سامانِ عشرت

اپنے رِندوں کی ضیافت کیجئے

جامِ نظارہ عنایت کیجئے

 

ساقیٔ کوثر دہائی آپ کی

سوختہ جانوں پہ رحمت کیجئے

 

دیجئے میری محبت کو ہوا

اس طرف چشم محبت کیجئے

 

قیدِغم میں خوش رہوں میں عمر بھر

یوں گرفتارِ محبت کیجئے

 

خود کو بھولوں آپ کی الفت میں میں

مجھ کو یوں مدہوشِ الفت کیجئے

 

کیجئے اپنا محض اپنا مجھے

قطع میری سب سے نسبت کیجئے

 

دفع ہو طیبہ سے یہ نجدی بلا

یا رسول اللہﷺ عجلت کیجئے

 

مانگ لیجے خاکِ طیبہ میں جگہ

خاک میں سامانِ عشرت کیجئے

 

ان پہ مرنا ہے دوامِ زندگی

موت سے پھر کیوں نہ الفت کیجئے

 

جان لینے آئیں وہ جانِ جہاں

موت سے پھر کیسے نفرت کیجئے

 

زندگی ہے سدِّ راہِ دوستاں

کس لئے جینے کی حسرت کیجئے

 

ان پہ مرجانے کی رکھئے آرزو

یوں صدا جینے کی صورت کیجئے

 

ظلمتوں میں روشنی کے واسطے

داغِ سینہ کی حفاظت کیجئے

 

آتشِ دوزخ بجھانے کے لئے

تیز تر نارِ محبت کیجئے

 

تیز کیجئے سینۂ نجدی کی آگ

ذکرِ آیاتِ ولادت کیجئے

 

کیجئے یادِ ختامُ الانبیاء

ختم یوں ہر رنج و کلفت کیجئے

 

طے ہو نامِ پاک پر میری کتاب

یہ کرم ختمِ رسالت کیجئے

 

جُدْ بِوَصْلٍ دائمٍ یا سَیّدی

ختم اب یہ دورِ فرقت کیجئے

 

انتظارِ جانِ جاں ہے جان کو

یا رسول اللہﷺ کی کثرت کیجئے

 

دینگے وہ خود ہی محبت کا صلہ

مرتے دم ان کی زیارت کیجئے

 

ٹھنڈے ٹھنڈے خوشبوئوں میں بس چلیں

یادِ گیسو وقتِ رحلت کیجئے

 

غوثِ اعظم آپ سے فریاد ہے

دستگیری میرے حضرت کیجئے

 

رحلتِ اخترؔ کا ہنگام آگیا

سایۂ رحمت میں رخصت کیجئے


متعلقہ

تجویزوآراء