زکوٰۃ کے واجب ہونے کی شرائط  

بینک سے کاٹی گئی زکوٰۃ ادا نہیں ہوتی

السلام علیکم مفتی صاحب! میرا بینک میں اکاؤنٹ ہے ۔ اور بینک کی طرف سے سالانہ ایک نوٹس آتا ہے جس کی وضاحت میں یہ ہو تا ہے کہ آپ کی جمع  شدہ رقم سے آپ کی طرف سے زکوٰۃ نکا ل لی گئی ہے ۔ تو کیا اس صورت میں میری طرف سے زکوٰۃ ادا ہو جائے گی؟ الجواب بعون الملك الوهاب ادائیگی زکوٰۃ کے لئے ضروری ہے کہ زکوٰۃ دینے کی نیت پائی جائے اور زکوٰۃ شرعی تقاضے کے مطابق اپنے مصرف پر خرچ ہو۔بینک سے زکوٰۃ کٹنے پر نہ تو مالک کی نیت کی شرط پائی جاتی ہے اور نہ ہی ...

مالِ تجارت میں کمی یا زیادتی سے زکوٰۃ کا حکم

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ میری ایک دکان ہے  اور دکان کا سامان سال بھر میں کبھی کم اور کبھی زیادہ ہوتا رہتا ہے تو اس کی زکوٰۃ کا کیا حکم ہے کہ کس طرح ادا ہو گی؟ الجواب بعون الملك الوهاب اگر سال کی ابتدا اور انتہا پر مال بقدرِ نصاب ہے تو دورانِ سال کمی بیشی کا اعتبار نہیں۔ کنز الدقائق میں ہے:" ونقصان النصاب فی اثناء الحول لا یضر ان کمل فی طرفیہ". ترجمہ: نصاب کا دورانِ سال کم  ہونا کچھ نقصان نہ دے گا جبکہ سال کی اب...