کچھ نہ کام آیا دلِ مضطر تڑپنا لوٹنا

کچھ نہ کام آیا دلِ مضطر تڑپنا لوٹنا
تھا عبث بے فائدہ بے پر تڑپنا لوٹنا

 

مُرغِ بسمل کی طرح یاں خاک پر لوٹے تو کیا
چاہیے خاکِ مدینہ پر تڑپنا لوٹنا

 

چہچہے کرتے ہیں صحنِ گلستاں میں ہم صفیر
ہم ہیں دامِ غم میں اور اکثر تڑپنا لوٹنا

 

شام سے ہے نالۂ شب گیر تا وقتِ سحر
آہ بر لب صبح سے دن بھر تڑپنا لوٹنا

 

کیا کہیں ہم، اے صفیرو! دلِ کی بے تابی کا حال
برق سے بھی ہے زیادہ تر تڑپنا لوٹنا

 

اِس تڑپنے لوٹنے سے دل مِرا بھرتا نہیں
ہو قبول ِ خالقِ اکبر تڑپنا لوٹنا

 

صورت ِ موج طلاطم، یا الٰہی! کر عطا
از برائے صاحبِ کوثرﷺ تڑپنا لوٹنا

 

ہو نصیبِ کافؔیِ عاصی، الٰہ العالمین!
دیکھ کر وہ گنبدِ اَخضر تڑپنا لوٹنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(دیوانِ کافؔی)


متعلقہ

تجویزوآراء