بہارِ بے خزاں

ہمارے باغِ ارماں میں بہارِ بے خزاں آئے

کبھی جو اس طرف خندہ وہ جانِ گلستاں آئے

 

وہ جانِ یوسف آجائے اگر میرے تصور میں

خدا رکھے وہیں کھنچ کر بہارِ دوجہاں آئے

 

کوئی دیکھے مری آنکھوں سے یہ اعزاز آقا کا

سلامی کو درِ حضرت پہ شاہِ قدسیاں آئے

 

جمالِ روئے جاناں دیکھ لوں کچھ ایسا ساماں ہو

کبھی تو بزمِ دل میں یاخدا آرامِ جاں آئے

 

الٰہی اپنی ستاری کا تجھ کو واسطہ سن لے

سرِمحشر نہ بندے کا گنہ کوئی عیاں آئے

 

کرم سے اس کمینے کی بھی مولیٰ لاج رکھ لینا

ترا اخترؔ ترے سایہ میں شاہِ دوجہاں آئے

٭…٭…٭


متعلقہ

تجویزوآراء