مفتی محمد احسن  

نصاب سے کیا مراد ہے؟

زکوۃکے مسائل میں عام طور پر "نصاب"کا لفظ استعمال ہوتاہے اس سےکیا مراد ہے؟ الجواب بعون الملك الوهاب نصاب:  شریعت کی مقرر کردہ  مقدار کے برابر یا اس سے زیادہ مال کو کہتے ہیں۔یعنی(1):کسی شخص کے پاس ساڑھے سات تولے سونا (87.48 گرام)۔(2): ساڑھے باون تولے چاندی(612.36 گرام)۔ (3): سونے یا چاندی جتنی   مالیت کا مال ِ تجارت۔ (4):یا اتنی مالیت کے پیسے۔ (5): یا اتنی مالیت کا اس کی  ضروریاتِ زندگی سے زائد سامان ہو ۔ تو  اسے صاحبِ...

"مالِ نصاب حاجتِ اصلیہ سے فارغ ہونے" سے کیا مراد ہے؟

کون کونسی اشیاء حاجت اصلیہ میں ہیں اورکونسی زائد ہیں؟ الجواب بعون الملك الوهاب حاجت اصلیہ یعنی جس کی طرف زندگی بسر کرنے میں آدمی کوضرورت ہے اس میں زکوٰۃ واجب نہیں، جیسے لباس، گھرکاسازوسامان، مکان،سواری کی چیزیں، استعمال کےہتھیار، عالم کیلئےذاتی استعمال کی علمی کتب، پیشہ ورانہ آلات(جیسےڈاکٹرکی سرجری کے آلات وغیرہ، کارخانےیاورکشاپس کی مشینیں جو زیر استعمال ہوں)وغیرہ۔[مأخوذ از: بہارشریعت، جلد 1،  حصہ: 5، صفحہ 880، 881،  مکتبۃالمدینۃکراچی]۔...

کیا مال حرام پر زکوۃ ہے؟

ایک شخص کےپاس تقریباً 2 لاکھ روپے خالص سود کےہیں تو کیا اس پرزکوۃہے؟ الجواب بعون الملك الوهاب مال حرام پرزکوۃنہیں ہے۔ شیخ الاسلام والمسلمین  امام احمد رضا خاں علیہ الرحمہ نےفرمایا:سود ورشوت او راسی قسم کے حرام وخبیث مال پرزکوٰۃنہیں کہ جن جن سےلیاہےاگروہ لوگ معلوم ہیں تو انھیں واپس دینا واجب ہے۔ اور اگر معلوم نہ رہے تو کل کا تصدق کرنا واجب ہے۔ چالیسواں حصہ دینےسےوہ مال کیاپاک ہوسکتاہے جس کےباقی انتالیس حصےبھی ناپاک ہیں۔[فتاوى رضویہ، جلد 19،صف...

مالِ حرام کا کیا حکم ہے؟

کسی شخص کےپاس رشوت، سود،  ڈاکہ وغیرہ کےپیسےہیں اب اس شخص نے ان تمام چیزوں سےتوبہ کرلی ہے تو ان پیسوں کاکیاحکم ہے؟ الجواب بعون الملك الوهاب شیخ الاسلام والمسلمین  امام احمد رضا  خاں علیہ الرحمہ نےفرمایا: سود ورشوت او راسی قسم کے حرام وخبیث مال جِن سےلیاہےاگروہ لوگ معلوم ہیں تو انھیں واپس دینا واجب ہے۔ اور اگر معلوم نہ رہے تو تمام کا(بغیر ثواب کی نیت سے )صدقہ کرنا واجب ہے۔فتاوى رضویہ، جلد 19،صفحہ 656،  رضا فاؤنڈیشن لاہور]۔...

کیا نابالغ اور پاگل کے مال پر زکوۃ ہے؟

کیانابالغ اور پاگل مجنوں کے مال پرزکوۃہے؟ الجواب بعون الملك الوهاب نابالغ پرزکوۃ واجب نہیں ہے۔ ایسامجنوں کہ جو جنون ہی کی حالت میں بالغ ہوایامکمل سال اٍس پر جنون رہا تو اس پرزکوۃ واجب نہیں ہے۔ اور اگر سال کے اول  اور آخر میں عقلمندتھادرمیان میں مجنون ہوگیاتو اس پرزکوۃ واجب ہے۔ جس پرغشی طاری ہوگئی تو اس پر مطلقاً زکوۃ واجب ہے۔ [مأخوذ از:رد المحتار، کتاب الزکوۃ، جلد 2، صفحہ 258، دار الفکربیروت۔بہارشریعت، جلد 1،  حصہ: 5، صفحہ 880، 881،&nbs...

