تازہ ترین ضیائے بخشش  

ہے ایک سے ایک لکھنے والا قصیدہ

 

سب سے اچھا قصیدۂ معراجیہ

 

ہے ایک سے ایک لکھنے والا قصیدہ معراجِ مصطفیٰ کا
رضا نے لکھا ہے سب سے اچھا قصیدہ معراجِ مصطفیٰ
کا

 

عظیم شاعر جناب محسن گئے تھے کاکوری سے بریلی
سُنانے احمد رضا کو اپنا قصیدہ معراجِ مصطفیٰ
کا

 

سنائے دو شعر ظہر میں، پھر ہُوا یہی طے کہ عصر پڑھ کر
سُنایا جائے گا پھر
بَقِیَّہ قصیدہ معراجِ مصطفیٰ کا

 

تو اِتنے میں، یہ ہُوئی کرامت کہ عصر سے پہلے اعلیٰ حضرت
رضا نے لکھ ڈالا اپنا پورا قصیدہ معراجِ مصطفیٰ
کا

 

سو عصر کے بعد، خود رضا نے کی ذکر محسن سے اپنی خواہش
یہ عرض ہے سُن لیں پہلے میرا قصیدہ معراجِ مصطفیٰ
کا

 

رضا سے سُن کر قصیدہ، محسن نے داد دی اورکہا کہ اب میں
سُناؤں کیا سُن کے اِتنا عمدہ قصیدہ معراجِ مصطفیٰ
کا

 

ہُوا یوں پھر وہ عظیم شاعر وہ پیارے محسن وہاں سے لوٹے
بِنا سُنائے ہی اپنا پیارا قصیدہ معراجِ مصطفیٰ
کا

 

امام احمد رضا کا ہو یا جناب محسن کا، یوں تو اِن میں
ہر ایک اپنی جگہ ہے اعلیٰ قصیدہ معراجِ مصطفیٰ
کا

 

نؔدیم! لیکن، گواہی یہ دے رہا ہے خود اِعترافِ محسن
رضا نے اُن سے بھی اچھا لکھا
قصیدہ معراجِ مصطفیٰ کا

 

ندیم احمد نؔدیم نورانی

۲۹؍ جمادی الآخر ۱۴۴۱؁ھ

پیر، 24؍ فروری 2020؁ء

 

 

 

...

پسینہ مصطفی سی خوشبو کہاں

پسینۂ مصطفیٰ سی خوشبو کہاں چمن کے گلاب میں ہے
جدھر وہ بکھرے اُدھر سمجھ لو بہار اپنے شباب میں ہے


 

نبی ہیں بعدِ اَجل بھی زندہ، حوالہ اِس کا ہے ابنِ ماجہ
ہے جو حیاتِ نبی کا منکر، وہ مُردہ ا
ہلِ عذاب میں ہے

 

جو اتّباعِ حبیبﷺ کر کے خدا کے محبوب تم ہو بنتے
تو خود خدا کا حبیب کتنا بلند اُس کی جناب میں ہے


 

تمام نبیوں کو رب نے جتنا کمال اپنے کرم سے بخشا
وہ سب کا سب شاہِ انبیا کے خزانۂ لا جواب میں ہے


 

صحیفے، تورات اور قرآں، زبور و انجیل؛ سب ثنا خواں
محمد ِمصطفیٰ
کی مدحت خداکی ہر اک کتاب میں ہے

 

خداکی عظمت، نبی کی رِفعت، کُل ا ہلِ بیتِ نبی سے اُلفت
ہر اِک صحابی، ولی کی چاہت؛ یہ سب ہمارے نصاب میں ہے


 

ہمارا سودا رہِ وفا میں ہُوا ہے بازارِ مصطفیٰ میں
یہ شاہ نورانی کا سبق ہے جو اُن کے وعظ اور خطاب میں ہے


 

کرم کی بارش ہو ایسی، یا رب! زیارتِ مصطفیٰ ہو ہر شب
جہاں کی سب سے حسین صورت کیوں مجھ سے اب تک حجاب میں ہے

 

مشاعروں میں بُلائے جانا اور اُن میں اپنی غزل سُنانا
یہ
فیضِ نعتِ نبی ہے ورنہ، نؔدیم! تو کس حساب میں ہے

 

 

نؔدیم احمد ندیم نورانی

تار یخِ نظم: ۲۱؍ صفر المظفّر ۱۴۴۲؁ھ، جمعۃ المبارک، ۹؍ اكتوبر ۲۰۲۰؁ ع

...
مزید تازہ ترین

پسندیدہ شاعری  

مزید پسندیدہ