کیجئے کس سے بیانِ دردِ دل

کیجئے کس سے بیانِ دردِ دل
کس سے کہئے داستانِ دردِ دل
غیر کی منت اٹھانا کیا ضرور
حال کہہ دے گی زبانِ دردِ دل
سوزشِ غم کا بیان ہے آہِ گرم
چشمِ تر ہے قصہ خوانِ دردِ دل

عاشقِ شوریدہ سے کیا پوچھنا
زدد رُخ ہے ترجمانِ دردِ دل
دیکھ کر ان کو شگفتہ ہو گیا
کای دکھاتا میں نشانِ دردِ دل
تابش رُخ سے سحر کر دیجئے
تابش رُخ سے سحر کر دیجیے
ہے شبِ تیرہ جہان درد دل
زخم ہائے دل کے غنچے کھل گئے
رنگ پر ہے بوستانِ دردِ دل
درد سچا ہے تو ہوگی چشم لطف
ہے یہی بس امتحانِ دردِ دل
ا صبا جا کر مدینہ میں سنا
حال زارِ نیم جانِ دردِ دل
لطف ہو منعم سے فرمائیں حضور
ہے مزے کی داستانِ دردِ دل

 

جہاں زیرِ نگین شاہِ عالم
فزوں در مرتبہ از عرشِ اعلیٰ
امام قدسیانِ سدرہ منزل
جمیلَ آسمانی خانہ زادے
نعیم الدین عاصی ہیچ کارہ

درخشاں مہرِ دینِ شاہِ عالم
رہے قدرِ زمینِ شاہِ عالم
یکے از خادمینِ شاہ عالم
ز انوارِ جبینِ شاہِ عالم
غلام ِکمترینِ شاہِ عالم

 


متعلقہ

تجویزوآراء