زکوۃ کس پر فرض ہے؟

میراسوال یہ ہےکس شخص پرزکوۃ  فرض ہے اور کس پرنہیں یادوسروں لفظوں میں زکوۃ کی فرضیت کےکتنی شرائط ہیں؟ الجواب بعون الملك الوهاب جس مسلمان عقلمند  بالغ میں درج ذیل شرائط پائی جائیں  اس پر زکوۃ ادا کرنا فرض ہے: (1): مالک کو اپنے مال پر مکمل قانونی ملکیت حاصل ہو یعنی  مال اس کے قبضہ میں ہو۔ (2): نصاب کا مالک ہو یعنی شریعت کی مقرر کردہ  مقدار کے برابر یا اس سے زیادہ مال ہو۔یعنی(i):کسی شخص کے پاس ساڑھے سات تولے سونا (87.48 گرام)...

جہیز کی خاطر بنائے گئے سامان پر زکوٰۃ؟

کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام اس سامان کے بارے میں کہ جو جہیز کے لئے جمع کیا گیا  نہ کہ سونا، چاندی اور وہ  سامان چاندی کے نصاب کو پہنچ گیا ہو  اور پورا سال بھر استعمال بھی نہیں ہوا ۔ تو کیا اس پر زکوٰۃ ہو گی یا نہیں؟ الجواب بعون الملك الوهاب سامان  اگرچہ بقدرِ نصاب ہو، اگرچہ اس پر سال گزر جائے  زکوۃ اس  پر واجب نہیں ہے۔ چنانچہ صدر الشریعہ فرماتے ہیں:"سونے چاندی میں مطلقاً زکوٰۃ واجب ہےجب کہ بقدرِنصاب ہوں اگرچہ دفن کر ...

کرائے پر چلنے والی الیکٹرک اشیاء پر زکوٰۃ نہیں

کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام ان الیکٹرک اشیاء کے بارے میں جو کرائے پر چلائی گئی ہیں۔ مثلاً ایک شخص نے ایک بہت ہی اعلیٰ قسم کی LCDاور کمپیوٹر سسٹم کرائے پر چلا رہا ہے۔کیا اس پر زکوٰۃ فرض ہوگی؟ الجواب بعون الملك الوهاب کرائے پر چلانے کےلئے بنائی ہوئی LCDاور کمپیوٹر سسٹم پر زکوٰۃ فرض نہیں ہے۔البتہ اگر یہ کرایہ مالِ نصاب کی مقدار  کے برابر یا دوسرے مال کے ساتھ مل کر نصاب جتنا ہو جائے تو سال گزرنے کے بعد زکوٰۃ ہو گی۔ امام اہلسنت،مجدد دین وملت امام...

مال میں سے کتنی زکوۃ دینا ضروری ہے؟

میراسوال یہ ہےکہ جب ایک مال پرزکوۃکی تمام شرائط پائی جارہی ہیں تو اس مال  میں سےکتنی زکوۃدیناضروری ہے؟ الجواب بعون الملك الوهاب کل مال  کااڑھائی فیصد یعنی چالیسواں حصہ  ادا کرناضروری ہے۔...

زکوۃ ادا کرتے وقت زبان سے کہنا ضروری نہیں ہے

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ ! میرا سوال یہ ہے کہ جب زکوٰۃ دی جائے اور جس کو دی جائے اس کو یہ بتانا ضروری ہے کہ یہ زکوٰۃ کی رقم ہے یا اسے نہ بتایا جائے؟ الجواب بعون الملك الوهاب مستحق کو زکوۃ دیتے وقت زبان سے اسے بتانا ضروری نہیں ہے،  بلکہ دل میں زکوٰۃ کی نیت کافی ہے۔ فتاویٰ عالمگیری میں ہے: "ومن اعطٰی مسکینادراھم  وسمّاھا ھبۃ او قرضا ونوٰی الزکاۃ فانھا تجزیۃ وھو الاصح". ترجمہ:اگر کسی نے مسکین کو درہم بطور زکوٰۃ دیئے اور کہا کہ یہ ...