام تاجدارِ شفاعت پہ روشن درود اُس سراپا ہدایت پہ روشن درود بحرِ جود و سخاوت پہ روشن درود مہرِ چرخِ نبوت پہ لاکھوں سلام گُلِ باغِ رسالت پہ لاکھوں سلام باعثِ خَلْقِ کُلْ سرورِ محترم مرکزِ علم و اخلاق و حِلم و حِکم سیّدِ انبیاء سروِ باغِ کرم شہریارِ اِرم تاجدارِ حرم نو بہارِ شفاعت پہ لاکھوں سلا...

المدد غوث اعظم سلام علیک

سیّدی غوث اعظم، سلامٌ علیک میرے آقائے اکرم، سلامٌ علیک نام ہے عبد قادر، لقب محئ دین حق کے ہیں سرّاعظم، سلامٌ علیک گردنیں اولیاء کی ہیں تیرا قدم اے ولئ معظم، سلامٌ علیک آپ کے پاک دامن سے جو بندھا آخرت سے ہے بے غم، سلامٌ علیک آپ کو جس نے اپنا وسیلہ کیا آپ ہیں اُس کے ہم دم، سلامٌ علیک اپنی قدرت سے بگڑی بنا دیجئے اے محئ مکرم، سلامٌ علیک آپ ہی درد کا میرے درمان ہیں رکھئے زخموں پہ مرہم، سلامٌ علیک ہم بھلے ہیں بُرے ہیں تمہارے ہی ہیں کس کے در جا...

ہدیہ سلام بحضور بارگاہ غوث اعظم سرکار

غوثنا سلام علیک، قطبنا سلام علیک شیخنا سلام علیک، محئ دیں سلام علیک آپ محبوب خدا ہیں، جانشینِ مصطفیٰ ہیں آپ ابنِ مرتضیٰ ہیں، اور امامِ اصفیاء ہیں غوثنا سلام علیک، قطبنا سلام علیک شیخنا سلام علیک، محئ دیں سلام علیک آپ قطبِ اولیاء ہیں، آپ غوث التقیا ہیں صاحبِ صدق و صفا ہیں، مرجعِ شاہ و گدا ہیں غوثنا سلام علیک، قطبنا سلام علیک شیخنا سلام علیک، محئ دیں سلام علیک آپ سب کے مقتدا ہیں، آپ سب کے رہنما ہیں آپ سب کے پیشوا ہیں، آپ تاجِ اولیاء ہیں غوث...

سلام بحضور بارگاہِ غوث الاعظم

سیدی غوث اعظم، سلامٌ علیکمُرشد و شیخ عالم، سلامٌ علیک نور فیض عالم، سلامٌ علیک میرے آقائے اکرم، سلامٌ علیک سرورِ اولیاء، سرِّ حق کے امیں ظلِّ شاہِ ہدٰی، رُوحِ صدق و یقیں نام ہے عبد قادر، لقب محئ دیں حق کے اے سِّ اعظم، سلامٌ علیک ہے تِری پشت پر دستِ شاہِ اُمم اور تِرے ہاتھ میں غوثیت کا الَم گردنیں اولیاء کی ہیں زیرِ قدم اے ولئ معظم، سلامٌ علیک دامنِ پاک سے آپ کے جو بندھ گیا جو با خلاصِ دل آپ کا ہو گیا اسمِ عالی کا جس نے وظیفہ کیا آخرت سے ...

حقیقت معراج

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ کہا جبریل نے با ادب، کہ خدا نے تمہیں کیا طلب ہے تمہارے نور کا جلوہ سب، کہ تمہی تو ہو اِک حبیبِ رب بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ کیا چاک سینۂ پاک کو، کیا صاف قلب بے باک کو ہوا حکم ہفت افلاک کو، کہ انہی پہ ہے فخر بس خاک کو بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ جو براق لے کے ہوا رواں، تو عجیب لطف ...

غریبی جی اٹھی لیجئے غریبوں کا وہ یار آیا

زباں پراس لئے صلّ علیٰ بے اختیار آیا کہ دل میں نام پاک سیّدِعالی وقار آیا تصور میں مِرے محبوب کا پیارا دیار آیا جہاں میں جس گھڑی وہ رحمتِ پروردگار آیا منادی، مژدۂ آمد، دوعالم میں پکار آیا غریبی جی اُٹھی، لیجئے غریبوں کا وہ ہار آیا زمین سے عرش تک اِک دھوم ہے تشریف لانے پر سلاطیں سر بسجدہ ہوں گے جس کے آستانے پر دوعالم کا وہ ملجا اور ماویٰ شہرِ یار آیا نہ میں دوزخ سے خائف ہوں نہ خواہاں ہوں میں جنّت کا سِوا محبوب کہ کیا چاہے، دیوانہ محبّت کا ...

بہت بے بس بہت بے کس ہیں اب ہم

بہت بے بس بہت بے کس ہیں اب ہم نہیں ہے آج، اپنا کوئی ہمدم عدو ہے برسرِ آزار ہر دم مدد لِللہ اے سرکارِ عالم! زمہجوری بر آمد جانِ عالم ترحّم یانبی اللہ ترحّم زبس ناکارہ و بدکار ہیں ہم سراپا معصیت کردار ہیں ہم بد ہیں ذلیل و خوار ہیں ہم مگر بندے تِرے سرکار ہیں ہم زمہجوری بر آمد جانِ عالم ترحّم یانبی اللہ ترحّم نہیں دُنیا میں اب کوئی ہمارا ہمیں ہے آپ ہی کا اِک سہارا تحمّل کا نہیں اب ہم میں یارا ہمارے آپ ہیں اور آپ کے ہم زمہجوری بر آمد جانِ عالم ...

منقبت خواجہ غریب نواز

سرکار کرم کے صدقہ میں خواجہ کا روضہ دیکھ لیا خواجہ کی غریب نوازی کا دربار میں نقشہ دیکھ لیا سرکار میں جھولی پھیلا کر، مانگوں تو کیا کچھ پاؤ گے اللہ کے فضل و رحمت سے دیتے ہیں خواجہ دیکھ لیا جو لے کے تمنّا آتا ہے، وہ لے کے مُرادیں جاتا ہے اندازِ طلب بھی دیکھ لیا، اندازِ عطا بھی دیکھ لیا رحمت کے خزانے بھی بے حد، خواجہ کی سخاوت بھی بے حد دیتے تو نہیں دیکھا ہے مگر، دامن جو بھرا تھا دیکھ لیا دربار معینی سے بے شک، محروم رہا جو مُنکر تھا کتنے ہ...