اے سرور عالم ﷺ

اے سرورِ عَالم ﷺ

تم سیّدِ کونین، شہہِ ہر دو سَرا ہو، اے سرورِ عالم
طالب ہو خدا کے، تمہیں مطلوبِ خدا ہو، اے سرورِ عالم


تم منعمِ کل، لُطف و کرم عام تمہارا، انعام تمہارا
تم سیّدِ کُل، فخرِ رُسُل، شاہِ ھُدا ہو، اے سرورِ عالم


گلشن کی ہر ایک شاخ میں، ہر برگ و شجر میں، ہر گُل میں ثمر میں
تم حسنِ ازل، نورِ ابد،رنگِ بقا ہو، اے سرورِ عالم


انگشتِ تحیّر تہہِ دندانِ حَکیماں، اعجاز نمایاں
ہو نُور سے پُرجسم نہ سائے کا پتا ہو، اے سرورِ عالم


سرکار بھلا کب یہ طلب دل کی ہو پُوری، حاصل ہو حضوری
ہو آپ کا دربارِ مقدّس، یہ گدا ہو، اے سرورِ عالم


بیماریِٔ دل کو ہے ترقّی پہ ترقّی، اب کیا کرے  کوئی
خدمت میں بُلا لو کہ تمہی اس کی دَوَا ہو، اے سرورِ عالم


بُرہانؔ کو کب شعر و سخن کا ہے سلیقہ ، صدقہ رضا کا ہے
پھر لطف کہ ہر شعر محبت سے بھرا ہو، اے سرورِ عالم


متعلقہ

تجویزوآراء