لبِ جاں بخش سے کیا خوب بیاں فرمایا

لبِ جاں بخش سے کیا خوب بیاں فرمایا
حُبِّ الفت کی حقیقت کو عیاں فرمایا

 

اُس لبِ لعل کے اور کام و زباں کے صدقے
جِس زباں سے یہ سخن جانِ جہاں فرمایا

 

اہلِ ایماں کے لیے وہ تو کلام ِ حق ہے
تم نے جو افضلِ پیغام بَراں فرمایا

 

شبِ فرقت میں ہوئی عید محبوں کے لیے
مژدۂ وصل شفائے دل و جاں فرمایا

 

گو کہ ہم آپ تڑپتے ہیں شبِ فرقت میں
کل کا وعدہ تو بھلا آپ نے ہاں فرمایا

 

قابلِ نار ہُوا جس کو کہا ’’ناری ہے‘‘
وہ بہشتی ہے جسے ’’اہلِ جِناں‘‘ فرمایا

 

رشکِ فردوس ہوا دیر کہن، اے کافؔی!
جب سے یاں سروَرِ عالَم نے مکاں فرمایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(دیوانِ کافؔی)


متعلقہ

تجویزوآراء