لبِ جاں بخش

لبِ جاں بخش کا اے جاں مجھے صدقہ دیدو

مژدۂ عیشِ ابد جانِ مسیحا دے دو

غمِ ہستی کا مداوا مرے مولیٰ دے دو

بادۂ خاص کا اک جام چھلکتا دے دو

غرق ہوتی ہوئی ناؤ کو سہارا دے دو

موج تھم جائے خدارا یہ اشارہ دے دو

ہم گنہگار سہی حضرتِ رضواں لیکن

ان کے بندے ہیں جناں حق ہے ہمارا دیدو

تپش مہرِ قیامت کو سہیں ہم کیسے

اپنے دامانِ کرم کا ہمیں سایہ دے دو

بھول جائے جسے پی کر غم دوراں اخترؔ

ساقیٔ کوثر و تسنیم وہ صہبا دے دو


متعلقہ

تجویزوآراء